11

اگلے آرمی چیف کا نام وزیر اعظم شہباز دیں گے، فضل الرحمان

جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان۔  - فائل
جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان۔ – فائل

پشاور: آرمی چیف کی تقرری اور قبل از وقت انتخابات کے بارے میں عمران خان کے بیانات کا مذاق اڑاتے ہوئے پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے صدر اور جمعیت علمائے اسلام (جے یو آئی ایف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے اتوار کے روز کہا کہ آرمی چیف کا نام آرمی چیف کے ذریعے لیا جائے گا۔ وزیراعظم اور انتخابات وقت پر ہوں گے۔

وہ پہلے بھی آرمی چیف کو برطرف کرنے کا مطالبہ کرتے تھے۔ اب وہ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع چاہتے ہیں۔ یہ آرمی چیف کی توسیع سے متعلق نہیں ہے۔ معاملہ یہ ہے کہ انہیں (عمران خان) کو مزید وقت دیا جائے یا نہیں اور اس کا فیصلہ پارلیمنٹ کرے گی،‘‘ مولانا نے پارٹی کی صوبائی جنرل کونسل سے خطاب کرتے ہوئے کہا، جس کا اتوار کو یہاں اجلاس ہوا۔

مولانا نے نئے آرمی چیف کی تقرری سے متعلق پی ٹی آئی چیئرمین کے ایک اور بیان پر بھی تنقید کی۔ “وہ (عمران) کہتے ہیں کہ آرمی چیف کا تقرر وزیراعظم کو نہیں کرنا چاہیے۔ آرمی چیف کا تقرر وزیراعظم کے علاوہ اور کون کرے گا؟ کیا آپ اسے مقرر کریں گے؟ آپ نے فوج کی عزت اور سالمیت کو نقصان پہنچایا ہے۔‘‘

مولانا فضل نے سابق وزیر اعظم کا مذاق اڑاتے ہوئے کہا: “وہ کہتے ہیں کہ وہ احتجاج کی کال دیں گے۔ تم کال دو۔ حکیم ثناء اللہ پہلے ہی آپ کا انتظار کر رہے ہیں۔

“وہ کہتے ہیں کہ وہ حکومت کو مزید وقت نہیں دیں گے، جو کہ ایک اور مذاق ہے۔ تم سے کس نے وقت مانگا ہے؟ ہم نے پہلے ہی وہ وقت چھین لیا ہے جس سے آپ لطف اندوز ہو رہے تھے۔‘‘ فضل نے کہا۔

فضل نے کہا کہ عمران ایک ڈرامہ تھا، جو بری طرح فلاپ ہو گیا ہے۔ وہ اپنی پسند کی عدلیہ، فوج اور بیوروکریسی چاہتے تھے۔ اگر عدلیہ ان کے حق میں کوئی فیصلہ نہیں دیتی تو وہ اسے غلط قرار دیں گے۔ اگر الیکشن کمیشن غیر ملکی فنڈنگ ​​کیس میں اپنا فیصلہ سناتا ہے تو وہ اس پر الزامات عائد کرے گا اور اسے جزوی قرار دے گا۔ اگر فوج اس کی حمایت کرنا چھوڑ دیتی ہے تو وہ فوج اور اس کے افسران کے خلاف الزامات لگائے گا، “پی ڈی ایم کے سربراہ نے کہا۔

فضل نے الزام لگایا کہ پی ٹی آئی سربراہ امریکی حکام سے خفیہ ملاقاتیں کر رہے ہیں اور وہ ان کے حکم پر عمل کر رہے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی وہ امریکہ مخالف نعرے لگا کر قوم کو بے وقوف بنا رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کا اصل چہرہ بے نقاب ہو چکا ہے اور اسے اقتدار کی راہداریوں سے باہر پھینک دیا گیا ہے۔

دریں اثناء جے یو آئی ف کی جنرل کونسل کا اجلاس پارٹی کے صوبائی صدر مولانا عطا الرحمن کی زیر صدارت جاری۔

اجلاس میں الیکشن کمیشن پر زور دیا گیا کہ وہ پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان کی جانب سے اپنی انتخابی مہم کے لیے خیبرپختونخوا حکومت کے ہیلی کاپٹر سمیت سرکاری وسائل کے استعمال کا نوٹس لے۔

اجلاس میں اس بات پر غور کیا گیا کہ صوبائی حکومت عمران خان کی انتخابی مہم پر ڈینگی وائرس اور دیگر وسائل کے لیے مختص سرکاری فنڈز کا غلط استعمال کر رہی ہے۔ اجلاس میں الیکشن کمیشن اور قومی احتساب بیورو (نیب) پر زور دیا گیا کہ وہ انتخابی قوانین کی صریح خلاف ورزیوں اور سرکاری وسائل کے غلط استعمال کا نوٹس لیں۔

اجلاس میں صوبے میں امن و امان برقرار رکھنے میں مبینہ ناکامی پر صوبائی حکومت کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔

اجلاس کے شرکاء نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت کی نااہلی کی وجہ سے صوبے میں لاقانونیت کی لہر دوڑ گئی ہے۔

ملاقات میں صوبے میں سیلاب کی صورتحال پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔ شرکاء نے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں جے یو آئی ف کی جانب سے کی جانے والی امدادی سرگرمیوں پر اطمینان کا اظہار کیا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں