21

پی اے سی نے سوال کیا کہ اس سال سرکاری خرچ پر کس کو حج پر بھیجا گیا؟

نور عالم خان 17 نومبر 2022 کو پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کر رہے ہیں۔ Twitter/NA_Committees
نور عالم خان 17 نومبر 2022 کو پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے اجلاس کی صدارت کر رہے ہیں۔ Twitter/NA_Committees

اسلام آباد: پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے حج سیزن میں سعودی عرب بھیجے گئے خدام الحج کی تفصیلات اور وفاقی وزیر، سیکریٹری اور دیگر افسران کے ساتھ مفت حج پر جانے والوں کی فہرست طلب کرلی۔

علاوہ ازیں مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں پاکستان کی عمارتوں کے انتظامی امور کے معاملے پر کمیٹی کی طرف سے طلب کیے جانے کے باوجود سیکرٹری خارجہ کی اجلاس سے غیر حاضری پر سخت برہمی کا اظہار کیا۔

جمعرات کو پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کا اجلاس چیئرمین نور عالم خان کی زیر صدارت ہوا جس میں وزارت مذہبی امور سے متعلق مالی سال 20-2019 کے آڈٹ پیراز کا جائزہ لیا گیا۔

نور عالم خان نے کہا کہ مفت حج کی اجازت نہیں دیں گے اور اگر کسی وزیر، سیکرٹری یا ایم این اے کا خاندان مفت حج پر جائے گا تو رقم واپس لے کر حکومت پاکستان کے خزانے میں جمع کرائی جائے گی۔

عالم خان نے متعلقہ وزارت اور اے جی پی آر کو ہدایت کی کہ وہ تمام تفصیلات 15 دن کے اندر فراہم کریں جس میں وفاقی وزیر، سیکرٹری اور دیگر افسران کے ساتھ مفت حج پر جانے والوں کی فہرست بھی شامل ہے۔ سیکرٹری مذہبی امور آفتاب درانی نے بتایا کہ فہرست 30 ستمبر کو کمیٹی کو بھجوا دی گئی ہے، اس پر نور عالم نے قومی اسمبلی سیکرٹریٹ کے پی اے سی ونگ کے عملے کی سرزنش کرتے ہوئے کہا کہ اگر کوئی رپورٹ آئے تو ارکان کو بھجوائی جائے۔ فوری طور پر

وزارت مذہبی امور کے حکام نے بتایا کہ وزارت نے 664 خدام الحجاج کو سعودی عرب بھیجا ہے۔ نور عالم نے استفسار کیا کہ کیا ان خدام الحجاج سے کوئی رقم ملی؟ سیکرٹری وزارت مذہبی امور نے کہا کہ تمام خادمین مفت میں سعودی عرب جاتے ہیں۔

نور عالم نے کہا کہ یہ ایک غریب ملک ہے لیکن سب کو سرکاری خرچ پر جگہ دینا چاہتا تھا۔ انہوں نے کہا کہ کمیٹی کو خدام الحجاج اور مددگار بھیجنے پر ہونے والے اخراجات سے بھی آگاہ کیا جائے۔

کمیٹی میں نواب آف بہاولپور کی سعودی عرب میں جائیداد کا معاملہ بھی زیر غور آیا۔ سیکرٹری مذہبی امور نے کمیٹی کو بتایا کہ نواب آف بہاولپور کی مکہ مکرمہ میں پانچ اور مدینہ منورہ میں ایک جائیداد ہے۔ 1906 سے 1966 تک یہ عمارتیں مینیجرز کے زیر انتظام تھیں۔

انہوں نے کہا کہ ایک سعودی مینیجر کے پوتے نے ایک عمارت پر اور آدھی دوسری عمارت پر دعویٰ دائر کیا، جو اس منیجر کے پوتے کو دیا گیا تھا۔ اس فیصلے کے خلاف سعودی عرب میں کسی نے اپیل دائر نہیں کی اور پاکستانی سفارت خانے کی تین عمارتوں پر قبضہ کر لیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ ترقیاتی منصوبوں کی وجہ سے دو عمارتیں گرائی گئیں اور اس سے حاصل ہونے والی رقم شیئرز خریدنے میں استعمال کی گئی۔

پی اے سی نے سیکرٹری خارجہ کو سعودی عرب میں عمارتوں کے انتظامی امور پر وضاحت کے لیے طلب کیا اور انہیں فوری اجلاس میں شرکت کی ہدایت کی۔ نور عالم خان نے کہا کہ سیکرٹری خارجہ دستیاب نہ ہوں تو ایڈیشنل سیکرٹری یا ڈی جی حاضر ہوں۔

سیکرٹری مذہبی امور نے بتایا کہ مدینہ میں پاکستان ہاؤس کی عمارت کو سعودی حکام نے 1988 میں حرم کی توسیع کے لیے گرا دیا تھا۔ انہوں نے کمیٹی کو بتایا کہ اس رقم سے 19 ملین ریال کی دو عمارتیں خریدی گئی ہیں جبکہ مدینہ میں موجودہ پاکستان ہاؤس بھی توسیعی منصوبے سے متاثر ہوا ہے۔ انہوں نے کمیٹی کو بتایا کہ “موجودہ پاکستان ہاؤس کو بھی گرا دیا جائے گا۔”

سیکرٹری مذہبی امور نے بتایا کہ پاکستان کے پاس سعودی انڈومنٹ فنڈ میں 9.7 ملین سعودی ریال ہیں اور وہ اس رقم سے مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ میں عمارتیں خریدنا چاہتے ہیں۔ سعودی قوانین کے مطابق کوئی دوسرا ملک یا غیر ملکی شہری مملکت میں زمین کا مالک نہیں ہو سکتا۔ سعودی قوانین بہت سخت ہیں حتیٰ کہ سعودی عرب میں عمارت کو صرف ایک سال کے لیے کرائے پر لینے کی اجازت ہے۔

کمیٹی کو مزید بتایا گیا کہ عمارتوں کی خریداری کے معاملے پر وزیراعظم سے بات کی جائے گی۔

نور عالم خان نے سوال کیا کہ سیکرٹری خارجہ اجلاس میں کیوں نہیں آئے؟ ایڈیشنل سیکرٹری خارجہ نے بتایا کہ سیکرٹری خارجہ وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری کو لینے گئے تھے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں