22

نئے سربراہ اور فوج پر تنقید نہیں، عمران خان کی پی ٹی آئی رہنماؤں کو ہدایت

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان۔  ٹویٹر ویڈیو کا اسکرین شاٹ۔
چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان۔ ٹویٹر ویڈیو کا اسکرین شاٹ۔

اسلام آباد: پی ٹی آئی کے چیئرمین اور سابق وزیراعظم عمران خان نے اپنی پارٹی رہنماؤں اور سوشل میڈیا ٹیم کو ہدایت کی ہے کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ فوج اور نئے آرمی چیف جنرل عاصم منیر پر تنقید نہ ہو۔

پی ٹی آئی کے ذرائع کے مطابق، عمران خان نے پارٹی رہنماؤں اور پی ٹی آئی کے سوشل میڈیا منیجرز کے ایک واٹس ایپ گروپ میں ہدایت کی، “براہ کرم اس بات کو یقینی بنائیں کہ نئے چیف اور آرمی اسٹاف پر کوئی تنقید نہ ہو۔”

عمران خان کا یہ رخ پارٹی کی ملٹری اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ کشیدہ تعلقات کو دوبارہ استوار کرنے کی کوشش کی واضح علامت ہے۔ پارٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ جنرل عاصم منیر کی بطور آرمی چیف تقرری کے بعد عمران خان بھی نہیں چاہتے کہ ان کی وزارت عظمیٰ کے دوران ان کے اور جنرل عاصم منیر کے درمیان جو کچھ ہوا اس کی کوئی عکاسی ہو۔

رابطہ کرنے پر پی ٹی آئی کے سینئر رہنما فواد چوہدری نے خان کی جانب سے اپنے رہنماؤں اور سوشل میڈیا ٹیم کے لیے تازہ ترین ہدایت کی تصدیق یا تردید نہیں کی لیکن کہا کہ پارٹی کی پالیسی ادارے کے ساتھ تصادم کی نہیں ہے۔

چوہدری نے وضاحت کی کہ ماضی میں پی ٹی آئی کو بعض افراد اور ان کی پالیسیوں سے مسائل تھے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں فوج سے بطور ادارہ کوئی مسئلہ نہیں تھا جو کہ پاکستان کی سلامتی اور دفاع کے لیے بہت ضروری ہے۔

بدھ کو عمران خان نے ایک ٹوئٹ میں جنرل ساحر شمشاد مرزا کو نئے CJCSC اور جنرل سید عاصم منیر کو نیا چیف آف آرمی سٹاف بننے پر مبارکباد دی۔ خان نے امید ظاہر کی، “نئی فوجی قیادت موجودہ اعتماد کے خسارے کو ختم کرنے کے لیے کام کرے گی جو کہ قوم اور ریاست کے درمیان گزشتہ 8 ماہ میں پیدا ہوا ہے۔ ریاست کی طاقت اس کے لوگوں سے حاصل ہوتی ہے۔

اسی ٹوئٹ میں عمران خان نے قائداعظم محمد علی جناح کا اقتباس شیئر کرتے ہوئے لکھا کہ ’’یہ مت بھولیں کہ مسلح افواج عوام کی خادم ہیں اور آپ قومی پالیسی نہیں بناتے۔ یہ ہم شہری ہیں، جو ان مسائل کا فیصلہ کرتے ہیں اور یہ آپ کا فرض ہے کہ ان کاموں کو انجام دیں جو آپ کو سونپے گئے ہیں۔” (قائداعظم سے مسلح افواج؛ 14 اگست 1947)۔

نئے آرمی چیف کی تقرری کے بعد، عمران خان اور پی ٹی آئی نے اس پالیسی میں ایک بڑا تبدیلی کی جس کا سابق وزیر اعظم اور ان کی پارٹی کے رہنماؤں کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا ٹیم گزشتہ آٹھ ماہ سے پروپیگنڈہ کر رہی ہے۔

وزیراعظم کے دفتر سے برطرفی کے بعد عمران خان نے ملٹری اسٹیبلشمنٹ پر شدید حملہ کیا اور اسے اپنی حکومت کے خاتمے کا ذمہ دار ٹھہرایا۔ انہوں نے ادارے کی غیرجانبداری پر بھی حملہ کیا اور بار بار سابق آرمی چیف جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ کی زیر قیادت ملٹری اسٹیبلشمنٹ پر زور دیا کہ وہ موجودہ حکومت کو ہٹا کر عام انتخابات کی راہ ہموار کریں۔

ان تمام مہینوں کے دوران پی ٹی آئی کے سوشل میڈیا نے فوجی اسٹیبلشمنٹ، فوج کی اعلیٰ کمان کو نشانہ بنانے کے لیے بے شمار مہم چلائی۔ ان مہمات میں گالی گلوچ کا بھی استعمال کیا گیا ہے۔ پی ٹی آئی کے بعض رہنماؤں نے ملٹری اسٹیبلشمنٹ اور اس کے اہم کھلاڑیوں کے خلاف بھی نازیبا زبان استعمال کی۔

ذرائع کے مطابق عمران خان کو ابتدائی طور پر جنرل عاصم منیر کی بطور آرمی چیف تعیناتی پر تحفظات تھے لیکن بعد میں انہوں نے اپنی پالیسی تبدیل کرتے ہوئے کہا کہ انہیں کوئی اعتراض نہیں ہوگا چاہے کوئی بھی آرمی چیف بنا دیا جائے۔

اپنی وزارت عظمیٰ کے دوران، عمران خان نے عاصم منیر کو ڈی جی آئی ایس آئی کے عہدے سے قبل از وقت ہٹا دیا تھا جب بعد میں مبینہ طور پر وزیر اعظم کو خان ​​کے قریبی لوگوں کے مبینہ بدعنوان طریقوں سے آگاہ کیا تھا۔

تاہم جب وزیراعظم شہباز شریف نے عاصم منیر کو آرمی چیف بنانے کی منظوری دی تو صدر ڈاکٹر عارف علوی عمران خان سے مشاورت کے لیے لاہور پہنچے، جنہوں نے موجودہ حکومت کی جانب سے کی گئی اعلیٰ فوجی تقرریوں پر بھی اتفاق کیا۔ اس سے قبل خان صاحب اصرار کر رہے تھے کہ موجودہ حکومت کو نیا آرمی چیف مقرر کرنے کا کوئی حق نہیں ہے۔ ان کا خیال تھا کہ جنرل باجوہ کو توسیع دی جا سکتی ہے تاکہ اگلے عام انتخابات کے بعد نئی حکومت کو سی او اے ایس کی تقرری کے قابل بنایا جا سکے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں