31

عمران کو اداروں میں سہولت کار نہ ملنے کو یقینی بنانے کے لیے وقت پر انتخابات ہوں، بلاول

بلاول 28 دسمبر 2022 کو لاڑکانہ میں میڈیا سے گفتگو کر رہے ہیں۔ ٹویٹر
بلاول 28 دسمبر 2022 کو لاڑکانہ میں میڈیا سے گفتگو کر رہے ہیں۔ ٹویٹر

لاڑکانہ: وزیر خارجہ اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے بدھ کے روز کہا کہ بروقت انتخابات اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ عمران خان کو قومی اداروں میں کوئی ‘سہولت کار’ نہیں ملے گا۔

عمران خان آمریت کا دروازہ کھولنا چاہتے ہیں اس لیے وہ بیک ڈور سے ایک بار پھر وزیراعظم بن سکتے ہیں۔ وہ چاہتے تھے کہ انتخابات پہلے ہوں، اس لیے اسٹیبلشمنٹ میں ان کے سہولت کار ان کی کامیابی کو یقینی بنائیں گے (عام انتخابات میں)،” انہوں نے لاڑکانہ میں میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا۔

چیئرمین پی پی پی کا کہنا تھا کہ عمران کے سہولت کار اسٹیبلشمنٹ کو چھوڑ چکے ہیں، تاہم وہ کسی اور اداروں میں موجود ہوسکتے ہیں۔ بلاول نے کہا کہ ماضی میں حکومتوں نے اپنی آئینی مدت پوری نہیں کی لیکن پیپلز پارٹی نے یقینی بنایا کہ اب ایسا نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ پہلے 2008 سے 2013، پھر 2013 سے 2018 اور اب دوبارہ پارلیمنٹ 2023 میں اپنی مدت پوری کرنے جا رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان تمام گھناؤنے حربے آزما رہے ہیں تاکہ پارلیمنٹ اپنی مدت پوری نہ کرے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سیلاب، معاشی مسائل اور بے روزگاری کے باوجود عمران چاہتے ہیں کہ پارلیمنٹ تحلیل ہو اور جمہوری ترقی کو روکا جائے۔

پیپلز پارٹی کے سربراہ نے گڑھی خدا بخش میں بھٹو خاندان کے شہداء کے مزار پر بھی حاضری دی۔ انہوں نے پیپلز پارٹی کی مقتول چیئرپرسن اور سابق وزیراعظم شہید محترمہ بے نظیر بھٹو کی قبر پر حاضری دی اور پھولوں کی چادر چڑھائی اور فاتحہ خوانی کی۔

انہوں نے پیپلز پارٹی کے بانی اور سابق وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو، بیگم نصرت بھٹو، شیریں امیر بیگم، میر مرتضیٰ بھٹو اور میر شاہنواز بھٹو کی قبروں پر پھولوں کی چادر چڑھائی اور ان کے ایصال ثواب کے لیے دعا کی۔ بلاول بھٹو نے ملک کی ترقی اور خوشحالی کے لیے دعا بھی کی۔

دریں اثناء بلاول بھٹو زرداری نے بدھ کو یہاں زیر تعمیر ٹراما سینٹر کا دورہ کیا جہاں انہیں میڈیکل سپرنٹنڈنٹ چانڈکا میڈیکل کالج ہسپتال (سی ایم سی ایچ) ڈاکٹر گلزار تونیو نے اس کے کیچمنٹ ایریا کے غربت زدہ مریضوں کو فراہم کی جانے والی سہولیات کے بارے میں بریفنگ دی۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے کہا کہ یہاں نہ صرف لاڑکانہ، قمبر شہدادکوٹ اور جیکب آباد بلکہ بلوچستان اور زیریں پنجاب کے کچھ اضلاع سے بھی مریض آتے تھے۔ انہوں نے کہا کہ لاڑکانہ کے رہائشی حکومت سندھ، وزیر اعلیٰ اور محکمہ صحت کے مشکور ہیں کہ انہوں نے لاڑکانہ میں بین الاقوامی معیار کے مطابق ٹراما سینٹر اور ایمرجنسی سہولت سروس فراہم کی۔

لاڑکانہ کے ٹراما سینٹر کو کراچی کے ٹراما سینٹر سے جوڑا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ لاڑکانہ میں بھی 1122 ایمبولینس سروس شروع کی جائے گی جس سے یہاں کے لوگوں کو صحت کی سہولیات میسر آئیں گی۔ یہ سروس کراچی میں شروع کی گئی تھی اور وہ چاہتے تھے کہ سندھ کے دیگر بڑے شہروں لاڑکانہ، سکھر اور حیدرآباد میں بھی یہ سروس شروع کی جائے اور لاڑکانہ ٹراما سینٹر ہر ڈویژن اور ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹرز میں NICVD کی طرز پر ہو۔ “میں جانتا ہوں کہ ہمارے پاس وسائل کم ہیں اور بہت سے مسائل ہیں اور آہستہ آہستہ ہم نہ صرف صحت بلکہ تعلیم اور دیگر شعبوں میں بھی مل کر کام کریں گے لیکن ہمارے پاس دوسرے پروگرام ہیں جن پر کام کیا جائے گا۔”

انہوں نے کہا کہ ہسپتالوں میں ایمرجنسی سروسز کی سب سے زیادہ ضرورت ہے، اس سے قبل خواتین اور بچوں کی شرح اموات کے اعدادوشمار تشویشناک تھے۔ اس پر غور کرتے ہوئے، ہم چائلڈ لائف فاؤنڈیشن کے ساتھ مل کر ہر ضلع میں بچوں کے لیے ہنگامی خدمات قائم کرنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وارڈز قائم کیے گئے ہیں اور بین الاقوامی معیار کے مطابق چائلڈ لائف فاؤنڈیشن کے ساتھ مل کر سندھ کے ہر ضلع میں بچوں کی ایمرجنسی سروسز فراہم کی جائیں گی۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں