13

ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ: انگلینڈ نے پاکستان کے خلاف فائنل میں ڈرامائی فتح حاصل کر لی



سی این این

اتوار کو میلبورن کرکٹ گراؤنڈ میں انگلینڈ نے 80 ہزار سے زائد شائقین کے سامنے پاکستان کو پانچ وکٹوں سے شکست دے کر سنسنی خیز انداز میں ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کا فائنل جیت لیا۔

بارش کے خطرے کے تحت کھیلی گئی بوندا باندی نے انگلینڈ کی اننگز کو روک دیا لیکن آسمان صاف رہا کیونکہ انگلینڈ کے طلسم بین اسٹوکس نے 49 گیندوں پر ناقابل شکست 52 رنز بنا کر اپنی ٹیم کو فتح سے ہمکنار کیا۔

جیسا کہ اس نے تین سال پہلے کیا تھا جب انگلینڈ نے ون ڈے ورلڈ کپ جیتا تھا، اسٹوکس نے جیتنے والے رنز بنائے اور، ان رنز کے ساتھ، انگلینڈ ایک ہی وقت میں ون ڈے اور T20 ورلڈ کپ منعقد کرنے والی پہلی مردوں کی ٹیم بن گئی۔

“میرے خیال میں فائنل میں جب آپ پیچھا کرتے ہیں تو آپ پہلے کی محنت کو بھول جاتے ہیں۔ میرے خیال میں جس طرح سے ہم نے گیند بازی کی، عادل رشید، سیم کرن، اسی نے ہمیں کھیل جیتا۔

“یہ ایک مشکل وکٹ تھی، آپ کو کبھی ایسا محسوس نہیں ہوا کہ آپ اس میں تھے، اس لیے انہیں محدود کرنے کے لیے بولرز کو اس کا بہت زیادہ کریڈٹ لینا پڑتا ہے۔”

یہ ایک اعصاب شکن کھیل تھا، جس میں انگلینڈ کے گیند بازوں نے پاکستان کو 137-8 تک محدود رکھا اور ان کے پاکستانی ہم منصبوں نے انگلینڈ کے رنز کے تعاقب کو محدود کرنے کے لیے طرح طرح کا جواب دیا۔

انگلینڈ کے بین اسٹوکس (L) اور ساتھی کھلاڑی لیام لیونگ اسٹون فتح حاصل کرنے کے بعد جشن منا رہے ہیں۔

انگلینڈ نے ٹاس جیت کر باؤلنگ کرنے کا فیصلہ کرنے کے بعد پاکستان نے پہلے بیٹنگ کی، لیکن عین باؤلنگ کی بیراج کے تحت اونچا ٹوٹل قائم کرنے کے لیے جدوجہد کی۔

عادل رشید اور سیم کرن، جنہیں بعد میں ٹورنامنٹ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا، نے انگلینڈ کے حملے میں اہم کردار ادا کیا اور راشد نے 12ویں اوور میں صرف 32 رنز پر بابر اعظم کی اہم وکٹ حاصل کی۔

اس دوران کرن نے اپنے چار اوور کے اسپیل کے دوران صرف 12 رنز دیے اور فائنل میں حیران کن اعداد و شمار ریکارڈ کرنے کے لیے تین وکٹیں حاصل کیں، جس کے لیے انھیں میچ کا بہترین کھلاڑی قرار دیا گیا۔

نسبتاً کم مجموعے کا تعاقب کرتے ہوئے، انگلینڈ اس کے باوجود ناکام ہو گیا کیونکہ پاکستان کے سٹار فاسٹ باؤلر شاہین آفریدی نے پہلے ہی اوور میں ایلکس ہیلز کو بولڈ کر دیا۔

جب انگلینڈ کے دوسرے اوپنر فل سالٹ چوتھے اوور میں مڈ وکٹ پر آؤٹ ہوئے تو اسٹوکس کریز کی طرف بڑھے اور اپنی ٹیم کی تقریباً پوری اننگز کو لنگر انداز کر دیا۔

تاہم، پاکستان نے شاندار باؤلنگ کا سلسلہ جاری رکھا، حارث رؤف نے جوس بٹلر کی اہم وکٹ لے کر کھیل کو عملی طور پر برابر رکھا اور ایک تناؤ کا فائنل قائم کیا۔

لیکن انگلینڈ نے آخری چار اوورز میں حملہ کیا اور چھ گیندیں باقی رہ کر فتح سمیٹ لی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں