16

مولانا اسد نے روس کے ساتھ تاریخی معاہدہ کیا۔

اسلام آباد: ماسکو کے اپنے تاریخی دورے کے دوران وفاقی وزیر برائے مواصلات و پوسٹل سروسز مولانا اسعد محمود نے روسی فیڈریشن کے ساتھ ایک تاریخی معاہدے پر دستخط کیے ہیں جو پاکستان اور روس کے درمیان مسافروں کی نقل و حرکت اور سامان کی تجارت کو آسان بنائے گا۔

مولانا اسد جو جے یو آئی ایف کے مرکزی رہنما بھی ہیں، نے اپنے پہلے دورے میں اپنے روسی میزبانوں سے انتہائی مفید گفتگو کی۔

اعلیٰ سطح کے سفارتی ذرائع نے جمعرات کو یہاں دی نیوز کو بتایا کہ

یہ دورہ اہم ثابت ہوگا کیونکہ یہ دونوں ممالک کے درمیان سیاسی اور مالی تعلقات کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کرے گا۔

وزیر مملکت اگلے ہفتے کے اوائل میں وطن واپس آئیں گے اور اپنے دورے کی رپورٹ وزیراعظم کو پیش کریں گے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ وفاقی وزیر خزانہ اور ریونیو سینیٹر محمد اسحاق ڈار نے اشارہ دیا ہے کہ پاکستان روس سے تیل خریدے گا اور اسلام آباد اس بارے میں واشنگٹن کو پہلے ہی آگاہ کر چکا ہے۔

انہوں نے گزشتہ اتوار کو اشارہ کیا کہ پاکستان نے روس سے تیل کی خریداری پر امریکہ کی مخالفت پر قابو پالیا اور اس بات پر زور دیا کہ اسلام آباد ماسکو کے ساتھ ایندھن کی درآمد کا معاہدہ نئی دہلی کی طرف سے متفقہ شرائط پر کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔ جمعرات کو یہاں باضابطہ طور پر بتایا گیا ہے کہ پاکستان اور روس کے درمیان روڈ ٹرانسپورٹ کے معاہدے پر دستخط کیے گئے ہیں تاکہ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی اور عوامی رابطوں کو فروغ دینے کی راہ ہموار کی جا سکے۔

ایک پریس ریلیز کے مطابق مولانا اسد محمود نے روس کے وزیر ٹرانسپورٹ ویتالی سیویلیف سے اہم ملاقات کی جس میں بین الاقوامی روڈ ٹرانسپورٹ معاہدے پر دستخط کیے گئے۔ اس موقع پر وزیر نے کہا کہ روس وسائل سے مالا مال اور ٹیکنالوجی کے لحاظ سے ترقی یافتہ ملک ہے۔ “یہ معاہدہ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی اور عوامی تعلقات قائم کرنے کی راہ ہموار کرے گا۔ یہ معاہدہ دونوں ممالک کے درمیان مسافروں کی نقل و حرکت اور سامان کی تجارت کے لیے ایک فریم ورک فراہم کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ اس سے پاکستان اور روس کے درمیان سفر اور سامان کی ترسیل آسان ہو جائے گی۔ پاکستان روس کو پھل، ملبوسات، آلات جراحی، چمڑے اور زرعی مصنوعات برآمد کرتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دوسری جانب روس دنیا میں ایل این جی برآمد کرنے والا چوتھا بڑا ملک ہے اور اس نے پاکستان کو دیگر ممالک کے مقابلے میں کم قیمت پر ایل این جی فروخت کرنے کی پیشکش کی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان اور روس کے درمیان یہ معاہدہ وقت کی ضرورت ہے۔ واضح رہے کہ اس معاہدے کے تحت ٹرانسپورٹ آپریشنز روڈ ٹرانسپورٹ پرمٹ کی بنیاد پر کیے جائیں گے جو دونوں ممالک کے مجاز حکام ٹرانسپورٹرز کو مفت فراہم کریں گے۔

آپریشنل قواعد و ضوابط کو ہموار کرنے اور اس کے نفاذ سے متعلق مسائل کا جائزہ لینے کے لیے جلد ہی ایک مشترکہ ورکنگ گروپ تشکیل دیا جائے گا۔ روس یوکرین جنگ سے متعلق سیاسی مسائل کے حل کے بعد مستقبل میں خطے میں امن بحال ہو گا اور کاروباری سرگرمیاں دوبارہ شروع ہو جائیں گی۔

ذرائع نے یاد دلایا کہ اسلام آباد اور کریملن نے پہلے معاہدے پر دستخط کیے ہیں جس سے دونوں ممالک کے درمیان معاشی تعاون کو مزید فروغ ملے گا۔ معاہدے کی اہمیت کو کسی بھی طریقے سے کم نہیں کیا جا سکتا کیونکہ اس سے نہ صرف خطے میں رابطے بڑھیں گے بلکہ دونوں ممالک کو مختلف شعبوں میں مل کر کام کرنے کی نئی راہیں تلاش کرنے میں بھی مدد ملے گی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں