23

اسٹیبلشمنٹ غیر سیاسی نہیں، فواد چوہدری

فواد چوہدری کی میڈیا سے گفتگو۔  - ٹویٹر ویڈیو کا اسکرین شاٹ۔
فواد چوہدری کی میڈیا سے گفتگو۔ – ٹویٹر ویڈیو کا اسکرین شاٹ۔

اسلام آباد: پی ٹی آئی کے ترجمان فواد چوہدری نے کہا ہے کہ موجودہ اسٹیبلشمنٹ غیر سیاسی نہیں ہے۔ پیر کی شب یہاں ایک نجی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے چوہدری نے تاہم کہا کہ نئی فوجی قیادت میں سیاسی معاملات میں اسٹیبلشمنٹ کی مداخلت کم ہوئی ہے۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ فرق یہ ہے کہ پی ٹی آئی رہنماؤں کو موصول ہونے والی نامعلوم کالز کی تعداد گزشتہ کئی مہینوں کے مقابلے میں کافی کم ہو گئی ہے۔

وزیر اعلیٰ پنجاب پرویز الٰہی کے اس بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہ اسٹیبلشمنٹ اسمبلیوں کی تحلیل نہیں چاہتی کیونکہ اس سے سیاسی اور معاشی عدم استحکام بڑھے گا، فواد چوہدری نے اسے سیاست میں اسٹیبلشمنٹ کی مداخلت سے بھی تعبیر کیا۔ ان کا اصرار تھا کہ ایسے خالص سیاسی معاملات کو سیاست دانوں پر چھوڑ دینا چاہیے۔

واضح رہے کہ پی ٹی آئی مسلسل اسٹیبلشمنٹ سے حکومت کو قبل از وقت انتخابات کے لیے مجبور کرنے کا کہہ رہی ہے۔ انہوں نے اپنی بات پر زور دینے کے لیے سینیٹر اعظم سواتی اور شہباز گل کے کیسز کا بھی حوالہ دیا کہ اسٹیبلشمنٹ غیر سیاسی نہیں ہوئی ہے۔

چوہدری نے بجائے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ کا ہمیشہ سیاسی کردار ہوتا ہے۔ جب ان سے سابق آرمی چیف جنرل باجوہ کے اس اعلان کے بارے میں پوچھا گیا کہ فوج نے ایک ادارے کو غیر سیاسی کرنے کا فیصلہ کیا ہے، تو انہوں نے کہا کہ محض بیان کی بنیاد پر اسٹیبلشمنٹ غیر سیاسی نہیں ہو گی۔

انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف نئی اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ ورکنگ کوآرڈینیشن چاہتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ کو تمام سیاسی جماعتوں کے ساتھ ورکنگ کوآرڈینیشن ہونا چاہیے، انہوں نے مزید کہا کہ فوج کا تعلق پوری قوم سے ہے، اس لیے اسے کسی خاص سیاسی جماعت سے منسلک نہیں کیا جا سکتا۔ تمام سیاسی جماعتوں کو ادارے کے بارے میں اچھا نظریہ رکھنا چاہیے اور اسی وجہ سے پی ٹی آئی بھی فوج کے ساتھ بہتر ورکنگ کوآرڈینیشن چاہتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ فوج کی اعلیٰ قیادت کو تمام سیاسی جماعتوں کے ساتھ ورکنگ ریلیشن شپ کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف نہیں چاہتی کہ فوج اس کا ساتھ دے۔ انہوں نے کہا کہ اگر تحریک انصاف اسمبلیاں تحلیل کرنا چاہتی ہے تو ایسا نہ ہو کہ چوہدری پرویز الٰہی کو فون آئے اور کہا جائے کہ وہ اسمبلیاں نہ توڑیں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں