17

پاکستان میں خناق کی وبا نے 39 بچوں کی جان لی۔ antitoxin اس کے راستے پر

ایک ہیلتھ ورکر دوا سے ڈسپوزایبل انجکشن بھرتا ہے۔— اے ایف پی/فائل
ایک ہیلتھ ورکر دوا سے ڈسپوزایبل انجکشن بھرتا ہے۔— اے ایف پی/فائل

اسلام آباد: خناق کی وبا، ایک مہلک متعدی بیماری جو سانس لینے میں شدید دشواری کا باعث بنتی ہے، ملک بھر میں کم از کم 39 بچوں کی جان لے چکی ہے، جس نے صحت کی دیکھ بھال کرنے والے حکام کو بین الاقوامی صحت کے اداروں سے مدد کی تلاش میں بھیجا۔

ملک میں حفاظتی ٹیکوں کی معمول کی شرح میں اضافے کے دعوؤں کے باوجود، کم از کم 39 بچے اور نوعمر ویکسین سے بچاؤ کی بیماری کا شکار ہو گئے، جس کا دنیا کے بیشتر حصوں سے صفایا کر دیا گیا تھا۔

پاکستان کے مطالبے پر ردعمل دیتے ہوئے عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) اور اقوام متحدہ کے بین الاقوامی چلڈرن ایمرجنسی فنڈ (یونیسیف) نے حکام کو اینٹی ڈیفتھیریا سیرم یا اینٹی ٹاکسن فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

حکام کا کہنا تھا کہ یونیسیف اینٹی ڈیفتھیریا سیرم فراہم کرنے کے انتظامات کر رہا ہے جبکہ ڈبلیو ایچ او بھی اس سلسلے میں کوششیں کر رہا ہے۔

ماہرین اطفال کا کہنا ہے کہ خناق کی وباء پینٹا ویلنٹ ویکسین اور اینٹی ڈیفتھیریا سیرم کی عدم دستیابی کی وجہ سے ہوئی ہے۔

حکام کے مطابق، پوری دنیا میں اس بیماری کے خاتمے کی وجہ سے اینٹی ڈیفتھیریا سیرم کی پیداوار میں بڑی حد تک کمی آئی ہے۔

“خناق ایک مہلک بیکٹیریل انفیکشن ہے، ایک ویکسین سے بچاؤ کی بیماری ہے، تاہم، پنجاب، سندھ، خیبرپختونخوا اور بلوچستان سے ہر ہفتے خناق کے درجنوں کیسز رپورٹ ہو رہے ہیں جبکہ آزاد جموں و کشمیر سے بھی مشتبہ کیسز رپورٹ ہو رہے ہیں”۔ نیشنل ہیلتھ سروسز، ریگولیشنز اینڈ کوآرڈینیشن (NHS,R&C) کے اہلکار نے کہا۔

متعدی امراض کے ماہرین اور اطفال کے ماہرین اس اضافے کے لیے ناقص وفاقی اور صوبائی ویکسی نیشن منصوبوں کو مورد الزام ٹھہرا رہے ہیں، اور وفاقی اور صوبائی توسیعی پروگرام برائے امیونائزیشن (EPI) کی فوری بحالی کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

ماہرین کے مطابق خناق ایک سنگین انفیکشن ہے جو ‘کورین بیکٹیریم ڈفتھیریا’ نامی بیکٹیریا کے تناؤ سے ہوتا ہے جو زہریلے مواد بناتے ہیں۔ یہ سانس لینے، دل کی تال کے مسائل، اور یہاں تک کہ موت کا باعث بن سکتا ہے۔ پاکستانی بچوں کو ایک ویکسین دی جاتی ہے، پانچ ویکسین کا مجموعہ جو پانچ بڑی بیماریوں سے بچاتا ہے: خناق، تشنج، کالی کھانسی، ہیپاٹائٹس بی اور ہیمو فیلس انفلوئنزا ٹائپ بی (DTP-hepB-Hib)۔

Source link

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں