16

وزیراعظم نے 18 پارلیمانی سیکرٹریز کی تقرری کی۔

وزیر اعظم شہباز شریف۔  تصویر: دی نیوز/فائل
وزیر اعظم شہباز شریف۔ تصویر: دی نیوز/فائل

اسلام آباد: وزیر اعظم شہباز شریف نے حکمران اتحاد سے تعلق رکھنے والے 18 ایم این ایز کو وفاقی وزارتوں کے لیے پارلیمانی سیکرٹری مقرر کر دیا ہے اور انہوں نے اپنی ذمہ داریاں سنبھال لی ہیں۔

یہ مخلوط حکومت کی طرف سے مقرر کردہ پارلیمانی سیکرٹریوں کی پہلی کھیپ ہے۔ امکان ہے کہ باقی وزارتوں کے لیے مزید پارلیمانی سیکرٹریز تعینات کیے جائیں گے۔ یہ قدم قومی اسمبلی میں وزارتوں اور ڈویژنوں کے کام کو ہموار کرنے کے لیے اٹھایا گیا ہے جہاں ایم این ایز شکایت کرتے رہے ہیں کہ متعلقہ وزراء اور وزرائے مملکت کی مصروفیات کی وجہ سے ان کے سوالات اور شکایات کا مناسب طور پر ازالہ نہیں کیا جا رہا۔

دریں اثناء وزیراعظم کے معاونین خصوصی سینیٹر حافظ عبدالکریم، محمد جنید، انور چوہدری، شیخ فیاض الدین اور رومینہ خورشید عالم نے وفاقی وزیر اور وزیر مملکت کے عہدے سے دستبردار ہو گئے ہیں۔ کریم کو وفاقی وزیر جبکہ باقی تین کو وزیر مملکت کا درجہ حاصل تھا۔

ذرائع نے ہفتہ کو یہاں دی نیوز کو بتایا کہ SAPMs نے ملک میں معاشی صورتحال کے پیش نظر حکومت کی سادگی کی مہم میں حصہ ڈالنے کے لیے رضاکارانہ طور پر یہ قدم اٹھایا۔ ذرائع نے بتایا کہ محمد سجاد (مانسہرہ) کو پارلیمانی سیکرٹری برائے داخلہ بنا دیا گیا ہے۔ وہ کیپٹن صفدر کے بڑے بھائی ہیں۔

پہلی بار پانچ خواتین پارلیمانی سیکرٹریز کا تقرر کیا گیا ہے۔ دیگر پارلیمانی سیکرٹریز میں ملک سہیل کامریال (سول ایوی ایشن)، علی زاہد حامد (دفاع)، چوہدری فقیر احمد (اقتصادی امور)، چوہدری حامد حمید (توانائی برائے پیٹرولیم اینڈ گیس)، محمد عرفان ڈوگر (توانائی برائے بجلی)، زیب جعفر (انرجی) شامل ہیں۔ فنی تعلیم/قومی ورثہ، رانا ارادت شریف (فنانس اینڈ ریونیو)، مہناز اکبر عزیز (قانون و انصاف)، شیخ سعد وسیم (پارلیمانی امور)، چوہدری خالد جاوید (پلاننگ کمیشن اینڈ ڈویلپمنٹ)، کرن عمران ڈار (ریلوے)، عارفین خان (مذہبی امور)، سید محمود شاہ (ہاؤسنگ اینڈ ورکس)، عصمت اللہ خان (سفران)، شاہدہ اختر علی (کمیونیکیشن) اور پروفیسر ڈاکٹر شہناز بلوچ (سائنس اینڈ ٹیکنالوجی)۔

علی زاہد حامد سابق وزیر قانون زاہد حامد کے صاحبزادے ہیں جبکہ مہناز اکبر عزیز پی ایم ایل این کے رہنما دانیال عزیز چوہدری کی شریک حیات ہیں۔

ذرائع نے بتایا کہ ان پارلیمانی سیکرٹریز کی شمولیت سے قومی اسمبلی میں کورم کا مسئلہ کسی حد تک حل ہو جائے گا۔ کچھ اہم وفاقی وزارتوں کے پاس پارلیمانی سیکرٹریز باقی ہیں۔ یہ وزارتیں امور خارجہ، اطلاعات و نشریات، تعلیم، تجارت، موسمیاتی تبدیلیاں، انسانی حقوق، دفاعی پیداوار، صنعت و پیداوار، آئی ٹی اور ٹیلی کمیونیکیشن، نارکوٹکس، میری ٹائم افیئرز، نیشنل فوڈ اینڈ سیکیورٹی، نیشنل ہیلتھ سروسز، اوورسیز پاکستانی، نجکاری، بجلی اور آبی وسائل۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں