11

آئی پی پیز کے لیے 134.9 بلین روپے کی منظوری دی گئی۔

اسلام آباد: وفاقی کابینہ نے منگل کو ادائیگی کے طریقہ کار کے مطابق آزاد پاور پروڈیوسرز (آئی پی پیز) کو دوسری قسط (60 فیصد) کے طور پر 134.783 ارب روپے جاری کرنے کی منظوری دی۔

ذرائع نے مزید کہا کہ یہ رقم 3 دسمبر تک آئی پی پیز کو منتقل ہونے کا امکان ہے۔ ذرائع کے مطابق حبکو کو 34.80 ارب روپے، کپکو 59.40 ارب روپے، روش کو 8.50 ارب روپے، فوجی کو 2.637 ارب روپے، پاک جنرل پاور کو 9.80 ارب روپے اور لال پیر کو 9.30 ارب روپے، KEL کو 3 ارب روپے، 1. صبا پاور کو ارب روپے اور ایف ایف سی کو 2.10 ارب روپے۔

علاوہ ازیں وفاقی کابینہ نے وزارت صحت کی سمری اور کورونا، ذیابیطس اور کینسر سے متعلق 38 ادویات اور جان بچانے والی ادویات کی قیمتیں مقرر کرنے کی منظوری دے دی۔ وفاقی کابینہ کا اجلاس یہاں ہوا جس میں ادویات کی قیمتوں پر تفصیلی غور کیا گیا۔ کابینہ نے وفاقی وزارت صحت کی جانب سے بھیجی گئی سمری پر غور کیا اور اتفاق رائے سے اس کی منظوری دی۔

ذرائع کے مطابق اجلاس میں نمک کی نئی فارمولیشن اور انرجی ادویات کی قیمتیں بھی طے کی گئیں۔ کابینہ کے اجلاس میں رواں موسم سرما کے لیے گیس مینجمنٹ پلان کی بھی منظوری دی گئی۔

اجلاس میں کورونا ویکسین کی خریداری کے لیے ایشیائی ترقیاتی بینک کی فنڈنگ ​​سے 35 ارب روپے کی منظوری دی گئی۔ اے ڈی بی نے کورونا وائرس کی ویکسین کی خریداری کے لیے 500 ملین ڈالر کے قرض کی منظوری دی تھی۔

ADB کے ہینڈ آؤٹ کے مطابق، منیلا میں مقیم قرض دہندہ نے کوویڈ 19 ویکسین، سیفٹی بکس اور سرنجوں کی تخمینہ 39.8 ملین خوراکیں خرید کر اور فراہم کر کے پاکستان کے قومی تعیناتی اور ویکسینیشن پلان کی حمایت کے لیے قرض کی منظوری دی تھی۔

بعد ازاں میڈیا کو کابینہ اجلاس کے فیصلوں سے آگاہ کیا۔ وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے کہا کہ اگلے انتخابات الیکٹرانک ووٹنگ مشین (ای وی ایم) کی مدد سے ہوں گے اور 90 لاکھ بیرون ملک مقیم پاکستانی بھی انتخابات میں اپنا حق رائے دہی استعمال کریں گے۔

وزیر نے کہا کہ کابینہ نے ای وی ایم کے حوالے سے الیکشن کمیشن سے بات کرنے کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے تاکہ یہ تعین کیا جا سکے کہ “انتخابات کے انعقاد کے لیے کتنی مشینوں کی ضرورت ہے، کتنا خرچ کیا جائے گا اور ہم تکنیکی مدد فراہم کریں گے”۔

انہوں نے کہا کہ پی ایم ایل این کو پی ٹی آئی حکومت کا شکر گزار ہونا چاہیے کیونکہ پہلی بار نواز شریف کے بیٹے بھی اگلے انتخابات میں ووٹ دینے کے اہل ہوں گے۔ ایک سوال کے جواب میں، انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی نے غیر ملکی فنڈنگ ​​سے متعلق تمام متعلقہ تفصیلات الیکشن کمیشن کو فراہم کر دی ہیں اور اب انتخابی ادارے کو تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) اور دیگر جماعتوں سے ان کے فنڈنگ ​​کے ذرائع کے بارے میں پوچھنا چاہیے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ نواز شریف اور آصف زرداری نے اپنی اپنی جماعتوں کو منی لانڈرنگ کے لیے استعمال کیا۔

وزیر نے میڈیا کی تنقید پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ جب چینی اور ٹماٹر کی قیمتیں بڑھ جاتی ہیں تو شہ سرخیاں لگ جاتی ہیں لیکن جب یہ قیمتیں نیچے آجاتی ہیں تب بھی لوگوں کو بتایا جائے کہ اس وقت چینی 90-95 روپے فی کلو فروخت ہو رہی ہے۔ اور اگلے 10 سے 15 دنوں میں قیمت 85 روپے فی کلو تک گر جائے گی۔

وزیر نے کہا کہ سندھ خصوصاً کراچی میں سب سے بڑا مسئلہ درپیش ہے۔ 18ویں ترمیم کے بعد مسئلہ یہ تھا کہ وفاقی حکومت صرف پالیسی بنا سکتی تھی۔ اسے نافذ کرنا صوبوں پر منحصر تھا۔ مرکز نے جب سندھ کو گندم جاری کرنے کا کہا تو انہوں نے ایسا نہیں کیا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ جب ان سے چینی چھوڑنے کو کہا گیا تو انہوں نے چینی نہیں چھوڑی۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ ملک میں مہنگائی سے متعلق جاری کردہ 40 فیصد ڈیٹا کراچی کی قیمتوں پر مبنی ہے۔ بدقسمتی سے کراچی میں قیمتیں پورے پاکستان سے زیادہ ہیں۔ کراچی میں 20 کلو آٹے کا تھیلا 1441 روپے میں فروخت ہو رہا ہے جبکہ لاہور میں اس کی قیمت 1100 روپے ہے اور وہاں چینی کی قیمت بھی زیادہ ہے۔

فواد نے کہا کہ وزارت خزانہ نے کابینہ کو آئی ایم ایف پیکج کی تفصیلات سے بھی آگاہ کیا تھا جبکہ وفاقی وزارت تعلیم و صنعت و پیداوار میں خالی آسامیوں پر بھی بریفنگ دی گئی تھی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں