20

وزیراعظم نے توانائی کے تحفظ کے منصوبے پر عملدرآمد کی ہدایت کر دی۔

وزیر اعظم شہباز 28 دسمبر 2022 کو وفاقی کابینہ کے اجلاس کی صدارت کر رہے ہیں۔ پی آئی ڈی
وزیر اعظم شہباز 28 دسمبر 2022 کو وفاقی کابینہ کے اجلاس کی صدارت کر رہے ہیں۔ پی آئی ڈی

اسلام آباد: وفاقی کابینہ کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے وزیراعظم محمد شہباز شریف نے بدھ کو توانائی کے تحفظ کے منصوبے پر عملدرآمد کی ہدایت کی جس کا مقصد بجلی کی پیداوار کے لیے ایندھن کی خریداری پر درآمدی بل کو کم کرنا ہے۔

توانائی کے تحفظ کے منصوبے کی وفاقی کابینہ نے گزشتہ ہفتے منظوری دی تھی۔ یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ پلان کو گزشتہ جمعرات کو حتمی شکل دی جائے گی لیکن تاجروں سمیت اسٹیک ہولڈرز کی مخالفت کے بعد یہ کوشش عملی نہیں ہو سکی۔

وفاقی کابینہ نے بازاروں کو رات 8 بجے اور شادی ہال رات 10 بجے تک بند کرنے اور عوامی عمارتوں کو سولرائز کرنے جیسے دیگر اقدامات کی تجویز دی تھی۔

وزیراعظم ہاؤس سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ کابینہ کے اجلاس کو پاور ڈویژن کے مجوزہ توانائی کے تحفظ کے منصوبے اور تمام اسٹیک ہولڈرز سے مشاورت پر پیش رفت پر بریفنگ دی گئی۔ وزیراعظم نے تمام اسٹیک ہولڈرز بشمول صوبوں، آزاد جموں و کشمیر اور گلگت بلتستان کی حکومتوں سے مشاورت پر زور دیا۔

ان کا خیال تھا کہ قوم کو اپنا طرز عمل اور رویہ بدلنا ہو گا اور روزمرہ کی زندگی میں کفایت شعاری کو اپنانا ہو گا۔

انہوں نے کہا کہ تیل کے درآمدی بل کو کم کرنے کے لیے توانائی کے تحفظ کے منصوبے پر عمل درآمد اور توانائی کے متبادل وسائل تلاش کرنا ناگزیر ہے۔ انہوں نے وزیر توانائی کو ملک میں ونڈ انرجی کی فزیبلٹی پر رپورٹ پیش کرنے کی بھی ہدایت کی۔

وزیراعظم نے سرکاری دفاتر میں بجلی کی کھپت میں 30 فیصد کمی کے لیے کمیٹی تشکیل دینے کی بھی ہدایت کی۔ کمیٹی میں وفاقی وزراء برائے توانائی، منصوبہ بندی و ترقیات، وزیر مملکت برائے پٹرولیم اور متعلقہ وفاقی سیکرٹریز شامل ہوں گے۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ وزارت اطلاعات و نشریات اور نیشنل انرجی ایفیشنسی اینڈ کنزرویشن اتھارٹی نے کفایت شعاری اور توانائی کے تحفظ کے لیے آگاہی پیدا کرنے کے لیے ایک مہم کو حتمی شکل دے دی ہے۔

وزارت صنعت و پیداوار نے ملک بھر میں ای بائیکس کے فروغ کے حوالے سے بریفنگ دی۔ اجلاس میں بتایا گیا کہ تمام موٹر سائیکلوں کو بتدریج ای بائیکس سے تبدیل کر دیا جائے گا۔

اجلاس کو بتایا گیا کہ 22 کمپنیوں کو ای بائیکس کی تیاری کے لیے لائسنس جاری کیے گئے ہیں۔ اجلاس میں مزید بتایا گیا کہ ای بائیکس ایندھن کی کھپت کو کم کرنے اور ماحول کو صاف ستھرا بنانے میں معاون ثابت ہوں گی۔

وزیراعظم نے وزارت کو ہدایت کی کہ کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی) کے اجلاس میں ای بائیکس کے حوالے سے تفصیلی منصوبہ پیش کیا جائے۔

اجلاس نے گورنمنٹ ٹو گورنمنٹ کمرشل ٹرانزیکشن ایکٹ 2022 کی بھی منظوری دی۔

بورڈ آف انویسٹمنٹ کی سفارش پر وفاقی کابینہ نے ملک بھر میں قائم خصوصی اقتصادی زونز (SEZs) میں سرمایہ کاروں کو سہولیات فراہم کرنے کے لیے ون اسٹاپ سروس ایکٹ کی اصولی منظوری دے دی۔

دریں اثناء وزیراعظم شہباز شریف نے کسان پیکج پر عملدرآمد تیز کرنے کی بھی ہدایت کی ہے۔ وہ حکومت کی جانب سے زرعی شعبے کی ترقی کے لیے دیے گئے کسان پیکج کے جائزہ اجلاس کی صدارت کر رہے تھے۔

وزیراعظم نے کہا کہ وہ ملک میں غذائی تحفظ کو ہر قیمت پر یقینی بنائیں گے، انہوں نے مزید کہا کہ زراعت کے شعبے کی ترقی پاکستان میں غذائی تحفظ کی ضامن ہے۔

انہوں نے ہدایت کی کہ غذائی تحفظ کے لیے گندم، کپاس، کینولا اور زیتون کی کاشت اور پیداوار پر خصوصی توجہ دی جائے۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ کسان پیکج پر عملدرآمد، یوتھ لون سکیم، چھوٹے کسانوں کے لیے سود کی معافی اور سیلاب سے متاثرہ علاقوں کے چھوٹے کاشتکاروں کو بلاسود زرعی قرضوں کی فراہمی کے لیے اسٹیٹ بینک کے نوٹیفکیشن کے ذریعے بینکوں کو ہدایات جاری کی گئی ہیں۔

اس دوران یہاں ایک اعلیٰ سطحی اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے وزیراعظم نے سگریٹ مینوفیکچرنگ سیکٹر میں سمگلنگ اور ٹیکس چوری کے فوری خاتمے کی ہدایت کی۔ انہوں نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کو اپنے ریونیو اہداف کو پورا کرنے کی بھی ہدایت کی۔

ملاقات کے دوران وزیراعظم نے ٹیکس چوروں کے جال میں پھنسنے کی ضرورت پر زور دیا اور مشاہدہ کیا کہ جدید ترین ٹیکنالوجی کے استعمال اور بہتر نفاذ سے ٹیکس وصولی کے نظام کو بہتر بنایا جا سکتا ہے۔

پی ایم آفس میڈیا ونگ نے ایک پریس ریلیز میں بتایا کہ اجلاس میں وزیر خزانہ اسحاق ڈار، وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ، وزیراعظم کے معاون خصوصی طارق باجوہ، چیئرمین ایف بی آر عاصم احمد اور دیگر سینئر حکام نے شرکت کی۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ وزیراعظم کی ہدایت پر سگریٹ مینوفیکچرنگ یونٹس کی اکثریت میں ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم لگایا گیا ہے جس سے ٹیکس وصولی میں بہتری آئی ہے۔

اس شعبے میں جولائی سے دسمبر کے دوران 83.5 ارب روپے ٹیکس جمع کیا گیا جو گزشتہ سال کی اسی مدت کے دوران جمع کیے گئے ٹیکس سے 26 فیصد زیادہ ہے۔ وزیر اعظم نے مشاہدہ کیا کہ ایف بی آر کو ایک جامع میکانزم کے ذریعے نظام کو مزید بہتر کرنا چاہیے، تاکہ ٹیکس چوری پر مکمل طور پر مہر لگائی جا سکے۔

دریں اثناء وزیر اعظم شہباز شریف نے بدھ کے روز ترک صدر رجب طیب اردگان اور مملکت بحرین کے بادشاہ حمد بن عیسیٰ الخلیفہ کو آئندہ سال 9 جنوری کو جنیوا میں منعقد ہونے والی ‘انٹرنیشنل کانفرنس آن کلائمیٹ ریسیلینٹ پاکستان’ میں شرکت کی دعوت دی۔

وزیراعظم نے صدر اردگان سے ٹیلی فونک گفتگو کی اور غیر معمولی تباہ کن سیلاب کے پیش نظر فوری انسانی امداد کی فراہمی پر عوام اور حکومت پاکستان کی جانب سے ان کا شکریہ ادا کیا۔

متاثرہ علاقوں کی آب و ہوا کے حوالے سے بحالی اور تعمیر نو کے حوالے سے ملک کو درپیش مشکل چیلنج پر روشنی ڈالتے ہوئے، وزیر اعظم نے پاکستان کی بہتر تعمیر کے منصوبوں کے لیے مسلسل بین الاقوامی حمایت اور یکجہتی کی اہمیت پر زور دیا۔ دونوں رہنماؤں نے مختلف دو طرفہ امور اور بین الاقوامی امور پر بھی تبادلہ خیال کیا اور قریبی رابطے میں رہنے پر اتفاق کیا۔

وزیر اعظم کے ساتھ بات چیت کے دوران، شاہ حمد بن عیسیٰ الخلیفہ نے ملک میں موسمیاتی سیلاب کے بعد تعمیر نو اور بحالی کے مرحلے کے دوران پاکستان کے ردعمل کو مضبوط بنانے کے اقدامات کی بھرپور حمایت کا اظہار کیا۔

وزیراعظم نے اس بات پر زور دیا کہ پاکستان بحرین کے ساتھ اپنے دوستانہ اور تاریخی تعلقات کو اہمیت دیتا ہے۔ دونوں رہنماؤں نے کثیرالجہتی فورمز پر دونوں ممالک کے درمیان قریبی تعاون پر بھی اطمینان کا اظہار کیا۔

بادشاہ نے وزیراعظم کے جذبات کا جواب دیا اور بحرینی قیادت کی پاکستان کے ساتھ دوطرفہ تعلقات کو مزید گہرا اور وسیع کرنے کی خواہش کا یقین دلایا۔

Source link

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں