13

پی ٹی آئی کے اراکین قومی اسمبلی کا اسپیکر سے رابطہ

سپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف۔  تصویر: پی آئی ڈی
سپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف۔ تصویر: پی آئی ڈی

اسلام آباد: اسپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف نے دعویٰ کیا ہے کہ پی ٹی آئی کے چند ارکان نے استعفوں کے حوالے سے ان سے بالواسطہ اور بالواسطہ رابطے کیے ہیں۔

انہوں نے پارلیمانی رپورٹرز کے لیے بجٹ پر ٹیکنیکل رپورٹنگ کے موضوع پر منعقدہ ایک روزہ ورکشاپ کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ‘میں پی ٹی آئی رہنماؤں کی تصدیق یا بصورت دیگر استعفوں کا انتظار کر رہا ہوں کیونکہ ذاتی سماعت کا عمل 10 جون تک جاری رہے گا۔’ بدھ کو پارلیمانی رپورٹرز ایسوسی ایشن اور پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف پارلیمانی سروسز (PIPS) کی جانب سے۔

سپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف نے قومی اسمبلی سے مستعفی ہونے والے پی ٹی آئی کے اراکین اسمبلی کے بالواسطہ اور بالواسطہ رابطوں کی تفصیلات ظاہر نہیں کیں لیکن کہا کہ یہ عمل مکمل ہونے کے بعد وہ پی ٹی آئی کے استعفوں کی قسمت کا فیصلہ کریں گے۔

استعفوں کی منظوری سے متعلق ایک سوال کے جواب میں اشرف نے کہا کہ انہوں نے استعفوں کی تصدیق کے لیے قومی اسمبلی کی کارروائی کا تمام ریکارڈ مانگ لیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ میں نے ان تمام لوگوں کی تفصیلات مانگ لی ہیں جنہوں نے ایوان سے استعفیٰ دیا تھا۔سوال کے جواب میں سپیکر نے کہا کہ ایم این ایز کے استعفے قبول کرنے کا طریقہ کار ہے۔انہوں نے کہا کہ استعفوں کی صداقت پر کچھ شکوک و شبہات ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم چاہتے تھے کہ جن قانون سازوں کے خلاف استعفوں کی درستگی پر شک تھا وہ ذاتی طور پر میرے سامنے استعفوں پر دستخط کریں۔

ایک اور سوال کے جواب میں اشرف نے کہا کہ استعفیٰ دینے والے تمام ارکان کی تنخواہ استعفیٰ کی تاریخ سے روک لی گئی ہے۔

اس سے قبل پارلیمانی رپورٹرز ایسوسی ایشن اور پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف پارلیمانی سروسز (PIPS) کے زیر اہتمام پارلیمانی رپورٹرز کے لیے بجٹ پر ٹیکنیکل رپورٹنگ کے موضوع پر ایک روزہ ورکشاپ سے خطاب کرتے ہوئے اسپیکر قومی اسمبلی نے کہا کہ قومی اسمبلی کو فنانس کی منظوری اور منظوری کا اختیار حاصل ہے۔ بل. اشرف نے کہا کہ بجٹ میں پیچیدہ تکنیکی اور طریقہ کار شامل ہیں اور اس کو سمجھنا ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک مشکل وقت سے گزر رہا ہے اور ہمیں ایک دوسرے کا ساتھ دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ قوم پرعزم ہے اور چیلنجز پر قابو پانے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ آج کے اطلاعات کے دور میں میڈیا کا کردار زیادہ اہم اور اہم ہو گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پارلیمانی کارروائی کی رپورٹنگ اور مناسب تناظر میں معلومات پہنچانا رپورٹرز کی اولین ذمہ داری ہے۔

سپیکر قومی اسمبلی راجہ پرویز اشرف نے بھی ورکشاپ کے کامیاب انعقاد پر پارلیمانی رپورٹرز ایسوسی ایشن، PIPS اور ڈائریکٹوریٹ جنرل آف میڈیا نیشنل اسمبلی سیکرٹریٹ کو خراج تحسین پیش کیا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں