37

عمران نے کہا کہ زندگی میں بہت سی غلطیاں کی ہیں۔

سابق وزیر اعظم عمران خان ایک سیمینار سے خطاب کر رہے ہیں - 30 جون 2022 کو اسلام آباد ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کا ایک پروگرام۔ تصویر: ٹویٹر
سابق وزیر اعظم عمران خان ایک سیمینار سے خطاب کر رہے ہیں – 30 جون 2022 کو اسلام آباد ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کا ایک پروگرام۔ تصویر: ٹویٹر

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ زندگی میں بہت غلطیاں کی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ملک کو قانون کی حکمرانی کے مطابق چلنا چاہیے لیکن ترجیحات کا تعین کرتے ہیں کہ کونسا بحران پہلے حل کرنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام بحرانوں کو ایک ساتھ حل نہیں کیا جا سکتا لیکن ان کا کہنا تھا کہ انہیں یقین ہے کہ وہ بہت سے مسائل کو حل کر سکتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) پر کوئی اعتماد نہیں کرتا۔ یہ بات انہوں نے اسلام آباد ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن (IHCBA) کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ عمران خان نے کہا کہ جو بھی یہ سیٹ اپ مسلط کر رہا ہے وہ اداروں کو نقصان پہنچا رہا ہے اور ملک میں آزادانہ اور شفاف انتخابات ہونے چاہئیں جب کہ سندھ اور پنجاب جیسے الیکشن سے انتشار ہی بڑھے گا۔

انہوں نے پنجاب حکومت پر 20 حلقوں کے ضمنی انتخابات میں مداخلت کا الزام لگایا اور پی ٹی آئی کے دو امیدواروں نے انہیں پی ٹی آئی کے ٹکٹ پر الیکشن نہ لڑنے کی فون کالز موصول ہونے کے بارے میں بتایا۔

انہوں نے کہا کہ سندھ میں بلدیاتی انتخابات پر مخلوط حکومت کے اتحادی حکومت پر انگلیاں اٹھا رہے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ بلدیاتی انتخابات میں پولیس کا استعمال کیا گیا۔ عمران خان کا کہنا تھا کہ سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ حکومت کی تبدیلی کے بعد میڈیا پر دباؤ ڈالا گیا، جب کہ آزادی ایک بڑی وجہ تھی جس کی وجہ سے پاکستان وجود میں آیا اور قائد اعظم محمد علی جناح کی ساری جدوجہد آزادی حاصل کرنے کے لیے تھی۔

پی ٹی آئی چیئرمین کا مزید کہنا تھا کہ طاقتور کو این آر او دینے سے قوم تباہ ہوتی ہے، غریب ممالک کا مسئلہ یہ ہے کہ طاقتور کو سزا نہیں ملتی، جب کہ غریب ممالک سے ہر سال اربوں ڈالر چوری ہوتے ہیں اور 7 ارب ڈالر۔ غریب ممالک کی آف شور کمپنیاں ہیں۔

ادھر سینئر صحافی ایاز امیر نے عمران خان کو منہ پر تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ اب تک ملک کے ساتھ جو بھی برا ہوا ہے عمران خان نے بھی اس میں اپنا حصہ ڈالا ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان نے پاکستان کو پراپرٹی ڈیلرز کے حوالے کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ قائداعظم اور علامہ اقبال کی تصاویر ہٹا کر ان کی جگہ پراپرٹی ڈیلرز کی تصاویر لگائیں۔

انہوں نے کہا کہ پنجاب ریور راوی اربن منصوبہ ملک کو پراپرٹی ڈیلرز کے حوالے کرنے کی روشن مثال ہے۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان ملک اور اپنی حکومت کو درپیش اصل مسائل کو نہیں پہچان سکے اور انہیں اصل مسائل کا تب ہی احساس ہونا شروع ہوا جب انہیں طاقتوں نے تھپڑ مارا اور وہ خود کو چی گویرا سمجھنے لگے۔

انہوں نے کہا کہ وہ خود کو چی گویرا سمجھتے رہیں اور اس کے مطابق عمل کریں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانیوں کے پاس سیاست میں واحد آپشن ہے اور وہ ان کی توقعات پر پورا اترے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں