31

پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 5 روپے فی لیٹر کی کمی

پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 5 روپے فی لیٹر کی کمی

اسلام آباد: حکومت نے بدھ کو پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 5 روپے فی لیٹر کمی کردی۔ اسی طرح، اس نے دسمبر 2021 کی دوسری ششماہی کے لیے مٹی کے تیل اور لائٹ ڈیزل آئل کی قیمت میں بھی 7 روپے فی لیٹر کمی کی ہے۔ جب کہ پیٹرولیم لیوی میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی ہے، تاہم، اس نے پیٹرول اور ڈیزل دونوں پر سیلز ٹیکس بڑھا دیا ہے۔ بالترتیب 4.77pc فی لیٹر اور ڈیزل 9.08pc۔

یہ فیصلہ ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب بین الاقوامی سطح پر تیل کی قیمت 11.52 ڈالر فی بیرل کم ہو کر 73 ڈالر فی بیرل پر آ گئی ہے۔ اس کے علاوہ اوگرا نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 11 روپے فی لیٹر تک کمی کی سفارش کی تھی۔

فیصلے کے مطابق پیٹرول کی ایکس ڈپو قیمت 145.82 روپے سے کم کر کے 140.82 روپے فی لیٹر کر دی گئی ہے۔ ہائی سپیڈ ڈیزل 142.62 روپے سے کم ہو کر 137.62 روپے فی لیٹر، مٹی کا تیل 116.53 سے 109.53 روپے فی لیٹر اور ایل ڈی او کی قیمت 114.07 روپے سے کم ہو کر 107.06 روپے فی لیٹر ہو گئی۔ دور دراز علاقوں کے صارفین کھانا پکانے کے لیے مٹی کا تیل استعمال کرتے ہیں جہاں گیس دستیاب نہیں ہے۔ ایل ڈی او کو فلور ملز اور ایک دو پاور پلانٹس استعمال کر رہے ہیں۔

آئی ایم ایف کے ساتھ وعدے کے مطابق حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات پر پی ڈی ایل میں اضافہ کردیا۔ پٹرول پر، یہ پی ڈی ایل 13.62 روپے فی لیٹر اور ڈیزل پر 13.14 روپے فی لیٹر وصول کرے گا۔ مٹی کے تیل پر 5 روپے 91 پیسے اور ایل ڈی او پر 3 روپے 66 پیسے فی لیٹر وصول کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ خیال رہے کہ گزشتہ ماہ حکومت نے پی ڈی ایل 5 روپے فی لیٹر کم کر دی تھی۔

مزید برآں، یہ ان مصنوعات پر سیلز ٹیکس بھی جمع کرتا ہے۔ اگلے پندرہ دن کے لیے، حکومت نے پیٹرول پر 4.77 فیصد فی لیٹر، ڈیزل پر 9.08 فیصد، مٹی کے تیل پر 8.3 فیصد اور ایل ڈی او پر 2.7 فیصد کے ساتھ جی ایس ٹی کو نوٹیفائی کیا ہے۔ یہ ٹیکس براہ راست صارفین سے لیے جاتے ہیں۔ اوگرا نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 11 روپے فی لیٹر تک کمی کی سفارش کی تھی۔

واضح رہے کہ بین الاقوامی منڈی میں تیل کی قیمتیں (گلوبل بینچ مارک برینٹ) 9 نومبر کو ریکارڈ کی گئی 84.52 ڈالر فی بیرل سے بدھ کو تقریباً 73 ڈالر فی بیرل پر آگئی ہیں، جو گزشتہ پانچ ہفتوں میں تقریباً 11.52 ڈالر فی بیرل کی کمی کو ظاہر کرتی ہے۔ .

واضح رہے کہ 30 نومبر کو وزیراعظم عمران خان نے آئل اینڈ ریگولیٹری اتھارٹی کی جانب سے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی تجویز مسترد کرتے ہوئے دسمبر کی پہلی ششماہی تک قیمتیں برقرار رکھنے کا اعلان کیا تھا۔ 15 نومبر کو بھی قیمتوں میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی۔ لیکن دلچسپ بات یہ ہے کہ اس سے قبل 4 نومبر کو حکومت نے پی او ایل کی قیمتوں میں بڑے پیمانے پر اضافے کا اعلان کیا تھا۔ پیٹرول کی قیمت میں 8 روپے 14 پیسے فی لیٹر، ڈیزل کی قیمت میں 8 روپے 14 پیسے فی لیٹر، مٹی کے تیل کی قیمت میں 6 روپے 27 پیسے فی لیٹر اور لائٹ ڈیزل کی قیمت میں 5 روپے 72 پیسے فی لیٹر کا اضافہ کیا گیا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں