24

کے پی میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے کی تیاریاں مکمل

کے پی میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے کی تیاریاں مکمل

پشاور: خیبرپختونخوا کے 17 اضلاع میں آج (اتوار) کو سخت سیکیورٹی کے درمیان بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے کے لیے تمام تر تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں۔

تقریباً 79,479 پولیس اہلکار اور دیگر سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں کو ایل جی انتخابات کے دوران سیکورٹی کے لیے تعینات کیا گیا ہے۔

میئر سٹی کونسل ڈیرہ اسماعیل خان کے انتخابات ہفتے کے روز ایک حملے میں عوامی نیشنل پارٹی کے امیدوار محمد عمر خطاب کی ہلاکت کے بعد ملتوی کر دیے گئے تھے۔ واقعے کے بعد ڈی آئی کے اور دیگر اضلاع میں سیکیورٹی کو اپ گریڈ کر دیا گیا۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان کے مطابق 2507 پولنگ اسٹیشنز کو انتہائی حساس، 4188 حساس جبکہ 528 کو نارمل قرار دیا گیا ہے۔

صوبے کے نصف اضلاع میں ہونے والی پولنگ کے لیے کل 9 ہزار 223 پولنگ اسٹیشنز اور 28 ہزار 892 پولنگ بوتھ بنائے گئے ہیں۔

کے پی کے باقی حصوں میں آئندہ ماہ انتخابات ہوں گے۔ پشاور میں 860 پولنگ اسٹیشنز کو حساس، 165 حساس ترین جبکہ 224 کو نارمل کیٹیگری میں رکھا گیا ہے۔

پشاور میں انتخابات کے دوران سیکیورٹی کے لیے 11 ہزار کے قریب پولیس اہلکار اور دیگر فورسز کے اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔

ایک اہلکار نے بتایا کہ پولیس کے علاوہ فرنٹیئر کانسٹیبلری کے اہلکار صوبائی دارالحکومت کے 200 سے زیادہ حساس پولنگ اسٹیشنوں پر تعینات کیے جائیں گے۔ تمام پولنگ سٹیشنوں پر تعیناتی مکمل کر لی گئی ہے۔

اس کے علاوہ ابابیل سکواڈ، ریپڈ رسپانس فورس اور دیگر فورسز بھی کسی علاقے میں کسی بھی حادثے کی صورت میں جلد از جلد چوکس رہیں گی۔ پولیس اہلکاروں کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ ہتھیاروں کی نشان دہی، ہوائی فائرنگ یا کوئی بھی امن و امان پیدا کرنے کی اجازت نہ دیں۔

انسپکٹر جنرل آف پولیس معظم جاہ انصاری نے ہفتہ کے روز انتخابات کے سیکورٹی انتظامات سے متعلق ایک میٹنگ کی صدارت کی اور افسران کو فول پروف سیکورٹی کو یقینی بنانے کی ہدایت کی۔

پہلی بار سابقہ ​​قبائلی علاقوں کے پولیس اہلکار بھی الیکشن سیکیورٹی ڈیوٹی کے لیے صوبے کے مختلف اضلاع میں تعینات کیے گئے ہیں۔

یہ پہلی بار ہے کہ سابق فاٹا کے اضلاع میں بلدیاتی انتخابات ہو رہے ہیں۔

ای سی پی کے مطابق، 17 اضلاع میں کل 12.66 ملین رجسٹرڈ ووٹرز ہیں، جن میں 7.015 مرد اور 5.653 خواتین ہیں۔

انتخابات کے پہلے مرحلے میں مختلف زمروں کے لیے 37,752 امیدوار میدان میں ہیں۔ ان میں سے 689 سٹی اور تحصیل کونسلوں کی قیادت کے لیے دوڑ میں ہیں جبکہ 19,285 امیدوار جنرل کونسلرز، ویلج اور محلہ کونسلوں کے چیئرمینوں کے لیے دوڑ میں ہیں۔

اس کے علاوہ خواتین کونسلرز کی نشستوں کے لیے 3,905 امیدوار، کسان کونسلرز کے لیے 7513، یوتھ کونسلرز کے لیے 6081 اور اقلیتی کونسلرز کے لیے 282 امیدوار اپنے پٹھے باندھ رہے ہیں۔

اطلاعات کے مطابق صوبے بھر کے مختلف ویلج اور محلہ کونسلوں میں 876 خواتین کونسلرز پہلے ہی بلامقابلہ منتخب ہو چکی ہیں۔ اقلیتی کونسلرز کی بڑی تعداد بلامقابلہ منتخب ہوئی ہے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں