21

انتھک کوششوں سے بکھری ہوئی معیشت کو مستحکم کیا: وزیراعظم

14 دسمبر 2022 کو وزیر اعظم شہباز شریف کی تصویر۔ پی آئی ڈی
14 دسمبر 2022 کو وزیر اعظم شہباز شریف کی تصویر۔ پی آئی ڈی

اسلام آباد: وزیر اعظم شہباز شریف نے بدھ کو کہا کہ حکومت بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ اپنے موجودہ پروگرام پر عمل کرے گی۔

وزیراعظم ہاؤس میں اقتصادی صورتحال پر اعلیٰ سطحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے ملکی برآمدات کو بڑھانے کے لیے برآمد کنندگان کو ہر ممکن سہولت فراہم کرنے کی یقین دہانی کرائی۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کو وراثت میں ایک تباہ حال اور مخدوش صورتحال میں معیشت ملی تھی لیکن مسلسل محنت سے انہوں نے اسے مستحکم کیا۔

پی ایم آفس میڈیا ونگ نے ایک پریس ریلیز میں بتایا کہ اجلاس میں وزرائے خزانہ، اقتصادی ڈویژن، منصوبہ بندی، دفاع، گورنر اسٹیٹ بینک آف پاکستان، حبیب بینک، الفلاح بینک کے صدور اور دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم کو معاشی صورتحال پر بریفنگ دی گئی اور بتایا گیا کہ ملک ڈیفالٹ نہیں ہونے والا، ایسی تمام افواہیں گمراہ کن ہیں۔ اجلاس میں ڈالر ذخیرہ کرنے والوں کے خلاف کارروائی کا فیصلہ کیا گیا جب کہ وزیراعظم نے اوپن مارکیٹ اور انٹربینک ڈالر کے نرخوں میں فرق کم کرنے کی ہدایت کی۔

اجلاس میں اس خدشے کا اظہار کیا گیا کہ سابق حکومت کے دور میں ملک کی معاشی صورتحال بدترین بدانتظامی اور تباہ کن صورتحال سے دوچار رہی۔

جب سابق حکومت برسراقتدار آئی تو 2018 کے دوران جی ڈی پی 6.1 فیصد رہی لیکن اس میں بہتری کے بجائے خراب حکمرانی اور معاشی بدانتظامی نے معیشت کو تعطل کا شکار کردیا۔

اجلاس میں کہا گیا کہ 2018 میں عوامی قرضہ 25 کھرب روپے تھا جو مارچ 2022 کے دوران اور 42 ماہ کے عرصے کے بعد 44.5 ٹریلین روپے تک پہنچ گیا۔ اسی طرح موجودہ حکومت کو بھی وراثت میں معاشی اشاریے خراب حالت میں ملے۔

اجلاس میں یہ بھی بتایا گیا کہ سیلاب کی وجہ سے معاشی تبدیلی کی کوششوں کو جھٹکے لگے لیکن پھر بھی حکومت نے معاشی مشکلات کے باوجود 33 ملین افراد کی مدد کی۔

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ وہ ملک کو معاشی چیلنجوں سے بتدریج نکالیں گے جیسے سیلاب کے دوران کھانے پینے کی اشیاء، فصلوں اور دیگر ضروری اشیا کی قلت پر قابو پالیا گیا تھا۔

ملاقات میں ملک کی معاشی صورتحال پر جامع غور کیا گیا، آئی ایم ایف کے نویں جائزے کے علاوہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارے پر قابو پانے کے لیے اقدامات پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔

وزیراعظم نے آئی ایم ایف پروگرام مکمل کرنے کا اعادہ کرتے ہوئے متعلقہ حکام کو ہدایت کی کہ وہ مالیاتی اور کرنٹ اکاؤنٹ خسارے پر قابو پانے کے لیے ضروری اقدامات کریں۔ انہوں نے اس سلسلے میں مطلوبہ پالیسی اور انتظامی اصلاحات پر توجہ دینے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

وزیراعظم نے برآمد کنندگان کو تمام سہولیات کی فراہمی، بندرگاہوں پر ضروری سہولیات، نئی منڈیوں کی نشاندہی کے علاوہ خام مال اور مشینری کی درآمد میں معاونت کی بھی ہدایت کی۔

انہوں نے کہا کہ اس وقت آئی ٹی ایکسپورٹ کا کل حجم 2 بلین ڈالر ہے جسے انٹرپرینیورز اور سٹارٹ اپس کو سہولیات فراہم کر کے آسانی سے 5 بلین ڈالر تک لے جایا جا سکتا ہے۔

وزیر اعظم نے مشاہدہ کیا کہ اوورسیز پاکستانیوں کو سہولیات کی فراہمی کے ساتھ بینکنگ چینلز کے ذریعے اپنی ترسیلات زر ملک بھیجنے کی ترغیب دی جانی چاہیے۔ انہوں نے توانائی کے شعبے میں مکمل توجہ کے ساتھ اصلاحات پر بھی زور دیا، انہوں نے مزید کہا کہ گردشی قرضے میں کمی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔

انہوں نے کہا کہ بجلی کی پیداوار بڑھانے کے ساتھ ساتھ انہیں گردشی قرضے کے مسئلے کو حل کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ “ہمیں مقامی سطح پر توانائی بڑھانے اور پیدا کرنے کے لیے کوششیں کرنے کی ضرورت ہے، تاکہ ایندھن کی درآمد پر انحصار ختم کیا جا سکے۔”

وزیر اعظم نے نوٹ کیا کہ مہنگے ایندھن کی درآمد سے عام لوگوں پر بوجھ پڑا اور انہیں عوام کو اس اذیت سے نجات دلانی پڑی۔ انہوں نے توانائی کے تحفظ کے لیے مہم چلانے کی ہدایت کی تاکہ اس کے استعمال کے عمومی انداز میں بہتری لائی جائے کیونکہ اس کی بچت قومی ضرورت ہے۔

وزیراعظم نے وفاقی وزارتوں کو توانائی کی بچت کو یقینی بنانے اور کفایت شعاری کے ساتھ اخراجات پر قابو پانے کی ہدایت کی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں