16

سواتی کی ویڈیو ‘جعلی’، ایف آئی اے نے سینیٹ پینل کو بتایا

اسلام آباد: فیڈرل انویسٹی گیشن اتھارٹی (ایف آئی اے) نے پیر کو سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کو بتایا کہ وزارت داخلہ کی جانب سے انہیں خط لکھے جانے کے بعد انہوں نے سینیٹر اعظم سواتی کی قابل اعتراض ویڈیو کی فرانزک جانچ کرائی لیکن یہ ویڈیو ‘جعلی’ پائی گئی۔ .

ایف آئی اے کی جانب سے یہ ردعمل سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کے چیئرمین سینیٹر محسن عزیز کی جانب سے ایف آئی اے حکام سے پوچھے جانے کے بعد سامنے آیا جنہوں نے سینیٹر اعظم سواتی سے متعلق قابل اعتراض ویڈیو کلپ کی فرانزک جانچ کرانے کا حکم دیا تھا۔ پیر کو سینیٹ باڈی کا اجلاس سینیٹر محسن عزیز کی زیر صدارت ہوا جس میں سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ نے ایف آئی اے کی جانب سے وزیراعظم شہباز شریف اور ان کے صاحبزادے حمزہ شہباز کے خلاف قائم کیے گئے منی لانڈرنگ کیس کی تفصیلات طلب کرلیں۔ گزشتہ حکومت. خیال رہے کہ لاہور کی خصوصی عدالت منی لانڈرنگ کیس میں پہلے ہی وزیراعظم شہباز شریف اور حمزہ شہباز کو بری کر چکی ہے۔

سینیٹر اعظم سواتی کی لیک ہونے والی ویڈیو کا معاملہ اٹھاتے ہوئے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کے چیئرمین سینیٹر محسن عزیز نے اس بات کا اعادہ کیا کہ ویڈیو تک صرف چند لوگوں کی رسائی ہے کیونکہ یہ سوشل میڈیا پر لیک نہیں ہوئی۔ انہوں نے وزارت داخلہ کو ایف آئی اے کو بھیجے گئے خط کے وقت کے حوالے سے تفصیلات فراہم کرنے کی بھی ہدایت کی۔

سینیٹر سیف اللہ ابڑو نے حکام سے مطالبہ کیا کہ سڑکیں بلاک کرنے کے لیے حاصل کیے گئے کنٹینرز پر ہونے والے اخراجات کی تفصیلات فراہم کی جائیں۔ آئی جی پی اسلام آباد ڈاکٹر اکبر ناصر نے جواب دیا کہ کنٹینرز پر اخراجات کی تفصیلات آئندہ اجلاس میں فراہم کی جائیں گی۔ سینیٹر محسن عزیز نے پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان پر قاتلانہ حملے اور سینیٹر اعظم سواتی کی تذلیل کے واقعے کی شدید مذمت کی۔

انہوں نے واضح طور پر کہا کہ اس قسم کے واقعات ملک کو انارکی اور لاقانونیت کی طرف لے جائیں گے۔ انہوں نے مزید کہا کہ “جدید دنیا میں ایسے بزدلانہ واقعات کی کوئی مثال نہیں ملتی۔”

کمیٹی نے ایف آئی اے کے سائبر کرائم ونگ کی جانب سے سینیٹر سیف اللہ سرور خان نیازی پر چھاپے کے واقعے کی تحقیقات کے لیے بنائی گئی ذیلی کمیٹی کی رپورٹ منظور کرلی۔ کمیٹی کے کنوینر سینیٹر کامل علی آغا نے تجویز دی کہ معاملہ استحقاق کمیٹی کو بھجوایا جائے۔

سینیٹر محسن عزیز نے آئی جی پی اسلام آباد سے بھی استفسار کیا کہ مبینہ مجرم صالح محمد کے خلاف انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت ایف آئی آر کیوں درج کی گئی۔ آئی جی پی ڈاکٹر اکبر ناصر خان نے جواب دیا کہ پولیس معاملے کی انکوائری کر رہی ہے اور انکوائری مکمل ہونے کے بعد کمیٹی کو نتائج سے آگاہ کیا جائے گا۔

اجلاس میں سینیٹر سیمی ایزدی، سینیٹر فیصل سلیم رحمان، سینیٹر ولید اقبال، سینیٹر سیف اللہ ابڑو، سینیٹر کامل علی آغا، سینیٹر سید صابر شاہ، آئی جی پی اسلام آباد ڈاکٹر اکبر ناصر خان، وزارت داخلہ کے ایڈیشنل سیکرٹری اسد اسلام مانی اور دیگر نے شرکت کی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں