16

سوات میں دھماکے میں 2 پولیس اہلکاروں سمیت 5 افراد شہید

دھماکے کے منظر کی ایک نمائندہ تصویر۔  - ٹویٹر/فائل
دھماکے کے منظر کی ایک نمائندہ تصویر۔ – ٹویٹر/فائل

مینگورہ: ضلع سوات کی تحصیل کبل کے علاقے بارہ بانڈئی کوٹکے میں منگل کو ریموٹ کنٹرول بم دھماکے میں گاؤں کی دفاعی کمیٹی کے سابق رکن اور دو پولیس اہلکاروں سمیت پانچ افراد شہید ہو گئے۔

ذرائع نے بتایا کہ امن کمیٹی کے سابق چیئرمین ادریس خان جا رہے تھے کہ ان کی گاڑی کو ریموٹ کنٹرول ڈیوائس سے نشانہ بنایا گیا۔ جس کے نتیجے میں ادریس خان، رام بیل خان اور توحید خان نامی دو پولیس اہلکار اور دو راہگیر موقع پر ہی شہید ہو گئے۔

معلوم ہوا ہے کہ راہگیر جن کے نام معلوم نہیں ہو سکے مزدور تھے اور دھماکا کے وقت علاقے سے گزر رہے تھے۔ دھماکے سے ایک گاڑی کو بھی نقصان پہنچا۔ ادریس خان 2009، 2010 اور 2011 میں کمیٹی کے رکن رہے۔

دریں اثناء وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے انسپکٹر جنرل پولیس کو رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی ہے۔ انہوں نے متاثرہ خاندانوں سے ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان کی قربانیاں رائیگاں نہیں جائیں گی۔ انہوں نے اس عزم کا اظہار کیا کہ تشدد کے مرتکب افراد کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا۔

واضح رہے کہ تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے عسکریت پسندوں نے حال ہی میں ضلع سوات کی تحصیل مٹہ میں بالاسور ٹاپ پر چیک پوسٹ قائم کی تھی اور دیگر علاقوں میں دندناتے پھر رہے تھے۔ اس نے قدرتی وادی میں مقامی لوگوں کو خوف میں مبتلا کر دیا۔ بعد ازاں انہوں نے طالبان کی واپسی کے خلاف احتجاج کیا اور ان کے خلاف فیصلہ کن کارروائی کا مطالبہ کیا۔ اس کے علاوہ، طالبان نے مبینہ طور پر سوات ضلع کی تحصیل مٹہ کے علاقے بالاسور سے تاوان کے لیے ایک شخص کو اغوا کیا تھا۔ مغوی شخص محمد فروش کے بھائی محمد حیات نے کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ میں فرسٹ انفارمیشن رپورٹ (ایف آئی آر) درج کرائی تھی کہ ٹی ٹی پی کے ارکان نے افغانستان سے موبائل فون سے کالیں کیں اور 10 ملین روپے تاوان کا مطالبہ کیا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں