14

26 نومبر کا اعلان کیا ہو گا؟

اسلام آباد: پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان کے اسلام آباد سے راولپنڈی تک لانگ مارچ کی منزل کی تبدیلی نے نئے سوالات کھڑے کر دیے ہیں۔ مثال کے طور پر، کیا 21 نومبر سے شروع ہونے والا ہفتہ 29 نومبر کو ہونے والے واقعات کے تناظر میں فیصلہ کن ہوگا؟ لانگ مارچ اور دھرنا راولپنڈی تک محدود رہے گا یا شرکاء اسلام آباد تک رسائی حاصل کرنے میں کامیاب ہو جائیں گے۔

اس کے علاوہ اور بھی اہم سوالات ہیں۔ عمران خان 26 نومبر کو کیا اعلان کریں گے اور کیا فیض آباد میں 126 دن کے دھرنے کی تلخ تاریخ کو دہرانے کی اجازت ہوگی؟

یہ اور اس طرح کے مزید سوالات نے نہ صرف سرکاری افسران اور ذمہ دار عہدوں پر بیٹھے افراد بلکہ ہزاروں عام شہریوں کے لیے بھی پریشانیاں پیدا کر دی ہیں، جنہیں اپنی ملازمتوں، کاروبار اور دیگر اہم کاموں کے لیے تقریباً روزانہ کی بنیاد پر راولپنڈی اور اسلام آباد کے درمیان سفر کرنا پڑتا ہے۔ کام سکولوں، کالجوں اور یونیورسٹیوں کے طلباء سمیت مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد بھی بری طرح سے متاثر ہونے والوں میں شامل ہوں گے۔

اطلاعات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے لیے تیار کیا گیا خصوصی کنٹینر روات کے قریب محفوظ مقام پر کھڑا کر دیا گیا ہے۔ خان کے اندیشوں اور ان دعووں کے پیش نظر اسے مزید مضبوط کیا گیا ہے کہ ان پر ایک اور حملے کا خطرہ تھا، اور اس کے لیے منصوبہ بندی جاری تھی۔ کنٹینر کی سیکیورٹی کے لیے پنجاب پولیس کو تعینات کیا گیا ہے۔

پلان کے مطابق عمران خان کنٹینر کے اوپر اپنی پارٹی کے کارکنوں کی قیادت کچہری چوک راولپنڈی تک کریں گے۔ وہ وہاں خطاب کرتے اور پھر مری روڈ سے ہوتے ہوئے فیض آباد کی طرف روانہ ہوتے۔ عمران خان کچہری چوک پر اپنے حامیوں سے خطاب کریں گے، جہاں سے چھاؤنی کا علاقہ شروع ہوتا ہے، جس میں فوجی دفاتر واقع ہیں۔

پروگرام نہ بدلا تو 26 نومبر سے فیض آباد پر دھرنا دیا جائے گا۔ عمران نے اعلان کیا ہے کہ آرمی چیف کے عہدے کے لیے ان کا کوئی فیورٹ نہیں ہے لیکن سوال یہ ہے کہ وہ 29 نومبر کو نئے آرمی چیف کی تقرری سے صرف تین روز قبل راولپنڈی میں اپنی طاقت کیوں دکھا رہے ہیں۔

اگر ان کا واحد مطالبہ قبل از وقت انتخابات ہوتا تو دھرنا 29 نومبر کے بعد ہو سکتا تھا۔عمران خان کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ نواز شریف اپنی مرضی کا نیا آرمی چیف لگانا چاہتے ہیں، تاکہ انہیں نااہل کیا جا سکے۔ تاہم یہ واضح نہیں کہ ایک آرمی چیف ان کی نااہلی میں کیا کردار ادا کر سکتا ہے۔ اسی لیے وزیر دفاع خواجہ آصف نے ٹویٹ کیا کہ عمران نہیں جانتے کہ وہ کس پر کیا الزامات لگا رہے ہیں۔

پی ٹی آئی کے کچھ ذرائع اور سوشل میڈیا پر ہمدرد اب بھی سمجھتے ہیں کہ جنرل باجوہ کو ایک اور توسیع دی جا سکتی ہے جس کی عمران خان انہیں پہلے ہی پیشکش کر چکے ہیں۔ تاہم فوج کے ترجمان نے کئی بار اس تاثر کو رد کیا۔

آرمی چیف سول ڈریس میں تقریبات میں شرکت کر کے ریٹائرمنٹ کا علامتی پیغام دے رہے ہیں۔ لیکن غیر یقینی صورتحال اب بھی برقرار ہے۔ کوئی نہیں جانتا کہ پی ٹی آئی کا دھرنا کتنے دن جاری رہے گا اور عمران کے اہم مطالبات کیا ہوں گے؟ انہوں نے ڈی چوک پر اپنے 126 دن کے دھرنے میں امپائر کی انگلی اٹھانے کا انتظار کیا اور یہ جاننا دلچسپ ہوگا کہ اگر یہ احتجاج سردیوں میں زیادہ دیر تک جاری رہا تو ان کا نعرہ کیا ہوگا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں