8

سپریم کورٹ نے نیب سے عدالتوں سے بری ہونے والے تمام ملزمان کی تفصیلات طلب کر لیں۔

اسلام آباد میں سپریم کورٹ کی عمارت۔  تصویر: دی نیوز/فائل
اسلام آباد میں سپریم کورٹ کی عمارت۔ تصویر: دی نیوز/فائل

اسلام آباد: ملک بھر کی احتساب عدالتوں سے بری کیے گئے تمام ملزمان کی تفصیلات طلب کرتے ہوئے، سپریم کورٹ نے منگل کے روز مشاہدہ کیا کہ قومی احتساب بیورو بدعنوانی کے مقدمات میں مبینہ طور پر ملوث ہونے کے الزام میں ملزمان کو حراست میں لے لیتا ہے لیکن بعد میں انہیں مجرمانہ شواہد کی کمی پر بری کر دیا جاتا ہے۔

سپریم کورٹ نے یہ آبزرویشن لاہور ہائی کورٹ کی جانب سے صاف پانی ریفرنس میں ملزمان کی ضمانتوں کے خلاف قومی احتساب بیورو کی جانب سے دائر اپیلوں کی سماعت کے دوران دی۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں جسٹس یحییٰ آفریدی اور جسٹس عائشہ اے ملک پر مشتمل عدالت عظمیٰ کے تین رکنی بینچ کے روبرو پیش ہوئے، اسپیشل پراسیکیوٹر نیب نے دو سال قبل دائر کی گئی اپیلیں جمع کرائیں اور اس عرصے کے دوران احتساب عدالت میں پیش ہوئے۔ تمام ملزمان کو عدم ثبوت کی بنا پر بری کر دیا۔

نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ اس لیے ملزمان کے خلاف عدالت عظمیٰ میں دائر اپیلیں بے نتیجہ ہو چکی ہیں۔ عدالت نے پراسیکیوٹر سے پوچھا کہ احتساب عدالت نے ملزمان کو کب بری کیا؟ پراسیکیوٹر نے جواب دیا کہ وہ 31 جنوری 2022 کو بری ہوئے تھے۔چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے پراسیکیوٹر سے پوچھا کہ کیا نیب احتساب عدالتوں سے بری ہونے والے ملزمان کا ریکارڈ رکھتا ہے؟ پراسیکیوٹر نے اثبات میں جواب دیا۔ جس پر عدالت نے ملک بھر کی نیب عدالتوں سے بری کیے گئے تمام ملزمان کی تفصیلات پر مشتمل جامع رپورٹ طلب کرلی۔

وزیراعلیٰ پنجاب کے طور پر اپنے دور میں میاں شہباز شریف نے صوبے میں فلٹریشن پلانٹس لگا کر صاف پانی پراجیکٹ کا آغاز کیا تھا اور ایم پی اے راجہ قمر الاسلام کو پراجیکٹ کا چیئرمین مقرر کیا تھا۔

2018 میں، اینٹی کرپشن واچ ڈاگ نے قومی خزانے کو 345 ملین روپے کا نقصان پہنچانے پر ظہیر الدین، ناصر قادر، مسعود اختر، سلیم اختر اور خالد نعیم سمیت 16 افراد کے خلاف صاف پانی ریفرنس دائر کیا۔

تاہم 31 جنوری 2022 کو محمد ساجد علی کی سربراہی میں احتساب عدالت لاہور نے ریفرنس میں تمام 16 ملزمان کو بری کرتے ہوئے منصوبے کو شفاف قرار دیا۔ اس کے علاوہ عدالت نے قرار دیا کہ اینٹی گرافٹ باڈی ریفرنس میں کوئی بے ضابطگی ثابت نہیں کر سکتی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں