15

آئی ایم ایف نے 65 ارب روپے کا بوجھ بجلی صارفین پر ڈالنے کا مطالبہ کردیا۔

انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان سے بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ کرنے کا کہا ہے۔  - اے ایف پی
انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان سے بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ کرنے کا کہا ہے۔ – اے ایف پی

اسلام آباد: بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان سے کہا ہے کہ وہ بجلی کے صارفین کو 65 ارب روپے فراہم کرے جو گزشتہ موسم گرما کے عروج کے دوران فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ (ایف پی اے) کی شکل میں موخر کیا گیا تھا۔

رواں مالی سال کے بجلی کے بلوں میں ایف پی اے کے موخر ہونے کی مد میں 65 ارب روپے کی مجموعی بقایا رقم میں سے حکومت نے آئی ایم ایف سے اتفاق کیا ہے کہ 55 ارب روپے صارفین کو منتقل کیے جائیں گے اور اس کی وصولی بلوں کے ذریعے کی جائے گی۔ بقیہ 10 ارب روپے سبسڈی کی رقم مختص کرنے سے حاصل کیے جائیں گے۔

ایک سنگین صورتحال میں، پاکستان کا کیش بلیڈنگ پاور سیکٹر تیزی سے دیوالیہ پن کی طرف بڑھ رہا ہے، کیونکہ اس کا مجموعی خسارہ رواں مالی سال کے لیے 1,734 بلین روپے تک بڑھ سکتا ہے جب کہ جمود کا طریقہ اپنایا جائے گا۔ دوسری طرف صارفین اپنے آپ کو بے آواز سمجھتے ہیں کیونکہ لفظ ریفارم کا مطلب ٹیرف میں اضافہ ہے لیکن درحقیقت اس کے نتیجے میں اس شعبے میں چوری میں اضافہ ہوتا ہے۔

1700 سے 1800 ارب روپے کے مجموعی نقصانات میں سے 1000 ارب روپے کی سبسڈی اور 700 سے 800 ارب روپے گردشی قرضے کے عفریت میں ڈھیر ہونے کا خدشہ ہے اگر حکومت کی جانب سے کوئی تدارک نہ کیا گیا۔ .

اب، کثیر الجہتی قرض دہندگان، بشمول آئی ایم ایف/ورلڈ بینک، حکومت سے کہہ رہے ہیں کہ وہ غیر بجٹ شدہ سبسڈیز کے لیے مالی اعانت کے منصوبے پیش کرے، جس میں K-الیکٹرک کی سبسڈی بھی شامل ہے جس کے لیے وزارت خزانہ نے 162 ارب روپے کے نظرثانی شدہ تخمینوں کے مقابلے میں 26 ارب روپے مختص کیے تھے۔ 136 بلین روپے کا فرق ہے جہاں اس فرق کو پر کرنے کے لیے کوئی رقم دستیاب نہیں تھی۔

زیرو ریٹنگ انڈسٹری (ZRI) اور کسان پیکج کے لیے بھی یہی صورتحال رہی جس کے لیے حکومت نے رواں مالی سال میں بالترتیب 118 ارب روپے اور 28 ارب روپے کی سبسڈی مختص نہیں کی۔

آئی ایم ایف نے ایندھن کی قیمتوں میں ایڈجسٹمنٹ کی مد میں بلوں کی موخر ادائیگی وصول کرنے میں ناکامی پر بھی تشویش کا اظہار کیا، جس کی لاگت کا تخمینہ 65 ارب روپے ہے۔ بل کی وصولی کو اصل ہدف 93.58 فیصد سے کم کرکے 92 فیصد کردیا گیا جس سے رواں مالی سال میں 55 ارب روپے کا فرق پیدا ہوا۔ بجلی کی چوری کا ہدف بھی چھوٹ گیا کیونکہ ٹرانسمیشن اینڈ ڈسٹری بیوشن (ٹی اینڈ ڈی) کے نقصانات کے ہدف کو 15.83 فیصد سے بڑھا کر 16.27 فیصد کر دیا گیا جس سے 31 ارب روپے کا خسارہ ہو گا۔

جنریشن لاگت کی وصولی سے 63 ارب روپے کا مالی نقصان ہو گا۔ مئی-23 اور جون-23 ایف سی اے کے لیے 24 ارب روپے اور مالی سال 24-23 کی سہ ماہی ٹیرف ایڈجسٹمنٹ (QTA) کے لیے 39 ارب روپے اور Q4 FY-23 کے لیے وصول کیے جائیں گے۔

حالیہ مہینوں میں مارک اپ میں اضافے سے پاور سیکٹر کی ذمہ داریوں میں بھی اضافہ ہوا کیونکہ آئی پی پیز اور پاور ہولڈنگ کمپنی کا مارک اپ 185 ارب روپے سے بڑھ کر 249 ارب روپے تک پہنچ گیا، جس میں 64 ارب روپے کا اضافہ ہوا۔

کے الیکٹرک پر سبسڈی کی قرارداد سے 136 ارب روپے کا اضافی بوجھ پڑے گا جس کے لیے فنانس ڈویژن نے بجٹ میں کوئی رقم مختص نہیں کی۔

رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں بجلی کی طلب 45 ارب یونٹ سے کم ہو کر 40 ارب یونٹ رہ جانے کے باعث محصولات 493 ارب روپے سے کم ہو کر 347 ارب روپے رہ گئے، جس سے 55 ارب روپے کا نقصان ہوا۔ ایف بی آر کو ادا نہ کیے جانے والے جی ایس ٹی سے رواں مالی سال میں 91 ارب روپے کا نقصان ہونے کا خدشہ ہے۔

اب توقع کی جا رہی ہے کہ اگر حکومت نے ٹیرف میں اضافہ نہ کیا، کارکردگی نہ لائی اور گورننس میں بہتری نہ لائی تو رواں مالی سال میں 700 سے 800 ارب روپے تک کا مالی نقصان ہو سکتا ہے۔ -بلیڈنگ پاور سیکٹر۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں