11

ڈیفالٹ کا کوئی خطرہ نہیں، عائشہ غوث پاشا نے این اے کو بتایا

وزیر مملکت برائے خزانہ و محصولات عائشہ غوث پاشا۔  — Twitter/@AishaGPasha
وزیر مملکت برائے خزانہ و محصولات عائشہ غوث پاشا۔ — Twitter/@AishaGPasha

اسلام آباد: وزیر مملکت برائے خزانہ عائشہ غوث پاشا نے جمعہ کو قومی اسمبلی کو بتایا کہ ملک کو ڈیفالٹ کا کوئی خطرہ نہیں ہے۔

پاشا نے وقفہ سوالات کے دوران ایوان کو بتایا کہ مخلوط حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد ملک کو مشکل صورتحال کا سامنا تھا کیونکہ آئی ایم ایف پروگرام معطل ہو چکا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے آئی ایم ایف پروگرام کو بحال کیا ہے جبکہ برآمدات میں بہتری دیکھی جا رہی ہے اور ترسیلات زر بھی ملک میں داخل ہو رہی ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ اصلاحات کے نتیجے میں سرمایہ کار ملک میں سرمایہ کاری میں دلچسپی ظاہر کر رہے ہیں۔ عالمی برادری نے سیلاب کے بعد بحالی میں پاکستان کی مدد کرنے کا ارادہ ظاہر کیا تھا۔ ممکنہ ٹیکس دہندگان کو ٹیکس نیٹ میں لا کر رسمی معیشت کا حجم بڑھانے کے لیے پالیسیاں بنائی جا رہی تھیں۔

وزیر نے کہا کہ درآمد سے لے کر خوردہ تک پوری سپلائی چین کو ایف بی آر سسٹم کے ساتھ مربوط کیا جا رہا ہے تاکہ دستاویزات کو یقینی بنایا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ذمہ داری ہر پاکستانی پر عائد ہوتی ہے کہ وہ صحت، تعلیم، ٹرانسپورٹ، دفاع اور دیگر شعبوں کے لیے فنڈز فراہم کرنے کے لیے ٹیکس ادا کرے۔ موجودہ قیمتوں میں اضافے کے پیچھے اندرونی اور بیرونی دونوں عوامل کارفرما ہیں اور اسے روکنا حکومت کی ترجیح ہے۔

ایک سوال کے جواب میں وزیر تجارت نوید قمر نے کہا کہ ایران پر امریکی پابندیوں کی وجہ سے ایران کے ساتھ مکمل تجارت نہیں ہو سکتی۔ امریکی پابندیاں ہٹائے جانے کے بعد دونوں ممالک کے درمیان تجارت کو مضبوط بنانے کے لیے ایران کے ساتھ مذاکرات ہوں گے۔

جے یو آئی ایف کے رکن پارلیمنٹ جمال الدین نے سوال کیا کہ جب بھارت اور ایران تجارتی سرگرمیاں کر رہے تھے تو پاکستان اور ایران کے درمیان تجارت شروع کرنے میں کیا رکاوٹیں تھیں۔ قمر نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کے ساتھ پاکستان کی تجارت میں اضافہ ہوا ہے اور حکومت اسے مزید بڑھانا چاہتی ہے۔

وزیر پارلیمانی امور مرتضیٰ جاوید عباسی نے کہا کہ پنجاب اور گلگت بلتستان میں نقصانات کا تخمینہ مکمل کر لیا گیا ہے جبکہ دیگر صوبوں کا سروے رواں ماہ کے آخر تک مکمل کر لیا جائے گا۔ سندھ اور بلوچستان میں نقصانات کا تخمینہ مکمل نہیں ہوسکا کیونکہ بعض علاقوں میں پانی کھڑا ہے۔ انہیں یقین تھا کہ نقصان کے تخمینے کا ڈیٹا اگلے ماہ کے پہلے ہفتے تک دستیاب ہو جائے گا۔

بعد ازاں، قومی اسمبلی نے 1973 کے آئین میں درج تمام بچوں کے حقوق کے تحفظ اور زیادہ مساوی اور جامع پاکستان کے لیے اقوام متحدہ کے بچوں کے حقوق کے کنونشن کے تحت ایک قرارداد منظور کی۔ مہناز اکبر عزیز کی طرف سے پیش کی گئی قرارداد میں ہر بچے کے ساتھ ساتھ ماؤں کے حقوق کو تسلیم کیا گیا اور تمام بچوں کو بہترین دستیاب ابتدائی دیکھ بھال اور محفوظ ماحول کی فراہمی کی ضرورت پر زور دیا گیا۔

قرارداد میں بچوں کی اسمگلنگ، بدسلوکی، فحش نگاری اور جسم فروشی کے بے رحمانہ طرز عمل کی مذمت کی گئی اور ان غیر انسانی جرائم کو روکنے کے لیے قانون سازی اور اس پر عمل درآمد کی سفارش کی گئی۔ اس نے آئین میں درج بچوں اور بندھوا مزدوری کے خطرے سے نمٹنے کی بھی توثیق کی۔ قرارداد میں معاشرے میں امن اور ہم آہنگی کے قیام کے لیے اہم معاملات میں بچوں کی آوازوں کو شامل کرنے کا عہد کیا گیا۔ اس نے سب کے لیے یکساں مواقع پیدا کرنے کے عزم کا اظہار کیا تاکہ معیاری تعلیم کو حقیقی معنوں میں حاصل کیا جا سکے۔ ایوان نے بچوں اور ماؤں میں غذائیت کی کمی کو کم کرنے اور پاکستان کے مستقبل کے تحفظ کے لیے بچوں میں رکی ہوئی نشوونما کے خطرے سے نمٹنے کے لیے وقت اور محنت لگانے کا عزم کیا۔

ایوان نے قرار داد کے ذریعے کہا کہ ایک بچہ جو جسمانی، ذہنی یا سماجی طور پر معذور ہو اسے اس کی حالت کے مطابق خصوصی علاج، تعلیم اور دیکھ بھال فراہم کی جائے گی۔ قرارداد میں بچوں کی شہری مصروفیات کے لیے مزید مواقع فراہم کرنے کا عہد کیا گیا کیونکہ ان کی شمولیت جمہوریت کے مستقبل کے لیے اہم ہے۔ اس نے بچوں پر مرکوز قانون سازی، وکالت اور نگرانی کے لیے بچوں کے حقوق پر پارلیمانی کاکس کو مضبوط بنانے کا اعادہ کیا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں