13

کراچی میں سیکیورٹی گارڈ کی فائرنگ سے کمسن لڑکا جاں بحق ہوگیا۔

پولیس اہلکار کرائم سین ٹیپ کے پیچھے کھڑے ہیں۔  — اے ایف پی/فائل
پولیس اہلکار کرائم سین ٹیپ کے پیچھے کھڑے ہیں۔ — اے ایف پی/فائل

کراچی: کھلونا بیچنے والے آٹھ سالہ بچے کو ہوٹل کے باہر سیکیورٹی گارڈ نے گولی مار کر قتل کردیا اور لاش اتوار کو بوٹ بیسن کے علاقے میں کچرے کے ڈھیر میں پھینک دی گئی۔

لڑکے کی شناخت محمد عمر ولد خادم کے نام سے ہوئی ہے جسے بوٹ بیسن کے علاقے میں بلاول چورنگی کے قریب ایک کھانے گاہ کے باہر گولی مار دی گئی جب کہ لاش کو جیکسن پولیس کی حدود میں ضیاء الدین اسپتال کے قریب کچرے کے ڈھیر میں پھینک دیا گیا۔

ایک سیکیورٹی گارڈ نے مبینہ طور پر ایک بچے پر گولی چلائی جس کے نتیجے میں وہ ہلاک ہوگیا۔ اس کے بعد گارڈ لاش کو کچرے کے ڈھیر پر پھینک کر فرار ہوگیا۔ لاش کو سول اسپتال کراچی پہنچایا گیا۔

پولیس کے مطابق مقتول شیریں جناح کالونی کلفٹن کا رہائشی تھا۔ یہ ابھی تک معلوم نہیں ہو سکا کہ واقعہ دراصل کیسے پیش آیا۔ ابتدائی طور پر بتایا گیا کہ محمد عمر ایک پیزا شاپ کے سامنے بھیک مانگ رہے تھے اور سیکیورٹی گارڈ نے انہیں وہاں بھیک مانگنے سے منع کر دیا۔ چونکہ لڑکے نے وارننگ پر دھیان نہیں دیا، گارڈ نے اس لڑکے پر گولی چلا دی جو زخمی ہو گیا۔ گارڈ اسے اپنے ایک ساتھی کے ساتھ موٹرسائیکل پر بٹھا کر لے جارہا تھا کہ ضیاء الدین اسپتال کے قریب بچہ دم توڑ گیا، جس پر سیکیورٹی گارڈ نے بچے کی لاش کوڑے کے ڈھیر پر پھینک دی اور فرار ہوگیا۔

بعد میں بتایا گیا کہ متوفی لڑکا کھلونے بیچتا تھا۔ مقتول کے والد کا کہنا تھا کہ ان کا بیٹا بھکاری نہیں تھا۔ بوٹ بیسن پولیس نے مقدمہ درج کر کے تفتیش شروع کر دی ہے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں