19

وزیراعلیٰ بلوچستان کے خلاف تحریک عدم اعتماد ناکام

کوئٹہ: وزیراعلیٰ بلوچستان عبدالقدوس بزنجو کے خلاف جمع کرائی گئی تحریک عدم اعتماد جمعرات کو کامیاب نہ ہو سکی کیونکہ اپوزیشن جماعت مطلوبہ نمبر حاصل کرنے میں ناکام رہی۔

جیو نیوز نے رپورٹ کیا کہ اپوزیشن کو تحریک کی منظوری کے لیے 13 اراکین کی ضرورت تھی لیکن صرف 11 اراکین نے اس کے حق میں ووٹ دیا اور قائم مقام اسپیکر نے اسے “غیر موثر” قرار دیا۔

اس سے قبل بلوچستان نیشنل پارٹی (بی این پی) کے رہنما اختر حسین لانگو نے کہا کہ پارٹی بزنجو کے خلاف تحریک عدم اعتماد کی حمایت نہیں کرے گی۔ انہوں نے بلوچستان اسمبلی کے اجلاس سے قبل صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ‘بی این پی نے اس معاملے پر بات کرنے اور وزیراعلیٰ بلوچستان کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے حوالے سے کسی نتیجے پر پہنچنے کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے’۔

لانگو نے کہا کہ بلوچستان اسمبلی میں سیاسی جماعتوں نے ہم سے رابطہ کیا ہے تاہم وزیراعلیٰ کے خلاف تحریک عدم اعتماد کے حوالے سے بات چیت کے دروازے کھلے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بی این پی نے ایک مذاکراتی کمیٹی بنا دی ہے جس کا جلد اجلاس ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ہم تحریک عدم اعتماد کے لیے اپنی حکمت عملی بنائیں گے اور دو دن میں اپنے فیصلے کا اعلان کریں گے۔

18 مئی کو بی اے پی اور اتحادیوں نے بزنجو کے خلاف تحریک عدم اعتماد جمع کرائی۔ پی ٹی آئی بلوچستان چیپٹر کے صدر یار محمد رند کے مطابق بزنجو کے خلاف پارٹی اراکین متحد ہوگئے اور ان کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش کرنے کا فیصلہ کیا۔ رند نے کہا، ’’ہمارے پاس تمام مطلوبہ نمبر ہیں اور بزنجو کے خلاف تحریک عدم اعتماد کامیاب ہوگی،‘‘ انہوں نے مزید کہا کہ پارٹی دیگر جماعتوں سے مشاورت کے بعد نئے وزیراعلیٰ کے بارے میں فیصلہ کرے گی۔

دریں اثناء بلوچستان حکومت کی ترجمان فرح عظیم شاہ نے کہا کہ حاصل بزنجو آئندہ 5 سال تک بھی بلوچستان کے وزیراعلیٰ رہیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ان کے خلاف تحریک عدم اعتماد ناکام ہو جائے گی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں