10

سینیٹ پینل نے بتایا کہ بجلی کے بلوں پر ٹیکس 40 سے 58 فیصد کے درمیان ہے۔

ایک غیر ملکی کرنسی ڈیلر 19 مئی 2022 کو کراچی، پاکستان میں ایک دکان پر امریکی ڈالر گن رہا ہے۔ — اے ایف پی/فائل
ایک غیر ملکی کرنسی ڈیلر 19 مئی 2022 کو کراچی، پاکستان میں ایک دکان پر امریکی ڈالر گن رہا ہے۔ — اے ایف پی/فائل

اسلام آباد: سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ اور محصولات کو بدھ کے روز بتایا گیا کہ بجلی کے بلوں پر ٹیکس کی موثر شرح کمرشل کنکشن پر 40 سے 58 فیصد فی یونٹ اور گھریلو صارفین پر 29 فیصد کے درمیان ہے۔

کمیٹی کا اجلاس سینیٹر سلیم مانڈوی والا کی سربراہی میں پارلیمنٹ ہاؤس میں ہوا جس میں چیئرمین نے ایف بی آر حکام سے بجلی کے بلوں پر وصول کیے جانے والے ٹیکسوں کی درست مقدار کے بارے میں استفسار کیا۔ انہوں نے کہا کہ انہیں بجلی کے بلوں پر بھاری ٹیکس لگانے کی شکایات موصول ہو رہی ہیں۔ ایف بی آر حکام نے جواب دیا کہ بجلی کے بلوں پر مختلف ٹیکس ہیں جن میں 17 فیصد جنرل سیلز ٹیکس (جی ایس ٹی) بھی شامل ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ کمرشل صارفین کے لیے فی یونٹ بجلی پر ٹیکس کا اثر گھریلو صارفین پر 40 سے 58 فیصد اور 29 فیصد کے درمیان ہے۔ اضافی ٹیکس صنعتی یا کمرشل کنکشنز کو بجلی کی فراہمی پر قابل وصول تھا۔ مختلف سیاسی جماعتوں سے تعلق رکھنے والے سینیٹرز نے کہا کہ بھاری ٹیکس کی موجودگی میں ون ونڈو ٹیکس پالیسی کے لیے سہولت کا عنصر ہونا چاہیے۔ چیئرمین نے عدالتوں میں فیصلے کے لیے زیر التوا ایف بی آر کے کیسز اور قانونی چارہ جوئی کی وجہ سے پھنسی کل رقم کا معاملہ اٹھاتے ہوئے کہا کہ ایف بی آر کو بیکار کیسز دائر کرنے سے روکنے کی ضرورت ہے۔ 31.10.2022 تک زیر التواء مقدمات کی تفصیلات کمیٹی کے سامنے پیش کی گئیں جن کی کل تعداد 13,296 تھی۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ 31-10-2022 تک ان لینڈ ریونیو کے زیر التوا مقدمات کی تعداد 75,021 تھی جو کہ 2.382 ٹریلین روپے بنتی ہے۔

پورٹ قاسم پر کنٹینرز کے پھنسے ہوئے معاملے پر کمیٹی کو بتایا گیا کہ اس وقت پورٹ قاسم پر کل 3000 کنٹینرز میں سے 988 کنٹینرز پورٹ پر رکھے ہوئے ہیں۔ 1,012 کو کلیئر کر دیا گیا تھا اور مزید 600 کو جلد ہی جاری کیا جائے گا۔ آئی پی او کی مختلف شرائط کو پورا نہ کرنے، خلاف ورزیوں/غلط اعلانات اور عدالتی مقدمات کی وجہ سے تقریباً 860 کنٹینرز بھی پکڑے گئے تھے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ غیر ملکی مسافروں پر چیک کے ذریعے ڈالر خریدنے پر پابندی اور ڈالر لے جانے کی حد برقرار رہے گی تاکہ ریگولیٹری نظام کو مضبوط کیا جا سکے اور دستاویزات کو بہتر بنایا جا سکے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ رقوم کے غیر ضروری اخراج کو کنٹرول کرنے کے لیے اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) نے بیرون ملک کیش لے جانے کی حد میں نظر ثانی کی ہے۔

وزیر مملکت برائے خزانہ عائشہ غوث پاشا نے اراکین کو آگاہ کیا کہ غیر ملکی مسافروں پر صرف چیک کے ذریعے ڈالر خریدنے پر پابندی اور کیش لے جانے کی حد کو 10,000 ڈالر سے کم کرکے 5000 ڈالرز کی کمی ریگولیٹری نظام کو مضبوط بنانے، دستاویزات کو بہتر بنانے اور غیر قانونی سرگرمیوں کو کنٹرول کرنے کے لیے نافذ العمل رہے گی۔ . یہ مشورہ دیا گیا کہ 2,000 ڈالر یا اس سے زیادہ (یا دیگر کرنسیوں میں اس کے مساوی) کی تمام غیر ملکی کرنسی کی بیرونی ترسیلات/فروخت کی ٹرانزیکشنز ایکسچینج کمپنیوں کے ذریعے کسٹمر کے ذاتی اکاؤنٹ سے بینک ٹرانسفر/چیک کے ذریعے کی جائیں گی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں