18

سندھ کو گیس کی شدید لوڈشیڈنگ کا سامنا

کراچی میں سوئی سدرن گیس کمپنی (SSGC) کی عمارت کی دی نیوز فائل فوٹو۔
کراچی میں سوئی سدرن گیس کمپنی (SSGC) کی عمارت کی دی نیوز فائل فوٹو۔

کراچی: سوئی سدرن گیس کمپنی (SSGC) نے پیر کو اعلان کیا ہے کہ ایک نئے لوڈ مینجمنٹ پلان کے تحت سندھ میں صارفین کو گیس صبح 6 سے 9 بجے، دوپہر 12 سے 2 بجے اور شام 6 سے 9 بجے تک فراہم کی جائے گی۔

ایس ایس جی سی اہلکار کا کہنا تھا کہ باقی دن گیس کی سپلائی مکمل طور پر بند نہیں کی جائے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ SSGC حکومتی ہدایات کے مطابق مذکورہ بالا آٹھ گھنٹے میں سپلائی کو یقینی بنائے گا۔ گزشتہ ماہ، ایس ایس جی سی نے 15 نومبر سے 28 فروری تک کراچی بھر کی صنعتوں کو گیس کی فراہمی روک دی تھی کیونکہ بندرگاہی شہر میں گیس کا بحران شدت اختیار کر گیا تھا۔ گیس سپلائی کرنے والی کمپنی کا یہ اقدام سندھ اور بلوچستان میں گھریلو اور کمرشل صارفین کو اس عمل میں ان کے مطالبات کو پورا کرنے کی ترجیح دینے کے لیے کیا گیا ہے۔

یہ بھی واضح رہے کہ گیس کی قلت کے باعث سندھ میں تمام سی این جی اسٹیشنز ڈھائی ماہ سے پہلے ہی بند ہیں۔ گیس کمپنی کے نوٹس کو صنعتوں نے مسترد کر دیا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ سپلائی میں تعطل کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر چھانٹی اور کاروبار بند ہو جائیں گے۔

اکتوبر اور نومبر میں، ایس ایس جی سی کے نام کے ساتھ دو مختلف جعلی اعلانات انٹرنیٹ پر پھیلے جس میں بتایا گیا کہ حکومت گیس لوڈشیڈنگ کے اوقات کو بڑھا کر 18 کر دے گی جس سے گھریلو اور کمرشل گیس صارفین خوفزدہ ہو جائیں گے۔ تاہم کمپنی نے اس خبر کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ گیس مینجمنٹ پلان تیار کیا جا رہا تھا اور اس وقت اسے ملتوی کر دیا گیا تھا۔

وزیر مملکت برائے پیٹرولیم مصدق ملک نے بھی واضح کیا کہ ابھی تک کسی پلان کا اعلان نہیں کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ متعلقہ حکام کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ “کسی بھی قیمت پر” کھانے کے اوقات میں فراہمی کو یقینی بنانے کی حکمت عملی وضع کریں۔

وفاقی حکومت کے گیس لوڈ مینجمنٹ پلان کو نومبر میں اس کی درخواست کے بعد ایڈجسٹ کیا گیا تھا تاکہ پاکستان بھر میں گھریلو صارفین کو 8 گھنٹے گیس فراہم کی جا سکے۔ وزارت توانائی نے دی نیوز کو بتایا کہ کمرشل صارفین کو پنجاب میں روٹی تندور کے علاوہ آر ایل این جی فراہم کی جائے گی، جنہیں سسٹم گیس (مقامی گیس) فراہم کی جائے گی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں