29

بچوں اور نوعمروں میں ایچ آئی وی اور ایڈز میں اضافہ ‘انتہائی تشویشناک’: وزیر اعظم

8 مئی 2019 کو لی گئی اس تصویر میں، ایک پاکستانی ڈاکٹر سرکاری ہسپتال میں ایچ آئی وی ٹیسٹ کے لیے ایک مریض سے خون کے نمونے کی جانچ کر رہا ہے۔  - اے ایف پی
8 مئی 2019 کو لی گئی اس تصویر میں، ایک پاکستانی ڈاکٹر سرکاری ہسپتال میں ایچ آئی وی ٹیسٹ کے لیے ایک مریض سے خون کے نمونے کی جانچ کر رہا ہے۔ – اے ایف پی

جیسا کہ دنیا آج (یکم دسمبر) ایچ آئی وی کا عالمی دن منا رہی ہے، وزیر اعظم شہباز شریف نے پاکستان بھر میں ایچ آئی وی اور ایڈز کے کیسز میں اضافے پر تشویش کا اظہار کیا۔

2022 کے آخری 10 مہینوں کے دوران ملک میں 9,773 افراد نے ایچ آئی وی کے لیے مثبت تجربہ کیا ہے، جس نے ایچ آئی وی کی روک تھام اور کنٹرول کی کوششوں کے بارے میں سنگین شکوک و شبہات پیدا کیے ہیں، اسلام آباد میں صحت کے حکام کے حوالے سے حالیہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے۔

حکام نے کہا کہ ایچ آئی وی کیسز میں اضافہ واضح طور پر اہم آبادیوں سے عام لوگوں تک ایچ آئی وی کے پھیلاؤ کی نشاندہی کرتا ہے۔

ایچ آئی وی کا عالمی دن ہر سال یکم دسمبر کو منایا جاتا ہے۔ اس کا مقصد اس مہلک بیماری کے منفی اثرات کو اجاگر کرنا اور عوام میں بیداری پیدا کرنا ہے تاکہ اس کا شکار ہونے سے بچاؤ کے اقدامات پر عمل کیا جا سکے۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ بچوں اور نوعمروں میں ایچ آئی وی اور ایڈز کے بڑھتے ہوئے واقعات تشویشناک ہیں۔

انہوں نے وزارت صحت پر زور دیا کہ وہ اس لعنت سے لڑنے کے لیے ٹیسٹنگ، روک تھام اور علاج کے بارے میں آگاہی پر توجہ دیں۔

وزیر اعظم نے ایڈز کے عالمی دن کے موقع پر ہر ایک کو “ایچ آئی وی سے جڑے بدنما داغ کو ختم کرنے کا عہد” کرنے کی ترغیب دی۔

پاکستان نے گزشتہ 11 سالوں کے دوران ایچ آئی وی پر قابو پانے اور اس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے گلوبل فنڈ اور دیگر بین الاقوامی ڈونر ایجنسیوں سے کروڑوں ڈالر خرچ کیے ہیں لیکن نئے انفیکشن میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

UNAIDS کے مطابق، کم خطرے والے مردوں، خواتین اور کلیدی آبادیوں کے کلائنٹس کا ایک نمایاں فیصد نئے متاثرہ افراد ہیں جو کلیدی آبادیوں کی آبادیوں (میاں بیوی، شراکت داروں اور کلائنٹس) میں ایچ آئی وی کی منتقلی میں اضافے کی تجویز کرتے ہیں۔

پاکستان میں ایچ آئی وی کے پھیلاؤ پر تبصرہ کرتے ہوئے معروف متعدی امراض کے ماہر اور ایچ آئی وی کے ماہر ڈاکٹر فیصل محمود نے کہا کہ ماضی کے مقابلے میں ایچ آئی وی کے زیادہ کیسز کی ایک وجہ یہ ہے کہ ملک میں لاکھوں ٹیسٹ کیے جا رہے ہیں۔

Source link

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں