16

سپریم کورٹ آج مارچ کرنے والوں پر کریک ڈاؤن کے خلاف درخواست پر سماعت کرے گی۔

اسلام آباد میں سپریم کورٹ کی عمارت۔  تصویر: ایس سی ویب سائٹ
اسلام آباد میں سپریم کورٹ کی عمارت۔ تصویر: ایس سی ویب سائٹ

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے پی ٹی آئی کے اسلام آباد لانگ مارچ میں حکومت کی جانب سے حائل رکاوٹوں کو دور کرنے کی ہدایت کی درخواست پر فیصلہ سنا دیا۔

جسٹس اعجاز الاحسن کی سربراہی میں جسٹس منیب اختر اور جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی پر مشتمل سپریم کورٹ کا تین رکنی بینچ (آج) بدھ کو اسلام آباد ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کی جانب سے دائر درخواست پر سماعت کرے گا۔

بار کے صدر شعیب شاہین نے منگل کو پی ٹی آئی رہنماؤں کے گھروں پر چھاپوں، ناکہ بندیوں اور لانگ مارچ میں رکاوٹوں کے خلاف درخواست دائر کر دی۔ درخواست گزار نے موقف اختیار کیا کہ لوگوں کو سفر کے دوران مشکلات کا سامنا ہے۔

“آئین شہریوں کی آزادانہ نقل و حرکت کی ضمانت دیتا ہے اور انہیں آزادانہ نقل و حرکت سے محروم کرنا ان کے بنیادی اور بنیادی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔” درخواست گزار نے کہا کہ پولیس نے گھروں پر چھاپے مار کر سیاسی کارکنوں اور لیگی کارکنوں کو ہراساں کرنا شروع کر دیا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ریاستی اداروں کو کسی بھی غیر قانونی اقدام سے روکنے کے لیے مناسب ہدایات جاری کی جائیں۔

دریں اثناء ایس سی بی اے کے صدر احسن بھون اور سیکرٹری وسیم ممتاز ملک نے کہا ہے کہ احتجاج کرنا اور کسی بھی سیاسی سرگرمی میں حصہ لینا پاکستان کے ہر شہری کا بنیادی حق ہے اور حکومت کو کسی سیاسی جماعت کی سرگرمیوں میں رکاوٹ نہیں ڈالنی چاہیے اور نہ ہی کسی کو مشق کرنے سے روکنا چاہیے۔ ان کا بنیادی حق

بدھ کو یہاں جاری ایک بیان میں ان کا کہنا تھا کہ سیاسی کارکنوں یا شہریوں کے گھروں پر چھاپے مارے جا رہے ہیں جو کہ قانون اور آئین کے منافی ہے۔ انہوں نے خاص طور پر وکلاء کے گھروں پر چھاپوں کے بعد ان کی گرفتاریوں کی مذمت کی۔

انہوں نے تشویش کے ساتھ یہ بھی نوٹ کیا کہ بابر اعوان اور فواد چوہدری جیسے سینئر وکلاء بھی جاری ہنگامہ آرائی کے دوران اپنی پیشہ ورانہ ذمہ داریاں نبھانے سے محروم ہو گئے ہیں۔ لہٰذا انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ایسی سرگرمیوں میں ملوث ہونے اور قانون اور آئین کے خلاف اقدامات کرنے سے باز رہے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں