12

پاکستان روس تیل اور ایل این جی کی درآمد پر جلد باضابطہ مذاکرات

کراچی: ماسکو کی جانب سے ماہ کے آخر تک اسلام آباد کو اس سلسلے میں اجلاس منعقد کرنے کی دعوت دینے کے بعد پاکستان ملک کے لیے تیل اور ایل این جی کے حصول کے لیے روس کے ساتھ باضابطہ مذاکرات کرے گا۔

پاکستان کو بھی چند روز قبل امریکہ کی طرف سے گرین سگنل ملا جب اسلام آباد میں اس کے سفارت خانے نے پاکستان کے دفتر خارجہ کو روسی تیل کو محدود کرنے کے لیے اتحادی گروپ کی رضامندی کے بارے میں مطلع کیا۔

اس سلسلے میں پاکستان کا دو رکنی وفد 29 سے 30 نومبر تک ماسکو کا دورہ کرے گا۔ وفد میں پیٹرولیم ڈویژن کے وزیر مملکت ڈاکٹر مصدق ملک اور کیپٹن (ر) محمد محمود ایڈیشنل سیکریٹری (انچارج) پیٹرولیم ڈویژن شامل ہوں گے۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی حکومت کے خاتمے کے بعد سے روسی تیل اور گیس کی درآمد پاکستان میں ایک بہت زیادہ زیر بحث رہی ہے، جب سابق وزیر اعظم عمران خان نے اپنے دورے کے دوران ایک پیش رفت حاصل کرنے کا دعویٰ کیا تھا۔ ماسکو فروری 2022 میں۔ بعد میں، اس نے موجودہ حکمرانوں پر الزام لگایا کہ وہ امریکہ کے زیر اثر اس سے پیچھے ہٹ رہے ہیں، جس نے روس کے یوکرین پر حملہ کرنے کے بعد اس کی مخالفت کی۔

سرکاری دستاویزات کے مطابق اس سال ستمبر میں شنگھائی تعاون تنظیم کے سربراہی اجلاس کے موقع پر وزیر اعظم شہباز شریف کی سمرقند میں روسی صدر پیوٹن سے ملاقات کے بعد روسی تیل اور گیس پر بات چیت کے لیے کام شروع ہوا۔

پیروی کے طور پر، ڈاکٹر مالک نے روسی وزیر توانائی سے رابطہ کیا اور پاکستان کی خواہش کا اظہار کیا کہ وہ روسی حکام کے ساتھ ماہانہ دو سے تین ایل این جی کارگو درآمد کرنے کے لیے مستقبل قریب میں اور طویل مدتی کے لیے معاہدہ کرے۔ بنیاد

اس سال اکتوبر کے وسط میں وزیر مملکت کے پیٹرولیم ڈویژن کی جانب سے لکھے گئے خط کا روس کے وزیر توانائی اور پاکستان میں روسی سفارت خانے کی جانب سے جواب موصول ہوا۔

ڈاکٹر مالک کو بھیجے گئے پیغام میں، روسی حکام نے وزیر کو تجویز پیش کی کہ وہ ماسکو میں روسی کمپنیوں کے نمائندوں کے ساتھ ایک میٹنگ کریں تاکہ پاکستان کو ایل این جی کی فراہمی کے معاملے پر بات چیت کی جا سکے۔

دستاویزات سے انکشاف ہوا ہے کہ پاکستان کی وزارت خارجہ نے حکومت کو پاکستان میں امریکی سفارتخانے کے ساتھ ہونے والی خط و کتابت سے بھی آگاہ کیا۔ امریکی سفارتخانے نے وزارت خارجہ کو مطلع کیا کہ اتحادی گروپوں بشمول امریکہ، جی 7، یورپی یونین اور آسٹریلیا نے روسی تیل کی حد کو حتمی شکل دینے پر اتفاق کیا ہے جس سے روس سے تیل درآمد کرنے والوں کو فائدہ ہوگا۔ پاکستان بھی اس ترقی سے فائدہ اٹھا سکتا ہے۔

پاکستان نے روس کی جانب سے مثبت ردعمل کو ایل این جی کے لیے موجودہ تنگ مارکیٹ، روسی تیل کی حد اور پاکستان کی بڑھتی ہوئی توانائی کی طلب کی روشنی میں حوصلہ افزا قرار دیا۔

سرکاری خط کے مطابق روس کی جانب سے مثبت جواب ملنے کے بعد وزیراعظم نے دو رکنی وفد دو روز کے لیے ماسکو بھیجنے کی تجویز دی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں