19

بلوچستان حکومت اور اپوزیشن قانون سازی پر متفق، سپریم کورٹ

ریکوڈک سائٹ۔  دی نیوز/فائل
ریکوڈک سائٹ۔ دی نیوز/فائل

اسلام آباد: وفاقی حکومت نے پیر کے روز سپریم کورٹ (ایس سی) میں جمع کرائے گئے نئے ریکوڈک منصوبے کے لیے قانون سازی کی قرارداد بلوچستان حکومت اور اپوزیشن نے متفقہ طور پر منظور کرلی۔

چیف جسٹس عمر عطا بندیل کی سربراہی میں جسٹس اعجاز الاحسن، جسٹس منیب اختر، جسٹس یحییٰ آفریدی اور جسٹس جمال خان مندوکل پر مشتمل سپریم کورٹ کے 5 رکنی لارجر بینچ نے نئے ریکوڈک منصوبے سے متعلق صدارتی ریفرنس کی سماعت کی۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل عامر رحمان نے اپنے دلائل جاری رکھتے ہوئے کہا کہ ریکوڈک کے نئے منصوبے میں ملک کی سب سے بڑی سرمایہ کاری کی جا رہی ہے اور معاہدے پر شفاف طریقے سے عمل کیا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت بلوچستان اور اپوزیشن نے نئے ریکوڈک منصوبے کے لیے قانون سازی کی قرارداد متفقہ طور پر منظور کرلی۔ تاہم انہوں نے عدالت کو بتایا کہ منرل ایکٹ 1948 کا مسودہ بلوچستان اسمبلی سے منظور ہونا باقی ہے۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ منصوبے میں بدعنوانی کا کوئی امکان نہیں، انہوں نے مزید کہا کہ معاہدے کے ساتھ ساتھ بات چیت بھی کھلے اور شفاف طریقے سے ہو رہی ہے۔ جسٹس منیب اختر نے تاہم لاء افسر سے کہا کہ وہ عدالت کو قائل کریں کہ قانون میں کی گئی ترمیم درست ہے یا نہیں کیونکہ یہ واضح نہیں ہے کہ 1948 کا ایکٹ وفاقی ہے یا صوبائی۔

جسٹس منیب اختر نے ایڈیشنل اٹارنی جنرل سے استفسار کیا کہ ‘اگر 1948 کا ایکٹ وفاقی ہے اور اگر صوبے میں ترمیم کے ذریعے معدنیات کے موضوع کو خارج کر کے خود کو بااختیار بنانا ہے’، جسٹس منیب اختر نے ایڈیشنل اٹارنی جنرل سے کہا کہ قوانین وفاقی ہیں یا صوبائی۔

فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ 1962 کے آئین کے آرٹیکل 31 کے تحت قانون سازی کرنا وفاق کا ہے، آرٹیکل کی شق 2 میں کہا گیا ہے کہ قومی مفاد میں قانون سازی کی جائے۔

اسی طرح جج نے مشاہدہ کیا کہ 1973 کے آئین کا آرٹیکل 268 تقسیم کی بات کرتا ہے کہ کچھ قوانین وفاقی ڈومین میں ہیں۔ 2017 میں کے پی حکومت نے 1948 کے ایکٹ کو منسوخ کرکے اپنا قانون بنایا۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے موقف اختیار کیا کہ 1973 کا آئین منظور ہونے کے بعد قانون وہی ہے لیکن ایک مرکز اور دوسرا صوبوں کو جاتا ہے۔ چیف جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیئے کہ پولیس آرڈر 2002 صوبائی موضوع ہے، اگر اس میں ترمیم کرنی ہے تو صوبہ کرے گا۔

چیف جسٹس نے لا آفیسر سے سوال کیا کہ جب وفاقی قانون موجود ہے تو آپ کو اس عمل کو دیکھنا ہوگا، اسے صوبوں کو کیسے ریفر کیا جاسکتا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ جب معدنی ترقی کی بات آتی ہے تو صوبائی اور وفاق کا تنازعہ ہوتا ہے۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ حکومت بلوچستان صوبے کی دفعات سے متعلق 1948 کے ایکٹ میں ترامیم کرنے جا رہی ہے۔ جسٹس جمال خان مندوخیل نے لاء آفیسر سے پوچھا کہ کیا ریکوڈک معاہدے کی قانون سازی کا اطلاق دوسرے صوبوں پر بھی ہوگا یا نہیں؟

جب صوبائی حکومت ایسی کوششیں کر رہی ہے تو وفاقی حکومت کو بھی وفاقی قانون میں ترامیم کرنی چاہیے تھیں، جج نے لا آفیسر سے استفسار کیا کہ حکومت عدالت کے ذریعے ایسا کیوں کرانا چاہتی ہے۔

لاء آفیسر نے موقف اختیار کیا کہ حکومت کو 15 دسمبر تک ریکوڈک معاہدے کو حتمی شکل دینا ہے، اس دوران چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ وہ اس کیس کو جلد از جلد نمٹانا چاہتے ہیں تاکہ رائے دینے کے لیے وقت مل سکے، صدارتی ریفرنس میں طلب کیا گیا تھا۔ . بعد ازاں عدالت نے کیس کی سماعت آج (منگل) ساڑھے گیارہ بجے تک ملتوی کر دی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں