20

سپریم کورٹ نے ای سی پی کے فیصلے کے خلاف درخواستیں اگلے ہفتے سنیں۔

اسلام آباد: سپریم کورٹ (ایس سی) اگلے ہفتے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے 25 منحرف ایم پی ایز کو ڈی سیٹ کرنے کے فیصلے کو چیلنج کرنے والی درخواستوں پر سماعت کرے گی، جنہوں نے پنجاب کے وزیراعلیٰ کے انتخاب میں پی ایم ایل این کے حمزہ شہباز کو ووٹ دیا تھا۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں جسٹس سید منصور علی شاہ اور جسٹس عائشہ اے ملک پر مشتمل سپریم کورٹ کا تین رکنی بینچ 9 نومبر کو ای سی پی کے فیصلے کو چیلنج کرنے والی ایک جیسی درخواستوں کی دوبارہ سماعت کرے گا۔

پی پی 288 ڈیرہ غازی خان (پنجاب) سے پارٹی ٹکٹ پر منتخب ہونے والے پی ٹی آئی کے منحرف رکن صوبائی اسمبلی محسن عطا کھوسہ نے ای سی پی کے فیصلے کے خلاف سپریم کورٹ میں اپیل دائر کی تھی۔ اسی طرح دیگر درخواست گزاروں نے بھی ای سی پی کے فیصلے کو سپریم کورٹ میں چیلنج کیا ہے۔ ای سی پی نے 20 مئی کو متفقہ فیصلے کا اعلان کیا تھا، جس میں پنجاب کے وزیراعلیٰ کے انتخاب میں پی ایم ایل این کے حمزہ شہباز کو ووٹ دے کر 25 ناراض ایم پی اے کو ڈی سیٹ کیا گیا تھا۔ اسی طرح چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کا تین رکنی بینچ 8 نومبر کو اسپیکر سندھ اسمبلی آغا سراج درانی کی جانب سے نیب کی جانب سے غیر قانونی اثاثے بنانے کے حوالے سے دائر درخواست ضمانت پر دوبارہ سماعت کرے گا۔ نیب کے مطابق سراج درانی نے غیر قانونی ذرائع سے 1.6 ارب روپے کے اثاثے بنائے جب کہ ان کے خاندان کے پاس مبینہ طور پر اربوں کی جائیدادیں ہیں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں