21

اپوزیشن کا ساتھ دیں تو مطالبات مانے جائیں گے، پیپلزپارٹی نے ایم کیو ایم پی کو یقین دہانی کرادی

اپوزیشن کا ساتھ دیں تو مطالبات مانے جائیں گے، پیپلزپارٹی نے ایم کیو ایم پی کو یقین دہانی کرادی

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) نے جمعرات کو متحدہ قومی موومنٹ پاکستان (ایم کیو ایم پی) کے اہم مطالبات تسلیم کرنے پر اتفاق کیا ہے اگر وہ وزیراعظم عمران خان کے خلاف اپوزیشن کی عدم اعتماد کی قرارداد کی حمایت کرتی ہے۔

دونوں فریقین اس سلسلے میں ایک تحریری معاہدہ کرنے کے لیے وسیع تر مفاہمت پر پہنچ گئے۔ جمعرات کو زرداری ہاؤس میں ایم کیو ایم کے وفد نے سابق صدر آصف علی زرداری اور پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری سے ظہرانے پر ملاقات کی۔

ایم کیو ایم کے وفد میں عامر خان، خالد مقبول صدیقی، امین الحق، وسیم اختر اور جاوید حنیف شامل تھے جب کہ ملاقات میں وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ، سندھ کے وزراء ناصر شاہ اور سعید غنی، ایڈمنسٹریٹر کراچی مرتضیٰ وہاب اور رخسانہ بنگش بھی موجود تھے۔ .

ملاقات میں ملکی سیاسی صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ایم کیو ایم نے اگرچہ ابھی تک اپوزیشن میں شامل ہونے کا کوئی فیصلہ نہیں کیا تاہم اس بات پر اتفاق کیا گیا کہ تحریری معاہدہ طے پاتے ہی حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ پیپلز پارٹی اور ایم کیو ایم کی ورکنگ کمیٹی حتمی تحریری معاہدے تک پہنچنے کے لیے بات چیت جاری رکھے گی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ ممکن ہے کہ ایم کیو ایم پی تحریک عدم اعتماد پر ووٹنگ سے قبل اپوزیشن میں شامل ہونے کے اپنے حتمی فیصلے کا اعلان کر دے۔

زرداری ہاؤس کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سیکرٹری جنرل پیپلز پارٹی پارلیمنٹیرینز فرحت اللہ بابر نے کہا کہ ایم کیو ایم سے بات چیت ہوئی ہے اور معاملات طے پا گئے ہیں۔

ایک الگ میڈیا ٹاک میں پی پی پی کے ایک اور سینئر رہنما خورشید شاہ نے پی پی پی اور ایم کیو ایم کے درمیان معاہدے کا اشارہ دیتے ہوئے کہا کہ ایم کیو ایم کے ساتھ بہت سی چیزیں طے پا گئی ہیں اور امید ہے کہ ایک دو دن میں ان کے ساتھ تمام معاملات طے پا جائیں گے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں