31

فوج کے اعلیٰ افسران نے دہشت گردی کو ختم کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔

آرمی چیف جنرل عاصم منیر 28 دسمبر 2022 کو کور کمانڈرز کانفرنس سے خطاب کر رہے ہیں۔ آئی ایس پی آر
آرمی چیف جنرل عاصم منیر 28 دسمبر 2022 کو کور کمانڈرز کانفرنس سے خطاب کر رہے ہیں۔ آئی ایس پی آر

راولپنڈی: پاک فوج کے اعلیٰ افسر نے بدھ کے روز دہشت گردی کو “بغیر کسی امتیاز کے” جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کا عزم کیا، کیونکہ ملک شورش کی ایک تازہ لہر سے لڑ رہا ہے جس میں کئی فوجی شہید اور متعدد زخمی ہوئے ہیں۔

اس عزم کا اعادہ دو روزہ (27-28 دسمبر) 254ویں کور کمانڈرز کانفرنس (CCC) میں کیا گیا جس کی صدارت چیف آف آرمی اسٹاف (COAS) جنرل عاصم منیر نے کی۔ جنرل عاصم نے گزشتہ ماہ فوج کے سربراہ کا عہدہ سنبھالا تھا۔

انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) نے ایک بیان میں کہا کہ کانفرنس میں فوج کے پیشہ ورانہ اور تنظیمی امور کا جامع جائزہ لیا گیا۔

فوج کے میڈیا ونگ نے مزید کہا، “بغیر کسی امتیاز کے دہشت گردوں کے خلاف لڑنے اور پاکستانی عوام کی امنگوں کے مطابق اس لعنت کو ختم کرنے کا عزم کیا گیا تھا۔” یہ پیش رفت پورے پاکستان میں ہونے والے متعدد دہشت گردانہ حملوں کے بعد ہوئی ہے، جن میں سے زیادہ تر بلوچستان اور خیبر پختونخواہ میں ہوئے، جس نے قوم کو تشویش میں مبتلا کر دیا۔ وزیر اعظم شہباز شریف نے بھی حال ہی میں پاکستان میں موجود تمام وسائل کو بروئے کار لا کر دہشت گردی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے عزم کا اعادہ کیا۔ “ہم ان کو روکنے کے لیے سخت محنت کر رہے ہیں۔ ہم پاکستان میں امن قائم کرنے کے لیے دہشت گردی کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنے کے لیے تمام وسائل بروئے کار لائیں گے۔‘‘

حال ہی میں، اسلام آباد پولیس نے خودکش حملے میں ایک پولیس اہلکار کے شہید اور متعدد کے زخمی ہونے کے بعد ایک خصوصی حفاظتی منصوبہ بنایا۔ دارالحکومت بھر میں سیکیورٹی چوکیوں کو بڑھا دیا گیا ہے اور ہائی الرٹ نافذ کر دیا گیا ہے، جب کہ شہریوں کو قانون نافذ کرنے والے اداروں کے ساتھ تعاون کو یقینی بنانے کا مشورہ دیا گیا ہے۔ ہائی الرٹ کی روشنی میں امریکہ، سعودی عرب اور آسٹریلیا سمیت متعدد سفارت خانوں نے اپنے شہریوں کو خبردار کیا ہے کہ وہ وفاقی دارالحکومت میں غیر ضروری سفر نہ کریں۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں