16

لاہور ہائیکورٹ نے ہل سٹیشن میں کمرشل تعمیرات پر پابندی عائد کر دی۔

راولپنڈی: لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ نے بدھ کے روز سانحہ مری کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے متعلقہ حکام کو سانحہ کے متاثرین کے لواحقین کو دیے گئے معاوضے کو ناکافی قرار دیتے ہوئے معاوضے میں اضافے کا حکم دے دیا۔ .

لاہور ہائی کورٹ راولپنڈی بینچ کے جسٹس عبدالعزیز نے چھ ماہ قبل محفوظ کیا گیا فیصلہ سنایا جب کہ 80 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلہ 7 نومبر کو جاری کیا جائے گا۔عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ مری میں تمام غیر قانونی عمارتوں کو ختم کیا جائے۔ گرا دیا جائے اور تمام کمرشل تعمیرات پر پابندی لگائی جائے۔ عدالت نے مری میں درختوں کی کٹائی روکنے کی بھی ہدایت کردی۔ عدالت نے کہا کہ ریسکیو 1122، محکمہ ہائی وے اور پنجاب ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی بھی سانحہ مری کے ذمہ دار ہیں جس میں کم از کم 22 سیاحوں کی جانیں گئیں۔ عدالت نے حکم دیا کہ ہوٹلوں کے لیے میکنزم بنایا جائے اور مری میں ہوٹلوں اور گیسٹ ہاؤسز میں فرق کرنے کے لیے کیٹگریز بنا کر کرایے کا تعین کیا جائے۔ فیصلے میں کہا گیا کہ ایسے افسران کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے گی جو محکمہ موسمیات کی غیر معمولی برف باری کی رپورٹ سے آگاہ تھے۔ فیصلے میں کہا گیا کہ کوئی کارروائی نہیں کی جائے گی۔

سانحہ کے بعد بلاجواز معطل کرنے والوں کے خلاف کارروائی کی جائے گی جبکہ ریسکیو 1122، محکمہ ہائی وے اور پی ڈی ایم اے کے افسران کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔ 9 جنوری 2022 کو ایک تیز برفانی طوفان کی وجہ سے کم از کم 22 افراد اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ محکمہ موسمیات کی جانب سے جاری کردہ وارننگ

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں