17

آئی ایم ایف کا کہنا ہے کہ پاکستان مضبوط ترقی کی جانب گامزن ہے، وزیراعظم عمران خان

آئی ایم ایف کا کہنا ہے کہ پاکستان مضبوط ترقی کی جانب گامزن ہے، وزیراعظم عمران خان

اسلام آباد: وزیر اعظم عمران خان نے پیر کو کہا کہ پاکستان کے معاشی اشاریے ظاہر کر رہے ہیں کہ ملکی معیشت مستحکم ہو رہی ہے اور آئی ایم ایف نے بھی نشاندہی کی ہے کہ پاکستان مضبوط ترقی کی طرف بڑھ رہا ہے۔

یہاں پمز ہسپتال میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جب میں نے اقتدار میں آنے کے بعد پہلی بار پمز ایمرجنسی کا دورہ کیا تو انہیں لگا کہ ایمرجنسی کے حالات بہت خراب ہیں۔ “ہم چاہتے ہیں کہ ایمرجنسی خاص ہو۔ اس ایمرجنسی کے ڈیزائن کو بیرون ملک مقیم پاکستانیوں نے فنڈز فراہم کیے ہیں جو پاکستان کی ترقی کے لیے پرعزم ہیں۔ اسلام آباد کی آبادی تیزی سے بڑھ رہی ہے اور ان کے لیے ہسپتال بنانا ضروری ہے۔ اسلام آباد کے 300 بستروں پر مشتمل جناح ہسپتال G-11/3 کا ڈیزائن بھی امریکہ میں تیار کیا جا رہا ہے،” انہوں نے کہا اور کہا کہ 1985 کے بعد پہلی بار وفاقی دارالحکومت میں ایک نیا ہسپتال قائم کیا جائے گا۔ .

ہیلتھ کارڈ کے بارے میں انہوں نے کہا کہ پاکستان کی تاریخ میں صحت، تعلیم اور معیشت پر اتنا کام کسی نے نہیں کیا جتنا موجودہ حکومت کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم سندھ کے علاوہ تمام صوبوں میں ہیلتھ انشورنس فراہم کر رہے ہیں جو کہ دنیا کے ترقی پذیر ممالک میں بھی دستیاب نہیں ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ انہیں خوشی ہے کہ ڈاکٹرز ہسپتال کے سربراہ نے انہیں بتایا کہ پہلی بار ان کے ہسپتال میں ایک کارکن کے دل کا آپریشن ہوا ہے۔ عمران نے کہا کہ 70 سالوں میں کسی نے سوچا بھی نہیں تھا کہ کوئی ایسی حکومت آئے گی جو یکساں نظام تعلیم پر توجہ دے گی۔

پاکستان میں تعلیم کو طبقات میں تقسیم کیا گیا جس میں نچلے طبقے کو اوپر آنے کا موقع نہیں مل سکا۔ انہوں نے کہا کہ اس نظام تعلیم میں انگریزی بولنے والے اعلیٰ طبقے میں تھے اور اردو بولنے والے نچلے طبقے میں تھے، انہوں نے مزید کہا کہ یہ پاکستانیوں پر غلامی کا بوجھ ہے۔ “میں نے بہت سے لوگوں کو صرف یہ ثابت کرنے کے لیے دیکھا ہے کہ وہ پڑھے لکھے ہیں اور یہ مختلف نصاب کی وجہ سے ہے،” انہوں نے نشاندہی کی۔

وزیراعظم نے کہا کہ ملک کو ایک فلاحی ریاست بنانے کے لیے ہم نے رحمت اللعالمین اتھارٹی قائم کی ہے جو ہمارے بچوں کو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی کے مقصد اور قرآن پاک کی تعلیمات سے آگاہ کرنے میں مدد فراہم کرے گی۔ ہم نے معیشت کو مستحکم کیا ہے، ہماری معیشت کے تمام اشاریے درست سمت میں ہیں۔ آئی ایم ایف کہہ رہا ہے کہ پاکستان مضبوط ترقی کی طرف بڑھ گیا ہے۔ ہم پہلی حکومت ہیں جس نے اپنے اخراجات کو کم کرتے ہوئے ریونیو میں اضافہ کیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ پمز بورڈ کے قیام کا مقصد سرکاری ہسپتال کو پرائیویٹ ہسپتال کی طرز پر چلانا اور میرٹ پر آسامیاں فراہم کرنا ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ تقرریاں میرٹ پر ہونی چاہئیں اور کہا کہ یہ درست نہیں کہ صرف سینئر ہی آئیں گے۔ “یہ درست نہیں کہ جو بھی سینئر ہو وہ اوپر آئے لیکن اگر سینئر اچھا چیف ایگزیکٹو نہیں بن سکتا تو شاندار جونیئر کو پروموٹ کرنا چاہیے۔ ترقی اور تقرری میرٹ پر ہونی چاہیے۔ میرٹ پر جتنے لوگ شامل کیے جائیں گے، معیار اسی کے مطابق بلند کیا جائے گا،” انہوں نے کہا اور مزید کہا کہ سرکاری ادارے بھی معیاری خدمات فراہم کر سکتے ہیں۔

دریں اثنا، سینیٹ کے چیئرمین صادق سنجرانی نے وزیراعظم سے ملاقات کی اور بلوچستان میں ریکوڈک سونے اور تانبے کی کان کی ترقی کے علاوہ تقریباً 11 ارب ڈالر کے جرمانے کی معافی کے لیے حکومت کی بیرک گولڈ کمپنی کے ساتھ کامیاب معاہدے پر ان کا شکریہ ادا کیا۔

وزیراعظم نے امید ظاہر کی کہ ریکوڈک سونے اور تانبے کی کان کی ترقی نہ صرف بلوچستان بلکہ پورے پاکستان کی سماجی و اقتصادی ترقی میں اہم کردار ادا کرے گی۔

اس کے علاوہ رکن قومی اسمبلی غلام بی بی بھروانہ نے وزیراعظم سے ملاقات کی۔ انہوں نے عمران خان کی قیادت پر اعتماد کا اظہار کیا۔ وزیر اعظم سے گورنر سندھ عمران اسماعیل، وزیر دفاع پرویز خٹک اور وزیر بحری امور علی حیدر زیدی نے بھی ملاقات کی۔ اجلاس میں ارکان قومی اسمبلی آفتاب صدیقی، سیف الرحمان، عطاء اللہ، اکرم چیمہ، فہیم خان، اسلم خان، عالمگیر خان، عبدالشکور شاد، کیپٹن جمیل، آفتاب جہانگیر، صائمہ ندیم اور نصرت وحید نے شرکت کی۔ ملاقات میں وزیراعظم کے معاون خصوصی ملک محمد عامر ڈوگر بھی موجود تھے۔ اجلاس میں عمران خان کی قیادت پر اعتماد کا اظہار کیا گیا۔ ملاقات میں وفاقی حکومت کی جانب سے کراچی میں جاری ترقیاتی منصوبوں پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔ اجلاس میں اراکین قومی اسمبلی میاں محمد شفیق، شاہد احمد اور رکن صوبائی اسمبلی نذیر احمد چوہان نے بھی شرکت کی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں