27

اسلام آباد خودکش حملے کی تحقیقات کے لیے چار رکنی جے آئی ٹی تشکیل دے دی گئی۔

اسلام آباد خودکش حملے کی تحقیقات کے لیے چار رکنی جے آئی ٹی تشکیل دے دی گئی۔  ٹویٹر
اسلام آباد خودکش حملے کی تحقیقات کے لیے چار رکنی جے آئی ٹی تشکیل دے دی گئی۔ ٹویٹر

اسلام آباد: وفاقی دارالحکومت کے سیکٹر I-10 میں ہونے والے خودکش بم دھماکے کی تحقیقات کے لیے ایک مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) تشکیل دے دی گئی ہے، یہ بات اسلام آباد کے چیف کمشنر آفس سے ہفتے کے روز جاری ہونے والے ایک نوٹیفکیشن میں بتائی گئی۔

ڈپٹی انسپکٹر جنرل آف پولیس آپریشنز سہیل ظفر چٹھہ نے بتایا کہ جمعہ کے روز خودکش حملے میں ایک پولیس اہلکار شہید جبکہ متعدد زخمی ہوئے۔

نوٹیفکیشن میں کہا گیا ہے کہ ٹیم اسلام آباد کے انسپکٹر جنرل آفس کی سفارش پر تشکیل دی گئی تھی۔

اس ٹیم میں چار افسران، ایک سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (CTD) اسلام آباد، انٹر سروسز انٹیلی جنس (ISI) اور انٹیلی جنس بیورو (IB) کا ایک ایک نمائندہ، اور کوئی بھی رکن جسے انسپکٹر جنرل نامزد کرتا ہے۔

نوٹیفکیشن میں بتایا گیا کہ سی ٹی ڈی تھانے کے ایس ایچ او اور کیس کے تفتیشی افسران تحقیقات میں ٹیم کی معاونت کریں گے۔

اس حملے کے بعد وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے کہا کہ دہشت گردوں کا ایک ’’ہائی ویلیو ٹارگٹ‘‘ پر حملہ کرنے کا منصوبہ تھا اور اگر پولیس افسران انہیں نہ روکتے تو یہ ’’ملک کے لیے باعث شرم‘‘ ہوتا۔ یہ واقعہ اس وقت سامنے آیا ہے جب تحریک طالبان (پاکستان) کی جانب سے پاکستان کے ساتھ جنگ ​​بندی ختم کرنے کے بعد ملک میں سلامتی کی صورتحال خاص طور پر خیبر پختونخواہ میں بگڑتی دکھائی دے رہی ہے۔

اس کے بعد سے کے پی میں سیکورٹی فورسز اور اعلیٰ سیاسی شخصیات پر دھمکیوں اور حملوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے، لیکن حکومت نے اس بات پر زور دیا ہے کہ دہشت گردوں سے “آہنی ہاتھوں” سے نمٹا جائے گا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں