29

ایف بی آر اور صوبوں کے درمیان سنگل سیلز ٹیکس ریٹرن پورٹل پر مفاہمت کی یادداشت پر دستخط

اسلام آباد: فیڈرل بورڈ آف ریونیو اور چاروں صوبائی ریونیو اتھارٹیز نے بدھ کو ایک ہی سیلز ٹیکس ریٹرن اور سنگل ویب پورٹل کے لیے مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کیے ہیں۔

ایک پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ ایم او یو پر دستخط فی الحال فیڈریشن اور صوبوں کے درمیان جاری سیلز ٹیکس اقدام کی ہم آہنگی کے سب سے اہم اجزاء میں سے ایک ہے۔

ایف بی آر کی جانب سے ایم او یو پر چیئرمین ایف بی آر نے دستخط کیے جبکہ تمام صوبائی ریونیو اتھارٹیز کے سربراہان نے اپنے اپنے محکموں کی جانب سے دستاویز پر دستخط کیے۔

تقریب میں خیبرپختونخوا ریونیو اتھارٹی (KPRA) اور بلوچستان ریونیو اتھارٹی (BRA) کے نمائندے جسمانی طور پر موجود تھے جبکہ سندھ ریونیو بورڈ (SRB) اور پنجاب ریونیو اتھارٹی (PRA) کے نمائندوں نے زوم کے ذریعے عملی طور پر شرکت کی۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے ریونیو ڈاکٹر وقار مسعود خان نے کہا کہ دستاویز پر دستخط ایف بی آر کو مکمل خودکار بنانے کے وزیراعظم کے وژن کی تکمیل کی جانب ایک اور قدم ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ “یہ قدم ٹیکس دہندگان کے لیے آسانیاں لائے گا اور اس سے کاروبار کرنے میں آسانی کے انڈیکس پر ملک کی پوزیشن کو بہتر بنانے میں بہت مدد ملے گی۔”

ایس اے ٹو پی ایم آن ریونیو نے مزید کہا کہ اب کاروبار سے وابستہ افراد کو کئی ریٹرن کے بجائے صرف ایک سیلز ٹیکس ریٹرن فائل کرنا ہوگا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس اقدام سے ٹیکس کے نظام اور طریقہ کار کو آسان بنانے میں مدد ملے گی۔

دریں اثناء سندھ ریونیو بورڈ (SRB) کے چیئرمین واصف میمن نے کہا کہ ون ونڈو متعارف ہونے سے تاجر برادری کو بڑی سہولت ملے گی۔ نیشنل ٹیکس کونسل کے تحت ون ونڈو تشکیل دی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ سندھ میں سیلز ٹیکس، ایگریکلچر انکم ٹیکس، سوشل سیکیورٹی، ایکسائز ڈیوٹی، موٹر وہیکل ٹیکس، انفراسٹرکچر ٹیکس، پروفیشنل ٹیکس اور ورکرز ویلفیئر ٹیکس ایک ہی چھت کے نیچے جمع کرنے کے لیے ون ونڈو پر کام جاری ہے۔

ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے واصف میمن نے کہا کہ سندھ میں ریسٹورنٹس پر پوائنٹ آف سیلز (پی او ایس) سسٹم کے نفاذ سے ٹیکس ریونیو میں نمایاں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے اور اب تک یہ سسٹم 196 ریسٹورنٹس پر نافذ ہے اور اسے دیگر کاروباری مقامات تک پھیلایا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ شہر کی فوڈ سٹریٹس کو بھی ٹیکس نیٹ میں لایا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ سندھ میں سیلز ٹیکس کا تناسب 13 فیصد ہے جو کہ ملک کے دیگر صوبوں کے مقابلے میں کم ہے۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں