19

عالمی رہنماؤں نے عمران خان پر قاتلانہ حملے کی مذمت کی ہے۔

امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن۔  ٹویٹر/SecBlinken
امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن۔ ٹویٹر/SecBlinken

اسلام آباد: امریکا نے جمعرات کو پی ٹی آئی کے جلسے میں فائرنگ کی شدید مذمت کی ہے جس میں سابق وزیراعظم عمران خان اور دیگر زخمی ہوئے تھے۔

امریکی وزیر خارجہ اینٹونی بلنکن نے ایک بیان میں کہا کہ امریکہ عمران خان اور دیگر تمام زخمیوں کی جلد اور مکمل صحت یابی کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرتا ہے اور ہلاک ہونے والے فرد کے اہل خانہ سے تعزیت کا اظہار کرتا ہے۔

“سیاست میں تشدد کی کوئی جگہ نہیں ہے،” سیکرٹری آف اسٹیٹ نے کہا اور تمام فریقوں سے تشدد، ایذا رسانی اور دھمکیوں سے باز رہنے کا مطالبہ کیا۔ سیکریٹری نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ ’’امریکہ ایک جمہوری اور پرامن پاکستان کے لیے پرعزم ہے اور ہم پاکستانی عوام کے ساتھ کھڑے ہیں‘‘۔ کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو سمیت کئی دیگر عالمی رہنماؤں نے سابق وزیراعظم عمران خان پر قاتلانہ حملے کی مذمت کی ہے۔

عمران خان اور ان کے حامیوں پر حملہ مکمل طور پر ناقابل قبول ہے اور میں اس تشدد کی شدید مذمت کرتا ہوں۔ اس کی سیاست، کسی جمہوریت یا ہمارے معاشرے میں کوئی جگہ نہیں ہے۔ ٹروڈو نے اپنے آفیشل ٹویٹر ہینڈل پر لکھا کہ میں عمران اور آج زخمی ہونے والے تمام افراد کی جلد صحت یابی کی خواہش کرتا ہوں۔

سعودی عرب نے بھی گوجرانوالہ میں سابق وزیراعظم پر قاتلانہ حملے کی مذمت کی ہے۔ برطانیہ کے وزیر مملکت زیک گولڈ اسمتھ نے واقعے کی خبروں کو افسوسناک قرار دیتے ہوئے کہا کہ عمران خان مضبوط ہیں اور واپس اپنے پاؤں پر کھڑے ہوں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ’’پاکستان میں وہ قوتیں جو یہ سمجھتے ہیں کہ وہ قتل کے ذریعے اس ملک میں جمہوریت کا گلا گھونٹ سکتے ہیں وہ غلط ہیں اور انہیں غلط دیکھا جائے گا۔‘‘ روئٹرز نے ہندوستانی وزارت خارجہ کے ترجمان ارندم باغچی کے حوالے سے کہا: “یہ ایک پیش رفت ہے جو ابھی ہوئی ہے۔ ہم قریب سے نظر رکھے ہوئے ہیں اور ہم جاری پیش رفت کی نگرانی کرتے رہیں گے۔

معروف عالم دین مفتی مینک نے اس خبر پر صدمے اور دکھ کا اظہار کیا۔ “میں اس کی اچھی اور جلد صحت یابی کی خواہش کرتا ہوں۔ ہر قسم کا تشدد سراسر غلط اور ناقابل قبول ہے، چاہے ہمارے اختلافات کچھ بھی ہوں،‘‘ انہوں نے مزید کہا۔

برطانوی وزیر خارجہ جیمز کلیورلی نے مائیکروبلاگنگ سائٹ پر لکھا، ’’سیاست میں تشدد کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔‘‘ نوبل امن انعام یافتہ ملالہ یوسفزئی نے کہا کہ کسی بھی سیاسی عقیدے یا جماعت کے رہنماؤں پر حملے ہمیشہ غلط ہوتے ہیں۔

“تشدد کبھی بھی قابل قبول احتجاج نہیں ہے۔ عمران خان کی مکمل صحت یابی کے لیے دعا گو ہوں۔ پاکستان میں یورپی یونین (EU) کے وفد نے کہا کہ تشدد کسی بھی شکل کا ہو غلط اور ناقابل قبول ہے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں