20

جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ نے ملک کے لیے جو کیا وہ پہلے کبھی نہیں دیکھا، عمران خان

جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ نے ملک کے لیے جو کیا وہ پہلے کبھی نہیں دیکھا، عمران خان

لاہور: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے بدھ کے روز کہا کہ سابق آرمی چیف جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ نے ملک کے ساتھ جو کیا وہ پہلے کبھی نہیں دیکھا۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ وہ 17 دسمبر کو یہاں لبرٹی چوک میں خیبرپختونخوا اور پنجاب اسمبلیوں کی تحلیل کی تاریخ کا اعلان کریں گے۔

پی ٹی آئی کے سربراہ نے اسمبلیاں تحلیل کرنے کا فیصلہ اپنی زمان پارک رہائش گاہ پر پارٹی ایم پی اے، ایم این ایز، ٹکٹ ہولڈرز، ضلعی اور ڈویژنل سربراہان سے مشاورتی ملاقاتوں کے بعد کیا۔

اس کے علاوہ، عمران نے کہا، پی ٹی آئی کے 125 ایم این ایز بھی قومی اسمبلی کے سپیکر کو استعفے پیش کریں گے اور انہیں قبول کرنے کو کہیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ہمارے استعفوں سے قومی اسمبلی، صوبائی اسمبلی کی 70 فیصد جنرل نشستیں خالی ہو جائیں گی۔ عمران نے سوال کیا کہ جب ملک کے 70 فیصد حصے میں انتخابات ہوں گے تو پورے ملک میں نئے انتخابات کیوں نہیں ہو رہے؟

عمران نے چیف الیکشن کمشنر سکندر سلطان راجہ سے سوال کیا، اور کہا کہ ان کا پورا ایجنڈا انہیں نااہل قرار دینا تھا۔ انہوں نے مزید کہا کہ الیکشن کمیشن سے کیس عدالت میں جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ان کی طرف سے ہر چیز منصفانہ اور قانونی ہے۔ دوسری جانب ان کا کہنا تھا کہ قانون کے تحت توشہ خانہ سے گاڑیاں نہیں خریدی جا سکتی تھیں لیکن نواز شریف اور آصف زرداری نے تین بڑی گاڑیاں خریدیں۔ پی ٹی آئی کے خلاف مبینہ امتیازی سلوک پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے عمران نے کہا کہ عدالتوں نے کہا تھا کہ تینوں جماعتوں کے غیر ملکی فنڈنگ ​​کیسز اٹھائے جائیں گے لیکن صرف پی ٹی آئی کو عدالت میں لایا گیا۔

عمران نے اس بات پر بھی ناراضگی کا اظہار کیا کہ ان کے قائد اعظم سواتی اور شہباز گل جیسے لوگوں کے ساتھ قید میں سلوک کیا گیا۔ قومی اداروں پر زور دیتے ہوئے کہ وہ اپنے آئینی دائرے میں رہیں، پی ٹی آئی کے سربراہ نے کہا کہ فوج کا ادارہ تب ہی مضبوط ہو گا جب وہ سیاست میں مداخلت سے گریز کرے۔

سلیمان شہباز کی واپسی پر عمران نے کہا کہ پورا پاکستان جانتا ہے کہ جنرل مشرف نے این آر او 1 دیا اور جنرل باجوہ نے این آر او 2۔ ارشد شریف، اعظم سواتی، شہباز گل، جمیل فاروقی کو تشدد کا نشانہ بنایا گیا۔ عمران نے کہا کہ انہوں نے جنرل (ر) پرویز مشرف کی آمرانہ حکومت کے خلاف جدوجہد کی اور نظربندی کا بھی سامنا کیا لیکن باجوہ کے دور میں جو ظلم اور انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہوئی اس سے پہلے کبھی نہیں دیکھا گیا۔ عمران نے کہا کہ حتیٰ کہ انہیں اپنی آواز کو خاموش کرانے کے مقصد سے نشانہ بنایا گیا، انہوں نے کہا کہ جب تک میں زندہ ہوں پاکستان کے لیے آواز اٹھاتا رہوں گا۔ انہوں نے عدلیہ کے ادارے پر بھی زور دیا کہ وہ پاکستان کے شہریوں کے حقوق کا تحفظ کرے کیونکہ اس کام کو انجام دینے کے لیے کوئی غیر ملکی طاقت نہیں آئے گی۔ موجودہ معاشی صورتحال پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ حالات بہت سنگین ہیں اور عام لوگوں کی زندگی اجیرن ہو چکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو درپیش موجودہ بحران کے ذمہ دار دو خاندان ہیں۔

عمران نے کہا کہ ‘دی وے آف دی ورلڈ’ نامی کتاب میں نواز اور زرداری کی کرپشن پر پورا باب لکھا گیا ہے۔ بی بی سی نے ان کی کرپشن پر دستاویزی فلم بنائی تھی لیکن پہلے مشرف نے این آر او کے ذریعے انہیں کلین چٹ دی اور پھر جنرل باجوہ نے یہ کام کیا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں