14

وزیراعلیٰ پنجاب کے لیے دوبارہ پولنگ پر غور کر رہے ہیں: لاہور ہائیکورٹ

لاہور ہائی کورٹ کی عمارت۔  تصویر: دی نیوز/فائل
لاہور ہائی کورٹ کی عمارت۔ تصویر: دی نیوز/فائل

لاہور: لاہور ہائیکورٹ میں وزیراعلیٰ پنجاب کے لیے دوبارہ پولنگ کرانے پر غور جاری ہے، منگل کو حمزہ شہباز کے وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب کو چیلنج کرنے والے کیس کی سماعت کرتے ہوئے عدالت نے ریمارکس دیے۔

لاہور ہائیکورٹ کے بینچ نے حمزہ شہباز کے بطور وزیراعلیٰ انتخاب کو چیلنج کرنے والی پی ٹی آئی اور پی ایم ایل کیو کی جانب سے دائر درخواستوں کی سماعت کے دوران پنجاب کے وزیراعلیٰ کے عہدے کے لیے دوبارہ انتخابات کا حکم دینے کا عندیہ دیا۔

سماعت کے دوران پی ٹی آئی کے وکیل بیرسٹر علی ظفر نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی کے 25 منحرف افراد کے ووٹوں کی گنتی نہ کی گئی تو حمزہ شہباز وزیراعلیٰ نہیں رہیں گے۔ انہوں نے کہا کہ حمزہ کو ان کے عہدے سے ہٹا کر نئے انتخابات کرائے جائیں۔ انہوں نے دوبارہ پولنگ کرانے کے لیے کم از کم 10 دن کا وقت مانگا ہے۔ جس پر عدالت نے ریمارکس دیئے کہ وزیراعلیٰ پنجاب کا انتخاب 16 اپریل کو ووٹر لسٹ کے تحت کرایا جائے۔ تاہم علی ظفر نے اعتراض کیا کہ اب تک کی گئی تبدیلیوں کو تبدیل نہیں کیا جا سکتا۔ جس پر اب تک کی بنائی گئی چیز کو پلٹایا نہیں جاسکا۔ جس پر عدالت نے ریمارکس دیے کہ وہ اس معاملے کو قانونی کور دے گی۔ پی ٹی آئی کے وکیل نے مخصوص نشستوں پر منتخب ہونے والے پانچ ووٹرز کو بھی شامل کرنے کی استدعا کی۔ جسٹس طارق سلیم نے جواب دیا کہ جب یہ ووٹرز 16 اپریل کو نہیں تھے تو ان کو کیسے شامل کیا جا سکتا ہے۔

عدالت نے استفسار کیا کہ اگر معاملات 16 اپریل کو پنجاب اسمبلی کے اجلاس میں واپس لے کر دوبارہ پولنگ کرائی جائے تو سیاسی بحران سے کیسے بچا جائے گا۔ عدالت نے کہا کہ اس معاملے میں وہی پریذائیڈنگ آفیسر پولنگ کرائے گا جو 16 اپریل کو پولنگ کے دوران ڈیوٹی پر تھا۔

پی ٹی آئی کے وکیل نے جواب دیا کہ پارٹی نے پی اے کے ڈپٹی سپیکر دوست محمد مزاری کی صدارت میں ہونے والے الیکشن کو بھی چیلنج کیا تھا۔ تاہم عدالت نے ریمارکس دیئے کہ لاہور ہائیکورٹ کا حکم موجود ہے اور اسے چیلنج نہیں کیا جا سکتا۔

پی ٹی آئی کے وکیل اور عدالتی مشاہدات سننے کے بعد ایڈووکیٹ جنرل پنجاب نے وزیراعلیٰ پنجاب حمزہ شہباز کو صورتحال پر بریفنگ کے لیے ایک دن کی مہلت مانگ لی۔ عدالت نے کیس کی سماعت (آج) 29 جون تک ملتوی کر دی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں