26

پتوکی میں ڈاکوؤں نے نوعمر لڑکی کو زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا۔

قصور: پتوکی میں جمعرات کو ڈاکوؤں نے 15 سالہ لڑکی کو اس کے والد احمد اور کمسن بھائی کے سامنے اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنایا۔

شادی کی تقریب سے کھوکھر اشرف گاؤں واپس جاتے ہوئے پتوکی چونیاں بائی پاس پر ڈاکوؤں نے اہل خانہ کو روکا جنہوں نے پہلے انہیں لوٹا اور پھر کھیتوں میں لے گئے جہاں انہوں نے احمد اور اس کے بیٹے کا گلا گھونٹ دیا اور اس کی بیٹی کے ساتھ اجتماعی زیادتی کی۔ کچھ راہگیروں کو دیکھ کر ڈاکو اپنی موٹر سائیکلیں چھوڑ کر فرار ہو گئے۔

بچی کو طبی امداد کے لیے تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال لے جایا گیا۔ پولیس نے مقدمہ درج کرنے کے بعد شواہد اکٹھے کر لیے ہیں اور کہا ہے کہ ملزمان کو جلد گرفتار کر لیا جائے گا۔ انہوں نے ایک مشتبہ شخص کی گرفتاری کا دعویٰ کیا۔

قصور کے ڈی پی او صہیب اشرف کے مطابق ملزمان کی گرفتاری کے لیے پولیس کی پانچ ٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں۔ آئی جی پنجاب راؤ سردار علی خان نے واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے پولیس کو ملزمان کی فوری گرفتاری کی ہدایت کی ہے۔ انہوں نے ڈی پی او کو متاثرہ خاندان سے رابطہ برقرار رکھنے کی ہدایت کی۔

وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز نے بھی واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے آئی جی پی سے رپورٹ طلب کرلی۔ انہوں نے ملزمان کی فوری گرفتاری کی ہدایت کی۔ انہوں نے متاثرہ خاندان کے گھر جا کر ملزمان کے خلاف سخت کارروائی کی یقین دہانی کرائی۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ واقعہ افسوسناک ہے۔ انہوں نے خاندان کے لیے مالی پیکیج کا اعلان کیا۔ ان کے ہمراہ آئی جی پی اور دیگر اعلیٰ حکام بھی تھے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں