13

چیئرمین نیب پارلیمانی کمیٹیوں، پی اے سی میں پیش ہوں گے۔

سیکرٹری قومی اسمبلی کو نیا خط: چیئرمین نیب پارلیمانی کمیٹیوں، پی اے سی میں پیش ہوں گے۔

اسلام آباد: قومی احتساب بیورو (نیب) نے سیکریٹری قومی اسمبلی (این اے) کو خط کے ذریعے آگاہ کیا ہے کہ چیئرمین نیب جب بھی ضرورت پڑی پارلیمانی کمیٹیوں اور پبلک اکاؤنٹس کمیٹی (پی اے سی) کے سامنے پیش ہوں گے۔

این اے سیکرٹریٹ کے سیکرٹری کو لکھے گئے نئے خط میں کہا گیا ہے کہ اس سے قبل 3 جنوری 2022 کو لکھا گیا خط واپس لیا جائے۔

خط میں کہا گیا ہے کہ چیئرمین نیب “پاکستان کی پارلیمنٹ کو سب سے زیادہ عزت، وقار اور وقار کے ساتھ رکھتے ہیں۔ “وہ پہلے ہی پی اے سی کے اجلاس کے سامنے پیش ہو چکے ہیں اور جب بھی ضرورت ہو گی پیش ہوتے رہیں گے۔ خط میں مزید کہا گیا کہ “وہ پی اے سی کے ساتھ اس سلسلے میں پہلے کیے گئے اپنے وعدے پر بھی قائم ہے۔”

خط میں کہا گیا ہے کہ 3 جنوری 2022 کو لکھے گئے خط کے مندرجات کو پریس نے غلط سمجھا اور اس کی غلط تشریح کی۔ درحقیقت، یہ خط پاکستان کی سیکرٹری قومی اسمبلی کو لکھا گیا تھا، جس میں انہیں خاندان کے ایک قریبی فرد کے بارے میں نیب کے چیئرمین کی بعض نجی ذمہ داریوں سے آگاہ کیا گیا تھا جو کہ ایک نازک طبی حالت میں مبتلا تھا۔ نتیجتاً چیئرمین نیب دستیاب نہ ہو سکے۔ نیب ہیڈ کوارٹرز کے ڈائریکٹر جنرل کو چیئرمین کی نمائندگی کے لیے پرنسپل اکاؤنٹنگ آفیسر کے طور پر نامزد کیا گیا تھا۔ پارلیمنٹ کے احترام کے پیش نظر ڈی جی نیب ہیڈ کوارٹرز کو پی اے سی اجلاس میں ذاتی طور پر شرکت کی ہدایت کی گئی۔ اور معزز اراکین پارلیمنٹ کے تمام سوالات کے جوابات دینے کے ساتھ ساتھ انہیں صورتحال سے آگاہ کریں۔ خط میں کہا گیا ہے کہ سابقہ ​​خط میں وزیر اعظم کا حوالہ ’نادانستہ اور حادثاتی‘ تھا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں