14

منی بجٹ منظور ہوا تو نیا سال عوام کے لیے برا ہو گا، شہباز شریف

منی بجٹ منظور ہوا تو نیا سال عوام کے لیے برا ہو گا، شہباز شریف

لاہور: پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے صدر اور قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے کہا ہے کہ منی بجٹ منظور ہوا تو نیا سال مہنگائی کے لحاظ سے عوام کے لیے بدترین ثابت ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ حکومت بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی شرائط پوری کرنے کے لیے پارلیمنٹ کو ربڑ سٹیمپ کے طور پر استعمال کرنا چاہتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عوام کی اکثریت موجودہ حکومت سے امیدیں کھو چکی ہے۔

شہباز شریف نے کہا کہ حکومت نے ایک سال میں پیٹرول کی قیمت میں 39 روپے کا اضافہ کیا ہے جبکہ گزشتہ 3 سالوں میں ادویات کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ دیکھا گیا ہے۔ -آئی این پی

ہمارے نامہ نگار نے مزید کہا: اس دوران پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز شریف نے ملک میں کھاد کے موجودہ بحران پر حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

منگل کو یہاں ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ کھاد کے بحران کی وجہ سے ملک کو خوراک کی شدید قلت کا سامنا ہے لیکن حکومت اس مسئلے کو حل کرنے میں کہیں نظر نہیں آرہی۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ ’’پنجاب، سندھ اور دیگر صوبوں کے کسانوں کو بلیک میں بھی کھاد نہیں مل رہی کیونکہ یوریا کی بوری 2500 روپے اور ڈی اے پی 10000 روپے میں دستیاب نہیں ہے،‘‘ انہوں نے دعویٰ کیا اور مزید کہا کہ گندم کی 90 فیصد بوائی ہو چکی ہے۔ اور موجودہ بحران کے تحت کھاد مافیا کو کھلی چھٹی دے دی گئی۔

حمزہ نے صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کھاد کی کمی کی وجہ سے فی ایکڑ پیداوار میں 10 من تک کمی ہو سکتی ہے۔ حمزہ شہباز نے عوام کی حالت زار کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ تاریخی مہنگائی کے باعث آٹے کی قیمتیں 80/85 روپے فی کلو تک پہنچ چکی ہیں۔

کیا حکومت آٹے کی قیمت 100 روپے سے تجاوز کرنا چاہتی ہے؟ انہوں نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اکیلے پنجاب کو یوریا کھاد کے 33 ملین سے زائد تھیلوں کی ضرورت ہے اور اگر ہم ملک میں کھاد کی کل کھپت کو دیکھیں تو یہ کمی 10 ارب روپے سے زائد بنتی ہے۔

حمزہ نے کہا کہ کسانوں کو لوٹنے والا مافیا حکمرانوں کے دائیں بائیں بیٹھا ہے۔ حمزہ نے اسمبلی میں اور کسانوں کے تمام وفود سے ملاقاتوں میں بھی اس مسئلے کو اجاگر کرنے کا ارادہ ظاہر کیا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں