19

الیکشن کمیشن نے سندھ میں بلدیاتی انتخابات کرانے سے متعلق فیصلہ محفوظ کرلیا

اسلام آباد: الیکشن کمیشن آف پاکستان نے اسٹیک ہولڈرز کے دلائل سننے کے بعد منگل کو کراچی میں بار بار تاخیر سے ہونے والے بلدیاتی انتخابات کے انعقاد سے متعلق فیصلہ محفوظ کرلیا۔

اہم سیاسی جماعتوں کے نمائندوں اور حکومت سندھ نے میگا سٹی میں زیر التوا انتخابی مشق کے حق اور خلاف اپنے دلائل چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ کی سربراہی میں الیکشن کمیشن کے پانچ رکنی بینچ کے سامنے پیش کئے۔ پی ٹی آئی کی نمائندگی اس کے وکیل نے کی، ایم کیو ایم پی کی جانب سے وسیم اختر، جماعت اسلامی کی جانب سے حافظ نعیم الرحمان اور پیپلزپارٹی کی جانب سے مرتضیٰ وہاب پیش ہوئے۔ چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ بلدیاتی انتخابات کے دوران سیکیورٹی کے لیے پنجاب سے رینجرز یا دیگر قانون نافذ کرنے والے ادارے سندھ میں تعینات کیے جا سکتے ہیں۔

ممبر الیکشن کمیشن اکرام اللہ خان نے استفسار کیا کہ لوکل گورنمنٹ قانون کو کس قانون کے تحت تبدیل کیا گیا؟ اسپیشل سیکریٹری ظفر اقبال نے کہا کہ سندھ ہائی کورٹ نے متعلقہ سماعت پر فیصلہ محفوظ کرلیا ہے۔ جوائنٹ سیکرٹری وزارت داخلہ نے جواب دیا کہ اس وقت سول آرمڈ فورسز سیلاب اور امن و امان کی صورتحال کے باعث بلدیاتی انتخابات کے لیے اہلکار تعینات نہیں کر سکتے۔ اس پر چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ انہیں آئین کے ان آرٹیکلز کا کیا کرنا چاہیے جو بلدیاتی انتخابات کے انعقاد کا حکم دیتے ہیں۔ ایڈمنسٹریٹر کراچی مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ سندھ میں بلدیاتی انتخابات کا پہلا مرحلہ مکمل ہوچکا ہے لیکن کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے لیے نشستوں کی تعداد بہت زیادہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس مقصد کے لیے 4,900 پولنگ اسٹیشنز قائم کیے جانے ہیں۔ تاہم وہ کراچی میں دو مرحلوں میں بلدیاتی انتخابات کرانے کے لیے تیار ہیں۔ ایڈمنسٹریٹر کراچی نے نشاندہی کی کہ سیلاب کے باعث بلدیاتی انتخابات دو بار ملتوی ہوئے جب کہ 25 سے 30 فیصد مقامات پر پانی کھڑا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سندھ حکومت بلدیاتی انتخابات کرانے کے لیے ہمیشہ تیار ہے لیکن سیکیورٹی ضروری ہے۔

ای سی پی کے اسپیشل سیکریٹری ظفر اقبال نے کہا کہ الیکشن کمیشن 24 جولائی کو بلدیاتی انتخابات کرانا چاہتا تھا لیکن صوبائی حکومت کی درخواست پر کراچی اور حیدرآباد میں انتخابات دو بار ملتوی کیے گئے جب کہ وزارت داخلہ نے اکتوبر کو نیم فوجی دستوں کی تعیناتی سے معذرت بھی کی۔ 18. انہوں نے مزید کہا کہ سیلاب کی وجہ سے سندھ حکومت کی درخواست پر یکم نومبر کو کراچی میں بلدیاتی انتخابات ملتوی کر دیے گئے تھے۔

ای سی پی کے رکن اکرام اللہ خان نے کہا کہ صوبائی حکومت کسی بھی صورت میں انتخابات ملتوی کرنے کی منظوری نہیں دے سکتی۔ اس پر مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ سندھ کے قانون کے مطابق بلدیاتی انتخابات کا اعلان سندھ حکومت کا اختیار ہے اور صوبائی حکومت الیکشن کمیشن کی مشاورت سے بلدیاتی انتخابات کا اعلان کرے گی۔ ای سی پی کے ایک اور رکن نثار درانی نے کہا کہ بلدیاتی انتخابات ملتوی کرنا آئین کی خلاف ورزی نہیں ہے۔ الیکشن کمیشن کے رکن بابر حسن بھروانہ نے سوال کیا کہ سیکیورٹی فورسز کی فراہمی کے علاوہ انتخابات کے انعقاد میں کیا مشکلات ہیں۔

چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ الیکشن کمیشن کو 120 دن میں بلدیاتی انتخابات کروانے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومتیں کبھی انتخابات نہیں کروانا چاہتیں جبکہ الیکشن کمیشن نے مشکل حالات میں بلدیاتی انتخابات کرائے ہیں۔ چیف الیکشن کمشنر نے اسلام آباد ہائی کورٹ کے حکم کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ بلدیاتی انتخابات پرانے قانون پر بھی ہو سکتے ہیں۔

اس پر مرتضیٰ وہاب نے کہا کہ معاملات صوبائی حکومت کے اختیار سے باہر ہیں۔ چیف الیکشن کمشنر نے یہ بھی نشاندہی کی کہ گزشتہ اجلاس میں سندھ حکومت کے نقطہ نظر میں فرق ہے اور آج اس سے قبل سندھ ہائی کورٹ میں اس نے مختلف موقف اختیار کیا تھا اور انتخابات کے لیے تیاری کا اظہار کیا تھا۔

کراچی کے ایڈمنسٹریٹر نے کہا کہ وہ نہیں چاہتے کہ بلدیاتی انتخابات کے انعقاد پر کوئی سوال اٹھے، کراچی میں انتخابات مزید 90 دن کے لیے ملتوی کرنے کی درخواست کی۔

سماعت کے دوران چیف سیکریٹری سندھ نے کہا کہ کورنگی ضمنی انتخابات میں امن و امان کی وجہ سے مشکلات سامنے آئیں۔ انہوں نے موقف اختیار کیا کہ کراچی میں 17 ہزار اہلکاروں کی تعیناتی کی ضرورت ہے جو سیلاب اور امن و امان کی وجہ سے ممکن نہیں۔ انہوں نے مؤقف اختیار کیا کہ کراچی میں انتخابات کے لیے مزید وقت دیا جائے تو بہتر تیاریاں کی جاسکتی ہیں۔ انہوں نے بلدیاتی انتخابات بھی ملتوی کرنے کی سفارش کرتے ہوئے کہا کہ ڈیڑھ ماہ میں سیلاب کی صورتحال بہتر ہو سکتی ہے۔

سماعت کے دوران ایم کیو ایم پی کے رہنما وسیم اختر نے کہا کہ دو سال گزرنے کے باوجود کراچی میں بلدیاتی انتخابات نہیں ہوسکے جب کہ مردم شماری میں کراچی کی نصف آبادی پہلے ہی کم کردی گئی۔

پی ٹی آئی کے نمائندے شہاب نے الزام لگایا کہ حکومت سندھ کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے انعقاد میں سنجیدہ نہیں ہے اور اس عمل میں گزشتہ 10 ماہ سے تاخیر ہوئی ہے۔ انہوں نے انتخابات کی تاریخ کا اعلان کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ انہیں 90 دن کے بعد انتخابات کرانے پر کوئی اعتراض نہیں ہے۔

جماعت اسلامی کے حافظ نعیم الرحمن نے کہا کہ سندھ حکومت کے 90 دن ایسے ہوں گے جیسے سابق آمر جنرل ضیاء الحق نے انتخابات کرانے کا وعدہ کیا تھا، جو کبھی نہیں کرائے گئے۔ انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت بھی انتخابات نہیں کروانا چاہتی۔ چیف الیکشن کمشنر نے کہا کہ انتخابات ہر صورت ہوں گے اور الیکشن کمیشن زمینی حقائق کو مدنظر رکھ کر حکم دے گا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں