23

جسٹس فائز عیسیٰ نے روڈ بلاک کرنے پر برہمی کا اظہار کیا۔

سپریم کورٹ کے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ  — فوٹو بشکریہ سپریم کورٹ کی ویب سائٹ/فائل
سپریم کورٹ کے جسٹس قاضی فائز عیسیٰ — فوٹو بشکریہ سپریم کورٹ کی ویب سائٹ/فائل

اسلام آباد: سپریم کورٹ کے سینئر جج جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے وفاقی دارالحکومت میں سرکاری ملازمین کے احتجاج کی جانب سے سڑکوں کی بندش پر برہمی کا اظہار کیا ہے۔

ایک کھلے خط میں جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ عزت نفس اور نقل و حرکت کی آزادی ہر شہری کے بنیادی آئینی حقوق ہیں۔ انہوں نے کہا کہ انہوں نے 8 نومبر کی صبح عدالت جاتے ہوئے ٹریفک کو روکا ہوا دیکھا، استفسار پر انہیں بتایا گیا کہ صدر کو اس راستے سے گزرنا ہے، انہوں نے خط میں لکھا۔

ہزاروں افراد کو لے جانے والی سیکڑوں گاڑیوں کو روک دیا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ لوگ ہسپتالوں میں جا رہے ہوں گے یا اپنا ضروری کام کر رہے ہوں گے۔ یہ دیکھ کر بہت دکھ ہوا کہ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں ہو رہا ہے، انہوں نے ناراضگی ظاہر کی۔

پاکستان کے آئین میں اللہ کی حاکمیت کو سب سے پہلے تسلیم کیا گیا ہے۔ قائداعظم نے کہا تھا کہ ایک ریاست کا مطلب یہ ہے کہ ہم آزاد لوگوں کی طرح زندگی گزار سکیں۔ ایک ایسی ریاست جہاں اسلامی سماجی انصاف کے اصولوں پر آزادانہ عمل کیا جاتا ہے،‘‘ انہوں نے نشاندہی کی۔

انہوں نے خط میں مزید کہا کہ وہ دوسری شام سپریم کورٹ سے معمول کے مطابق پیدل گھر کے لیے روانہ ہوئے تھے جب انہوں نے ایک درجن احتجاجی سرکاری کارکنوں کی طرف سے سڑک کو بند کر کے دیکھا۔

انہوں نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ “سڑک کا دوسرا حصہ دوہری کیریج وے میں تبدیل ہو گیا تھا جہاں سرکاری نمبر پلیٹس والی زیادہ تر گاڑیاں غیر قانونی طور پر پیلی لائنوں پر کھڑی تھیں۔” انہوں نے کہا کہ ایک شہری کی حیثیت سے انہوں نے ڈی آئی جی آپریشنز اور ڈپٹی کمشنر سے دریافت کیا۔ انہوں نے کہا کہ میں نے پوچھا کہ گاڑیاں غیر قانونی طور پر کیوں کھڑی کی گئیں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں