21

پی اے سی نے توشہ خانہ کا 10 سالہ ریکارڈ طلب کر لیا۔

اسلام آباد: پبلک اکاؤنٹس کمیٹی (پی اے سی) نے گزشتہ 10 سال کے توشہ خانہ کا ریکارڈ اور تمام وزرائے اعظم، سیاستدانوں، مسلح افواج کے سربراہان، ججز اور بیوروکریٹس کی جانب سے ملنے والے تحائف کی تفصیلات طلب کرلیں۔

پی اے سی نے سیکرٹری کیبنٹ ڈویژن، سپریم کورٹ، آرمی، نیوی اور ایئر فورس اور صوبائی گورنرز کو تحائف سے متعلق معلومات فراہم کرنے کے لیے خط لکھنے کی بھی ہدایت کی۔

پی اے سی اجلاس کے دوران آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے انکشاف کیا کہ پرائم منسٹر انسپکشن کمیشن اسلام آباد کی عمارت گزشتہ کئی سالوں سے نیب کے غیر قانونی قبضے میں تھی۔

منگل کو نور عالم خان کی صدارت میں ہونے والے اجلاس میں وزارت ہاؤسنگ اینڈ ورکس سے متعلق مالی سال 20-2019 کے آڈٹ پیراز کا جائزہ لیا گیا۔ کمیٹی نے پی ٹی آئی حکومت کے نیا پاکستان ہاؤسنگ پروجیکٹ کے تحت گھروں کی تعمیر کی آڈٹ رپورٹ طلب کرلی۔

پی اے سی کے چیئرمین نور عالم نے توشہ خانہ کا ریکارڈ طلب کرتے ہوئے گزشتہ 10 سالوں کے دوران سرکاری افسران، سیاستدانوں، جرنیلوں اور ججوں کو ملنے والے تحائف اور توشہ خانہ کا ریکارڈ آڈیٹر جنرل آف پاکستان کو فراہم کرنے کی ہدایت کی۔ رکن کمیٹی سینیٹر محسن عزیز نے کہا کہ توشہ خانہ کا ریکارڈ 2015 کے بجائے 2013 سے لیا جائے۔

چیئرمین پی اے سی نے 2013 سے اب تک سیاستدانوں، جرنیلوں، ججوں اور بیوروکریٹس کی جانب سے ملنے والے تحائف کی تفصیلات پیش کرنے کی ہدایت کی۔

اجلاس میں پی ٹی آئی حکومت کے ڈریم پراجیکٹ نیا پاکستان ہاؤسنگ پروجیکٹ کا معاملہ اٹھاتے ہوئے ممبر کمیٹی ڈاکٹر ملک مختار نے کہا کہ نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی نے ایک این جی او کو گھر بنانے کے لیے 5 ارب روپے دیے۔ انہوں نے کہا کہ آڈٹ حکام کو چیک کرنا چاہیے کہ یہ فنڈ کس کو دیا گیا اور کیا 20 ہزار گھر درحقیقت بنائے گئے۔

انہوں نے کہا کہ سابق وزیراعظم عمران خان نے 50 لاکھ گھر بنانے کا اعلان کیا تھا، اور سنا ہے کہ ایک پرائیویٹ ہاؤسنگ سوسائٹی کو 5 سے 8 ارب روپے ادا کیے گئے، اور اس سوسائٹی نے دعویٰ کیا کہ اس نے 2000 ہاؤسنگ یونٹ بنائے۔ پی اے سی نے آڈیٹر جنرل آف پاکستان کو نیا پاکستان ہاؤسنگ پراجیکٹ کی آڈٹ رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت کی۔

آڈٹ پیرا کا جائزہ لیتے ہوئے آڈٹ حکام نے بتایا کہ گزشتہ کئی سالوں سے پرائم منسٹر انسپکشن کمیشن کی عمارت نیب کے غیر قانونی قبضے میں تھی۔ چیئرمین پی اے سی نے ڈی جی نیب کی عدم موجودگی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ وہ یہاں موجود ہوں اور اس کا جواب دیں کیونکہ نیب کی عمارت پہلے ہی دارالحکومت میں بن چکی ہے۔ آڈٹ حکام نے بتایا کہ اسٹیٹ آفس نے کئی بار اس عمارت کو خالی کرنے کے نوٹس جاری کیے تھے۔

چیئرمین پی اے سی نے کہا کہ نیب قبضہ مافیا کی طرح کام کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ چیئرمین نیب یا ڈپٹی چیئرمین نیب کل پی اے سی میں آئیں اور عمارت خالی کرنے کی تاریخ بتائیں کیونکہ بڑے سیاستدان نیب سے ڈرتے ہیں۔

انہوں نے ہدایت کی کہ نیب کو نوٹس بھجوا کر وزیراعظم انسپکشن کمیشن کی عمارت فوری خالی کرائی جائے اور واجبات کی ادائیگی کی جائے۔ اور اگر نیب نے نوٹس پر عمارت خالی نہیں کی تو پولیس اسے خالی کرائے۔ انہوں نے خبردار کیا کہ اگر نیب نے عمارت خالی نہ کی تو اسلام آباد پولیس، رینجرز اور ایف سی کی مدد لیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ضرورت پڑی تو وہ فوج سے مدد مانگ سکتے ہیں۔

ایک اور آڈٹ پیرا کا جائزہ لیتے ہوئے آڈٹ حکام نے کمیٹی سے پنجاب پولیس کی جانب سے سرکاری مکانات پر ناجائز قبضے روکنے کے لیے کہا۔ کمیٹی نے آئی جی پنجاب پولیس کو 15 روز میں ان کوارٹرز کو خالی کرانے کی ہدایت کی۔

ایک اور آڈٹ پیرا کا جائزہ لیتے ہوئے آڈٹ حکام نے بتایا کہ کراچی میں 4,087 سرکاری مکانات پر ریٹائرڈ سرکاری ملازمین کا قبضہ ہے۔ انہوں نے کمیٹی کو بتایا کہ سپریم کورٹ نے 2019 میں ان مکانات کے مکینوں سے کرایہ وصول کرنے کا فیصلہ دیا تھا۔

ڈی جی اسٹیٹ آفس نے کمیٹی کو بتایا کہ اسٹیٹ آفس نے 400 گھر خالی کرائے ہیں اور چھٹیوں کا عمل اب روک دیا گیا ہے کیونکہ ایک وزیر نے ان گھروں کے مالکانہ سرٹیفکیٹ تقسیم کیے تھے۔ چیئرمین پی اے سی نے ریکارڈ فوری طور پر کمیٹی کے سامنے پیش کرنے کی ہدایت کی۔

سیکرٹری وزارت ہاؤسنگ اینڈ ورکس نے کمیٹی کو بتایا کہ ان گھروں میں اصل الاٹیوں کی تیسری اور چوتھی نسل رہائش پذیر تھی۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت خود کارروائی نہیں کر سکتی کیونکہ یہ معاملہ صوبائی حکومت کے دائرہ اختیار میں آتا ہے۔

ممبر کمیٹی افضل خان نے کہا کہ سرکاری ملازمین ایک دوسرے کی حفاظت کرتے ہیں۔ اسی لیے گھر خالی نہیں کیے جاتے۔‘‘ ڈی جی اسٹیٹ آفس نے کمیٹی کو بتایا کہ اس وقت ایم کیو ایم کے وزیر صفوان اللہ تھے۔

چیئرمین پی اے سی نے دستاویزات جمع کرانے کی ہدایت کی، تاکہ قانونی کارروائی کی جاسکے۔ ڈی جی اسٹیٹ آفس نے کہا کہ ایسا ہی ایک کیس اسلام آباد میں ہوا جہاں سرکاری ملازمین کو مالکانہ حقوق دیے گئے۔ آڈٹ اہلکار نے کمیٹی کو بتایا کہ اسٹیٹ آفس نے 2014 میں قواعد کے خلاف گھروں کی الاٹمنٹ کی تھی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں