15

امریکا نے الہان ​​عمر کے پاکستان کے سفر سے خود کو دور کر لیا۔

امریکی رکن کانگریس الہان ​​عمر نے وزیر اعظم شہباز سے ملاقات کی۔  تصویر: پی آئی ڈی
امریکی رکن کانگریس الہان ​​عمر نے وزیر اعظم شہباز سے ملاقات کی۔ تصویر: پی آئی ڈی

واشنگٹن: محکمہ خارجہ کے ترجمان نیڈ پرائس نے جمعرات کو کہا کہ امریکی کانگریس کی خاتون رکن الہان ​​عمر کا پاکستان کا موجودہ سفر امریکی حکومت کی طرف سے سپانسر نہیں ہے۔

“جیسا کہ میں سمجھتا ہوں، نمائندہ عمر امریکی حکومت کے زیر اہتمام سفر پر پاکستان کا دورہ نہیں کر رہا ہے،” انہوں نے اپنی روزانہ کی نیوز بریفنگ میں ایک پاکستانی رپورٹر کے سوال کے جواب میں صحافیوں کو بتایا۔ “لہذا مجھے اس کے سفر سے متعلق سوالات کے لیے آپ کو اس کے دفتر سے رجوع کرنے کی ضرورت ہوگی،” پرائس نے مزید کہا۔

محترمہ عمر، جو ڈیموکریٹ ہیں، اس ہفتے کے شروع میں پاکستان کے دورے پر اسلام آباد پہنچی تھیں، اور 24 اپریل تک قیام کریں گی۔

امریکی قانون ساز نے صدر ڈاکٹر عارف علوی، وزیر اعظم شہباز شریف، قومی اسمبلی کے سپیکر راجہ پرویز اشرف اور وزیر مملکت برائے خارجہ امور حنا ربانی کھر سے ملاقات کی۔ انہوں نے سابق وزیراعظم اور پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان سے بھی ملاقات کی۔ تاہم، عمران خان کے ساتھ ان کی ملاقات نے تنازعہ پیدا کیا کیونکہ سابق وزیر اعظم یہ دعویٰ کرتی رہی ہیں کہ ان کی حکومت کے خاتمے کے پیچھے امریکی حمایت یافتہ سازش تھی۔ واشنگٹن نے ان کے دعووں کی سختی سے تردید کی ہے۔

کچھ سیاست دانوں نے فوری طور پر پی ٹی آئی چیئرمین کو محترمہ عمر سے ملاقات کے لیے تنقید کا نشانہ بنایا، انہیں امریکی حکام کی جانب سے اپوزیشن شخصیات سے ملاقات کرنے پر تنقید کی یاد دلائی۔ اس حوالے سے وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے خان صاحب سے سوال کیا کہ ’کیا امریکی کانگریس وومن سے ملاقات سازش کا حصہ تھی یا مداخلت تھی؟

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں