8

کابل دھماکے میں آٹھ افراد ہلاک

کابل: افغانستان کے دارالحکومت میں جمعہ کو اقلیتی رہائشی علاقے میں ہونے والے دھماکے میں آٹھ افراد ہلاک اور 18 زخمی ہو گئے۔

گروپ نے کہا کہ داعش نے افغانستان کے دارالحکومت کابل میں اقلیتی رہائشی علاقے میں ایک مہلک دھماکے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ افغان پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکے میں کم از کم آٹھ افراد ہلاک اور 18 زخمی ہوئے۔ داعش نے ایک بیان میں کہا ہے کہ مغربی کابل میں کیے گئے حملے میں 20 افراد ہلاک اور زخمی ہوئے۔

شہر کے پولیس ترجمان، خالد زدران نے کہا، “دھماکہ ایک پرہجوم جگہ پر ہوا۔ مبینہ طور پر دھماکے کی جگہ کی سوشل میڈیا پر شیئر کی گئی ویڈیو میں دکھایا گیا ہے کہ لوگ واقعے کے بعد زخمیوں کی مدد کے لیے بھاگ رہے ہیں۔

طالبان کے ایک سینئر سیکیورٹی اہلکار نے نام ظاہر کرنے سے انکار کرتے ہوئے بتایا کہ ابتدائی تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ دھماکہ خیز مواد سبزیوں کی ایک گاڑی میں رکھا گیا تھا اور دھماکے کے نتیجے میں خواتین اور بچوں سمیت 50 سے زائد افراد زخمی اور ہلاک ہوئے۔

انہوں نے کہا کہ اس بات کا امکان ہے کہ مرنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہو گا کیونکہ زیادہ تر زخمیوں کے زخم نازک تھے۔ داعش نے حالیہ حملوں کی ذمہ داری قبول کی ہے، خاص طور پر اقلیتی برادری پر۔ افغانستان میں 2014 سے کام کرنے والی داعش سے وابستہ تنظیم کو گزشتہ سال اگست میں طالبان کے قبضے میں لینے کے بعد سے ملک کے لیے سب سے سنگین سیکیورٹی چیلنج کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں