26

عبداللہ سنبل چیف سیکرٹری پنجاب، عامر ذوالفقار آئی جی پی تعینات

عبداللہ خان سنبل۔  فیس بک
عبداللہ خان سنبل۔ فیس بک

لاہور: عبداللہ خان سنبل چیئرمین پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ (پی اینڈ ڈی) پنجاب کو تبدیل کر کے چیف سیکرٹری پنجاب تعینات کر دیا گیا، اسٹیبلشمنٹ ڈویژن (ای ڈی) نے بدھ کو نوٹیفکیشن جاری کر دیا۔

دریں اثناء وفاقی حکومت نے محمد عامر ذوالفقار خان کو انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب تعینات کر دیا ہے۔ محمد عامر ذوالفقار خان کا تعلق پاکستان کی 19ویں کمانڈ آف پولیس سروس سے ہے۔

وہ ان دنوں ڈپٹی ڈی جی اینٹی نارکوٹکس فورس کے طور پر اپنے فرائض سرانجام دے رہے تھے۔ وہ آئی جی نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹرویز پولیس اور آئی جی اسلام آباد پولیس بھی رہ چکے ہیں۔ محمد عامر ذوالفقار خان کو ایڈیشنل آئی جی آپریشنز پنجاب بھی تعینات کیا گیا ہے۔ انہوں نے 1991 میں پاکستان پولیس سروس میں بطور اے ایس پی شمولیت اختیار کی۔ وہ ڈی آئی جی آپریشنز لاہور، آر پی او ملتان، ڈی آئی جی سی ٹی ڈی پنجاب، ڈی آئی جی آپریشنز سی پی او اور پنجاب کے عہدوں پر فائز رہے۔ انہوں نے سندھ، پنجاب، خیبرپختونخوا اور وفاقی حکومت میں خدمات انجام دیں۔

دریں اثنا، اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے نوٹیفکیشن کے مطابق، پنجاب حکومت نے انسپکٹر جنرل پنجاب (آئی جی پی) فیصل شاہکار کو فارغ کر دیا۔ خیال رہے کہ چیف سیکریٹری کامران علی افضل کے پنجاب حکومت سے اختلافات کے بعد چھٹی پر جانے کے بعد چیف سیکریٹری اور آئی جی پنجاب کی تقرری پر پنجاب اور مرکز میں آمنے سامنے آ گئے تھے۔ وزیر آباد میں پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان پر حملے کے بعد صوبائی حکومت نے آئی جی پنجاب فیصل شاہکار کی خدمات سرنڈر کر دیں۔ ایک سینئر بیوروکریٹ کا کہنا تھا کہ 18ویں ترمیم کے بعد وفاقی حکومت متعلقہ صوبے کے تجویز کردہ پینل سے چیف سیکرٹری اور آئی جی پنجاب کی تقرری کی پابند ہے۔ پنجاب نے 18 اگست 2022 کو احمد نواز سکھیرا، سابق سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو (SMBR) بابر حیات تارڑ اور چیئرمین پی اینڈ ڈی عبداللہ خان سنبل سمیت تین افسران کے پینل کی سفارش کی تھی، تاہم، وفاقی حکومت نے پنجاب حکومت کی درخواست پر جواب دیتے ہوئے استدعا کی تھی کہ چونکہ قومی اسمبلی کی 9 نشستوں پر ضمنی انتخاب کا اعلان ہوچکا ہے، اس لیے اہم عہدوں پر تقرری ممکن نہیں۔ تقریباً ایک ماہ قبل کامران علی افضل چھٹی پر چلے گئے اور چیئرمین پی اینڈ ڈی عبداللہ خان سنبل کو چیف سیکرٹری پنجاب کے عہدے کا اضافی چارج مل گیا۔

25 مئی کے لانگ مارچ کے دوران پی ٹی آئی کارکنوں کے خلاف کریک ڈاؤن اور حمزہ شہباز کو پنجاب کی وزارت اعلیٰ کی جگہ ملنے پر وزیراعلیٰ کے انتخاب کے دوران پولیس اور صوبائی انتظامیہ کے کردار کی وجہ سے پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان اور وزیراعلیٰ پرویز الٰہی کامران علی افضل سے خوش نہیں تھے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وفاقی حکومت کامران علی افضل کو پنجاب میں برقرار رکھنا چاہتی ہے حالانکہ انہوں نے وفاقی حکومت کو خط لکھ کر پنجاب سے اپنی خدمات واپس لینے کی درخواست کی تھی۔ یہ امر قابل ذکر ہے کہ 8 نومبر کو پنجاب حکومت نے وفاقی حکومت کو انسپکٹر جنرل پولیس فیصل شاہکار کی خدمات فوری طور پر واپس لینے کے لیے خط لکھا تھا۔ اس سلسلے میں ایک نوٹیفکیشن جاری کیا گیا جس کے مطابق صوبائی کابینہ نے 4 نومبر کو اپنے اجلاس میں لانگ مارچ اور پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان پر قاتلانہ حملے سے نمٹنے کے دوران حفاظتی اقدامات کے حوالے سے فیصل شاہکار کی کارکردگی پر عدم اعتماد کا اظہار کیا تھا۔ واضح رہے کہ آئی جی پی شہکر ذاتی وجوہات کی بنا پر پنجاب سے اپنی خدمات واپس لینے کے لیے پہلے ہی اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کو خط لکھ چکے ہیں۔ بعد ازاں 9 نومبر کو پنجاب حکومت نے انسپکٹر جنرل آف پولیس (آئی جی پی) کے عہدے کے لیے تین سینئر پولیس افسران کا پینل وفاقی حکومت کو بھجوایا۔ پینل میں شامل پولیس افسران میں ایڈیشنل آئی جی فیاض احمد دیو، ایڈیشنل آئی جی عامر ذوالفقار اور ایڈیشنل آئی جی غلام محمود ڈوگر شامل ہیں۔

واضح رہے کہ غلام محمود ڈوگر وفاقی حکومت کے احکامات کی تعمیل نہ کرنے پر معطل ہیں۔ اسٹیبلشمنٹ ڈویژن نے ایک بار پھر غلام محمود ڈوگر کو فوری طور پر اسٹیبلشمنٹ ڈویژن رپورٹ کرنے کی ہدایت کردی۔ یہ بھی یاد رہے کہ ای ڈی نے ڈوگر کو 5 نومبر کو معطل کر کے اسٹیبلشمنٹ ڈویژن رپورٹ کرنے کی ہدایت کی تھی۔ ڈوگر نے معطلی کے خلاف لاہور ہائی کورٹ سے بھی رجوع کیا لیکن عدالت نے ان کی درخواست نمٹاتے ہوئے انہیں متعلقہ فورم سے رجوع کرنے کی ہدایت کی۔ مزید یہ کہ وفاقی حکومت نے ڈوگر کی خدمات واپس لے لی تھیں لیکن پنجاب حکومت نے انہیں فارغ نہیں کیا۔

اسی طرح پنجاب حکومت نے اس سے قبل وقار دیو کی خدمات سرنڈر کر دی تھیں کیونکہ صوبائی حکومت ان کی کارکردگی سے مطمئن نہیں تھی۔ عامر ذوالفقار پرویز الٰہی کی سابقہ ​​حکومت میں پنجاب میں اہم عہدوں پر خدمات انجام دے چکے ہیں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں